1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

زمبابوے کے بحران پر خاموشی جرم کے مترادف: رائلا اوڈینگا

زمبابوے کے صدر رابرٹ موگابے پر اپنے عہدے سے ہٹ جانے کے بین الاقوامی دباٴو میں ہرگُزرتے دن کے ساتھ اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ امریکی وزیر خارجہ کے بعد اب کینیا کے وزیر اعظم رائلا اوڈینگا نے بھی موگابے کے خلاف آواز بلند کی ہے۔

default

کینیا کے وزیر اعظم رائلا اوڈینگاکے مطابق زمبابوے کے بحران پر خاموشی اختیار کرنا ’’انسانیت کے خلاف جرم کے مترداف ہے‘‘

زمبابوے میں گہرے سیاسی اور شدید معاشی بحران کی پریشانیوں کے بعد اب گُزشتہ دو ماہ سے ہیضےکی وباء نے تقریباً چھہ سو افراد کو موت کے منہ میں دھکیلا ہے۔ برطانوی وزیر اعظم گارڈن براٴون، امریکی وزیر خارجہ کونڈولیزا رائس کے بعد اب کینیا کے وزیر اعظم نے بھی صدر موگابے پر شدید تنقید کی ہے۔

کینیا کے وزیر اعظم رائلا اوڈینگا نے افریقی یونین اور اقوام متحدہ سے پُر زور مطالبہ کیا ہےکہ وہ زمبابوے کی موجودہ ’ابتر‘صورتحال پر خاموشی نہ اختیار کریں۔ اوڈینگا نے کہا کہ زمبابوے کے بحران پر خاموشی اختیار کرنا ’’انسانیت کے خلاف جرم کے مترداف ہے‘‘۔

Cholera Epidemi in Simbabwe

اس وقت زمبابوے میں دارلحکومت ہرارے سمیت بڑے بڑے شہروں میں بھی پینے کے صاف پانی کی زبردست قلت ہے

رائلا اوڈینگا نے عالمی طاقتوں سے اپیل کی کہ وہ افریقی ملک زمبابوے کے پریشان حال اور مجبور لوگوں کی صدا کو نظر انداز نہ کریں۔ کینیا کے وزیر اعظم نے کہا کہ عالمی برادری کو زمبابوے کی عوام کی پریشانیوں کو دور کرنے کے لئے مناسب کارروائی بھی کرنا ہوگی۔

کینیا کے وزیر اعظم نے فوجیوں سے اپیل کی کہ وہ رابرٹ موگابے کو صدارتی عہدے سے ہٹادیں۔ اوڈینگا نے افریقی یونین پر زور دیتے ہوئے کہا: ’’ ایک قرارداد تیار کریں اور فوراً افریقی یونین کے فوجی دستوں کو زمبابوے روانہ کریں، اگر یونین کے پاس اتنے فوجی نہیں ہیں تو اُس صورت میں اقوام متحدہ کو مداخلت کرکے اس ملک کو بحران سے بچانا ہوگا۔‘‘

Jahresrückblick 2008 International Juni Simbabwe Robert Mugabe

شدید بین الاقوامی دباٴو کے باوجود زمبابوے کے صدر رابرٹ موگابے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے پر تیار نظر نہیں آرہے ہیں

اقوام متحدہ کے مطابق اس وقت زمبابوےکی تقریباً نصف آبادی کو خوراک اور پینے کے صاف پانی کی ہنگامی بنیادوں پر ضرورت ہے۔ سیاسی اور اقتصادی بحران کے بعد اب زمبابوے میں ہیضے یعنی کالرا کی وباء پھیلنے سے بھی لوگوں کو زبردست مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ محتاط اندازوں کے مطابق رواں برس اگست سے اب تک وہاں تقریباً چھہ سو افراد ہیضے کے باعث موت کا شکار ہوگئے ہیں جبکہ غیر سرکاری ذرائع کے مطابق مرنے والوں کی تعداد سرکاری اعدادوشمار سے کہیں زیادہ ہے۔

کالرا سے متاثر کئی افراد زمبابوے میں ضروری ادویات کی قلت اور ہسپتالوں میں غیر تسلی بخش صورتحال کے باعث ملک چھوڑنے پر مجبور ہوگے ہیں۔ ملک کے ڈاکٹروں نے بھی متعدد احتجاجی مُظاہرے کئے ہیں۔

DW.COM