1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سارک ممالک سازگار ماحول قائم کریں ، نیپال

نیپال نے جنوبی ایشائی ممالک پر زور دیا ہے کہ وہ ایک سازگار ماحول قائم کریں تاکہ نومبر کے ماہ میں پاکستان کے دارالحکومت میں سارک سمٹ منعقد کی جا سکے۔

نیپال جو آج کل جنوبی ایشیائی تنظیم برائے علاقائی تعاون (SAARC)  کی صدارت کر رہا ہے، کا کہنا ہے کہ آٹھ رکن ممالک میں سے چار نے کہہ دیا ہے کہ وہ اسلام آباد میں 9 سے 10 نومبر کو منعقد ہونے والی سارک سمٹ میں شرکت نہیں کریں گے۔

18 ستمبر کو لائن آف کنٹرول کے قریبی علاقے اڑی میں بھارتی افواج پر عسکریت پسندوں کے حملے کے بعد سے پاکستان اور بھارت میں کشیدگی جاری ہے۔ اس حملے میں بھارتی افواج کے اٹھارہ اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔ بھارت نے الزام عائد کیا ہے کہ حملہ آور پاکستان کی سرحد پار کر کے بھارت میں داخل ہوئے تھے۔ پاکستان نے ان الزامات کو مسترد کر دیا ہے۔  بھارت نے اس ہفتے اعلان کیا تھا کہ وہ سارک سمٹ میں شرکت نہیں کرے گا۔

بھارت کے فیصلے کے بعد بنگلہ دیش، افغانستان اور بھوٹان نے بھی اس سمٹ میں شرکت کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ نیپال کی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ تمام رکن ممالک ایک سازگار ماحول بنانے کی کوشش کریں تاکہ سارک سمٹ کے انعقاد کو ممکن بنایا جا سکے۔

Indien New Delhi - Sitzung nach Uri Terrorangriff

بھارت نے سارک سمٹ میں شرکت سے انکار کر دیا ہے

سارک تنظیم میں افغانستان، بنگلہ دیش، بھوٹان، بھارت، مالدیپ، نیپال، سری لنکا اور پاکستان شامل ہیں۔ اس تنظیم کی بنیاد سن 1985 میں رکھی گئی تھی  جس کا مقصد علاقائی اقتصادی تعاون کو بڑھانا تھا۔ لیکن پاکستان اور بھارت کے مابین کشیدگی کی وجہ سے اقتصادی تعاون اور ترقی کا خواب پورا نہیں ہو سکا۔

پاکستان نے بھارت پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ سارک سمٹ میں اس لیے شرکت نہیں کر رہا کیوں کہ وہ کشمیر کے معاملے سے عالمی توجہ ہٹانا چاہتا ہے۔