1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سال نو کا پیغام، میرکل مہاجرین سے متعلق اپنی پالیسی پر قائم

جرمن چانسلر نے اپنے سال نو کے پیغام میں کہا ہے کہ اس وقت جرمنی کو سب سے بڑے چیلنج کا سامنا اسلام پسندوں کی دہشت گردی سے ہے۔ میرکل نے عہد کیا کہ سلامتی کی صورتحال کو یقینی بنانے کے لیے نئے قوانین متعارف کرائے جائیں گے۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے سال نو کے اپنے پیغام میں عوام سے کہا ہے کہ وہ نئے سال میں امید پسندی کے ساتھ داخل ہوں اور دہشت گردی کو مسترد کر دیں۔ خبر رساں ادارے روئٹرز نے بتایا ہے کہ میرکل نے اپنے اس خطاب میں کہا کہ سن دو ہزار سترہ میں ملک میں سکیورٹی کی صورتحال کو مزید بہتر بنانے کی کوشش کی جائے گی۔ تاہم انہوں نے کہا کہ حقیقی مہاجرین کو پناہ دینے اور معاشرے میں ان کے انضمام میں بھی مدد کی جائے گی۔

2016ء: ایک بار پھر ایک ہولناک سال، تبصرہ

چانسلر میرکل نےمہاجرین مخالف ’جرمن تشخص‘ کو رد کر دیا

مہاجرین کی ڈیل پر قائم رہنا چاہیے، انگیلا میرکل

میرکل نے کہا کہ سن دو ہزار سولہ کے دوران جرمنی کو کئی امتحانات کا سامنا رہا، جن میں سے اسلام پسندانہ دہشت گردی سب سے بڑا امتحان ثابت ہوا۔ گزشتہ بارہ مہینوں کے دوران جہاں جرمنی کو مہاجرین کے شدید بحران کا سامنا رہا، وہیں جرمنی میں متعدد دہشت گردانہ حملے بھی کیے گئے، جن میں ورسبرگ، آنسباخ اور برلن میں ہونے والے حملے نمایاں تھے۔ اس دوران جرمنی میں دہشت گردی کے کئی منصوبے ناکام بھی بنا دیے گئے۔

جرمن چانسلر نے عوام سے اپیل کی کہ وہ عوامیت پسندی کو ترک کر دیں۔ یہ امر اہم ہے کہ یورپ کو درپیش مہاجرین کے بحران اور متعدد دہشت گردانہ کارروائیوں کے باعث جرمنی سمیت کئی ملکوں میں عوامیت پسند سیاسی جماعتوں کی مقبولیت میں اضافہ ہوا ہے۔ اس تناظر میں میرکل نے کہا کہ یورپ کو درپیش چیلنجوں میں جرمنی ایک قائدانہ کردار ادا کرنا چاہتا ہے، اس لیے عوام کو اتحاد کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔

جرمن چانسلر کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایسے لوگوں پر جرمنی میں حملے کیے جانا قابل مذمت ہے، جو محفوظ ٹھکانہ تلاش کرتے ہوئے جرمنی پہنچے اور جنہیں اس ملک میں تحفظ دینے کے ساتھ ساتھ مدد بھی فراہم کی گئی۔ میرکل کے بقول اس طرح کے پرتشدد اعمال جرمنی کی طرف سے ایسے افراد کی مدد پر طعنہ زنی کا باعث بنے ہیں اور بالخصوص ایسے مہاجرین کے لیے جنہیں حقیقی طور پر تحفظ اور مدد کی ضرورت ہے۔

اس تمام صورتحال کے باوجود میرکل نے دہرایا کہ ان کی حکومت مہاجرین کو پناہ دینے کے حق میں ہے۔ میرکل نے کہا کہ یہ ہمارے ملک کے لیے اہم ہے کہ ایسے مہاجرین کو پناہ دی جائے، جو حقیقی طور پر اس کے حقدار ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایسے لوگوں کی جرمن معاشرے میں انضمام میں بھی مدد کی جانا چاہیے۔

میرکل کے بقول، ’’ہم اس وقت مضبوط ہوں گے، جب ہم متحد ہوں گے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ جرمنی ایک مضبوط ملک ہے اور ریاست دہشت گردی کے خاتمے کے لیے تمام تر اقدامات کرے گی تاکہ شہریوں کی آزادی کو یقینی بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ اس مقصد کی خاطر جرمن حکومت سن دو ہزار سترہ میں فوری طور پر اضافی قوانین بھی متعارف کرائے گی اور پالیسیاں بھی اپنائے گی۔

جرمن چانسلر نے یہ سب باتیں سال نو کے موقع پر قوم سے اپنے اس نشریاتی خطاب میں کہی ہیں، جو آج ہفتہ اکتیس دسمبر کی شام سوا سات بجے نشر کیا جائے گا اور جس کا تحریری مسودہ میڈیا کے لیے آج دن کے آغاز پر جاری کر دیا گیا تھا۔

DW.COM