1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

سابقہ جاسوس کے قتل کی ’منظوری‘ پوٹن نے دی

ایک برطانوی تفتیش میں کہا گیا ہے کہ سابق روسی جاسوس الیگزنڈر لیتِنینکو کو غالباﹰ صدر پوٹن کے حکم پر تابکار زہر کے ذریعے ہلاک کیا گیا۔ لندن میں ہلاک ہونے والے اس جاسوس کے وجود سے تابکار ذرات ملے تھے۔

ماسکو حکومت کے اس معروف ناقد کو لندن کے ایک ہوٹل میں سن 2006ء میں تابکار مواد کی حامل چائے دے کر ہلاک کیا گیا تھا۔

اس معاملے سے تعلق کے شبے میں دو روسی شہریوں اندرے لُگووئی اور دیمتری کوویتون کی نشان دہی کی گئی تھی، تاہم اب تک ان دونوں افراد کے خلاف مقدمہ چلانے سے متعلق کوششیں ناکام رہی ہیں۔

اس تحقیقاتی رپورٹ کے سامنے آنے کے بعد ممکنہ طور پر برطانوی حکومت پر دباؤ میں اضافہ ہو گا کہ وہ روس کے خلاف جوابی اقدامات کرے۔ برطانوی وزیر داخلہ تھیریسا مئی اس سلسلے میں پارلیمان میں حکومتی ردعمل پیش کر رہی ہیں۔

Ermittlungen zu Giftmord an Alexander Litwinenko

مقتول کے جسم سے تابکار ذرات ملے تھے

اس رپورٹ کے مطابق، ’’ایف ایس بی (روسی خفیہ ایجنسی) نے ایک آپریشن کے ذریعے لیتِنینکو کو قتل کیا اور اس کی منظوری غالباﹰ نکولائی ماتروشیف اور صدر پوٹن نے دی‘‘۔

نکولائی مافروشیف روسی خفیہ ادارے FSB کے سابق ڈائریکٹر تھے اور وہ سن 2008 کے بعد سے اہم سکیورٹی وزیر کے بطور کام کرتے رہے ہیں۔ FSB کا قیام سوویت دور میں کام کرنے والی جاسوس ایجنسی KGB کے خاتمے کے بعد عمل میں آیا تھا۔

اس برطانوی انکوائری کے چیرمیئن جج رابرٹ اوین نے اس تین سو صفحاتی رپورٹ میں لکھا ہے، ’’مجھے یقین ہے کہ لوگووئی اور کوویتُن نے یکم نومبر 2006ء کو پائن بار میں چائے دانی کے اندر پولونیم 210 ڈالا تھا۔ مجھے یقین ہے کہ ان کے اس کام کی نیت لیتِنینکو کو زہر دینے کی تھی۔‘‘

گزشتہ برس اس انکوائری کے آغاز سے قبل بھی اوین نے کہا تھا کہ اس معاملے میں روسی ریاست کے ملوث ہونے کے شواہد سامنے آئیں گے۔

دریں اثناء روس میں ایک قانون ساز کے طور پر کام کرنے والے لوگووئی نے اپنے خلاف لگنے والے ان الزامات کو ’مبہم‘ قرار دیتے ہوئے مسترد کر دیاہے۔