1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سال نو پر انتہائی دائیں بازو کی جماعتوں کے جلوسوں پر پابندی

جرمن شہر کولون میں پولیس اور عدالت نے انتہائی دائیں بازو کی دو جماعتوں کو سالِ نو کے موقع پر اس شہر میں جلوس نکالنے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا ہے۔

Deutschland Silvester in Köln (picture-alliance/dpa/M. Hitij
)

جرمن شہر کولون میں مشہورِ زمانہ کیتھیڈرل کے آس پاس اور دریائے رائن کے کنارے ہر سال اکتیس دسمبر کو لاکھوں لوگ آتش بازی کا نظارہ کرتے ہوئے نئے سال کا استقبال کرتے ہیں

کولون پولیس کے سربراہ یُرگن ماتھیز نے کہا کہ انتہائی دائیں بازو کی جماعت نیشنل پارٹی آف جرمنی (این پی ڈی) اور مہاجرین مخالف عوامیت پسند جماعت ’متبادل برائے جرمنی‘ (اے ایف ڈی) نے نئے سال کے موقع پر کولون میں جلوس نکالنے کی درخواست کی تھی تاہم اُنہیں اس کی اجازت نہیں دی جا رہی۔

ماتھیز نے کہا کہ اس اقدام کا مطلب یہ نہیں ہے کہ وہ ’سیاسی سوچ کے اظہار پر پابندی‘ لگانا چاہتے ہیں بلکہ اُنہیں ’صرف اور صرف اس بات پر تشویش‘ ہے کہ ان جلوسوں سے نہ صرف ان کے شرکاء کی بلکہ موقع پر  موجود راہگیروں کی بھی سلامتی کو خطرات لاحق ہو سکتے ہیں۔

اپن پی ڈی کو جلوس نکالنے کی اجازت نہ دینے کا اعلان کولون پولیس نے منگل کے روز ہی کر دیا تھا۔ اس اعلان کے بعد دائیں بازو کی اس انتہا پسند جماعت نے کولون کی انتظمی عدالت سے رجوع کر لیا، جس نے پولیس کے فیصلے کو برقرار رکھا۔ عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ عوام کی حفاظت کے حوالے سے پائی جانےوالی تشویش کے پیشِ نظر ’اس خاص موقع کے لیے‘ این پی ڈی کے اجتماع کی آزادی کے حق کو ختم کیا جانا پڑے گا۔

پولیس کا کہنا یہ تھا کہ اُس کے پاس اتنی نفری نہیں ہے کہ وہ ایک طرف سالِ نو کے موقع پر جمع ہونے والے اجتماع کو کنٹرول کر سکے اور ساتھ ساتھ این پی ڈی کے مظاہرین کو بھی حفاظت فراہم کر سکے۔ اس سے پہلے متعدد گروپوں کی جانب سے یہ کہا گیا تھا کہ اگر این پی ڈی کو مظاہرے کی اجازت دی گئی تو پھر وہ بھی جوابی مظاہرے کریں گے۔

اے ایف ڈی کی جانب سے کہا گیا تھا کہ اُس کے دَس تا پندرہ ارکان ہی اس مظاہرے میں شرکت کریں گے تاہم سلامتی کی خصوصی صورتِ حال ہی کے باعث اُنہیں بھی اجازت نہیں دی گئی۔ ابھی یہ بات واضح نہیں ہے کہ آیا اے ایف ڈی بھی اس معاملے میں عدالت سے رجوع کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ ابھی این پی ڈی کے پاس بھی زیادہ بڑی عدالت سے رجوع کرنے کی گنجائش موجود ہے۔

Silvester 2016: Köln setzt Zeichen (DW/D. Heinrich)

کولون پولیس کے سربراہ یُرگن ماتھیز

نسل پرستی کے خلاف سرگرم تنظیم ’کولون اگینسٹ رائٹ‘ کا این پی ڈی پر الزام یہ ہے کہ وہ سالِ نو کے موقع پر موجود ملکی اور غیر ملکی ہجوم کی موجودگی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے اُن جنسی حملوں اور لُوٹ مار کو حد سے زیادہ نمایاں کرنا چاہتی ہے، جو گزشتہ سال اکتیس دسمبر کی رات کو عمل میں آئے تھے اور جن کا نشانہ سینکڑوں نوجوان جرمن خواتین بنی تھیں۔

یہ حملے ایسے نوجوانوں کی جانب سے کیے گئے تھے، جو مبینہ طور پر عرب دنیا اور شمالی افریقی خطّے سے تعلق رکھتے تھے۔ دائیں بازو کی جماعتوں نے انہی واقعات کا حوالہ دے کر عوام میں مہاجرین مخالف جذبات کو ہوا دینے کی کوشش کی۔

ایک سال پہلے انہی واقعات کی بناء پر سخت عوامی تنقید کا نشانہ بننے والی پولیس نے اس سال ایسے ناخوشگوار واقعات کو روکنے کے لیے کولون میں اپنے تقریباً پندرہ سو اہلکار تعینات کیے گئے ہیں اور مختلف مقامات پر بھاری رکاوٹیں کھڑی کی ہیں۔