1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سات سو شدّت پسند ہلا ک: پاکستانی مشیرِ داخلہ

پاکستانی مشیرِ داخلہ رحمان ملک کے مطابق مالاکنڈ میں جاری فوجی آپریشن میں اب تک کم از کم سات سو شدّت پسند ہلاک کیے جا چکے ہیں۔

default

پیر کے روز فوجی آپریشن میں مزید تیزی دیکھنے میں آئی ہے

Pakistan Flüchtlinge aus dem Swat Tal

اتوار کو کرفیو میں نرمی سے فائدہ اٹھا کر مزید ہزاروں افراد نے کشیدہ علاقوں سے نقل مکانی کی


مشیرِ داخلہ نے امریکہ سے واپسی پر زرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے آپریشن کی مدّت کے بارے میں حتمی طور پر کچھ کہنے سے گریز کیا۔ انہوں نے یہ بھی بتایا کہ آپریشن کے دوران کم از کم بیس فوجی ہلاک اور انتیس کے قریب زخمی ہوئے ہیں۔ مشیرِ داخلہ نے طالبان کو سرطان قرار دیتے ہوئے آخری شدّت پسند کی موجودگی تک آپریشن جاری رکھنے کے عزم کا اظہار کیا۔

مشیرِ داخلہ رحمان ملک کے ان بیانات کے ساتھ ہی پیر کے روز پاکستانی افواج نے مالاکنڈ ڈویژن میں اپنی کارروائی میں مزید اضافہ کردیا ہے۔ اتوار کے روز کشیدگی کا شکار علاقوں میں نرمی کے نتیجے میں مزید ہزاروں افراد نے سوات اور ملحقہ علاقوں سے نقل مکانی کی۔ اقوامِ متحدہ کے مطابق اب تک لاکھوں افراد ان علاقوں سے نقل مکانی کرچکے ہیں۔

Pakistan Flüchtlinge aus dem Swat Tal

انسانی حقوق کی تنظیموں نے فوج اور طالبان کے درمیان جنگ کے دوران بڑی تعداد میں عام شہریوں کے ہلاک اور زخمی ہونے پر تشویش کا اظہار کیا ہے

دریں اثناء پیر کے روز درّہ آدم خیل میں ہونے والے ایک خود کش حملے کے نتیجے میں پانچ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔ یہ حملہ ایک سیکیورٹی چیک پوائنٹ پر کیا گیا۔ ہلاک ہونے والوں میں چار شہری اور ایک سیکیورٹی اہلکار شامل ہیں۔

ادھر امریکی سینٹرل کمانڈ کے سربراہ جنرل ڈیوڈ پیٹریئس نے کہا ہے کہ طالبان پاکستان کے وجود کے لیے ایک حقیقی خطرہ ہیں تاہم ان کے مطابق ان کو یقین ہے کہ پاکستان کا جوہری اسلحہ محفوظ ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ طالبان کی بربریت کی وجہ سے پاکستانی قوم اور افواج آج مالاکنڈ آپریشن کا بھرپور ساتھ دے رہی ہیں۔

دوسری جانب امریکی اخبار نیر یارک ٹائمز کی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان میی جاری شورش سے فائدہ اٹھا کر القاعدہ وہاں اپنے آپ کو منظّم اور مضبوط کر رہی ہے۔