1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

زمبابوے کی حکومت نے ملک کو ’آفت زدہ‘ قرار دے دیا

افریقی ملک زمبابوے کے صدر رابرٹ موگابے نے زیادہ تر علاقوں میں قحط سالی کے باعث ملک کو ’آفت زدہ‘ قرار دے دیا ہے۔ زمبابوے کی ایک چوتھائی سے زائد آبادی خوراک کی قلت کا شکار ہے۔

موسمیاتی تبدیلیوں کے باعث افریقہ کے جنوبی علاقے، ملاوی، زیمبیا اور زمبابوے وغیرہ شدید متاثر ہیں جس کی وجہ سے ہزاروں جانور ہلاک ہو چکے ہیں، ڈیم خشک ہو چکے ہیں جبکہ فصلیں تباہ ہو چکی ہیں۔

زمبابوے کو کبھی افریقہ کی ’بریڈ باسکٹ‘ کہا جاتا تھا۔ تاہم حالیہ برسوں کے دوران مسلسل خشک سالی کے باعث زمبابوے کو اب ہمسایہ ممالک سے اپنی ضروریات کا اناج درآمد کرنا پڑتا ہے۔

زمبابوے کے عوامی فلاح کے وزیر سیویئر کاسوکوویرے کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق، ’’ابتدائی اندازوں کے مطابق خشک سالی سے متاثر تمام 60 دیہی اضلاع میں 1.5 ملین افراد خوراک کی قلت کا شکار تھے۔ اس وقت ایسی آبادی کی تعداد 2.44 ملین تک پہنچ گئی ہے اور یہ کُل آبادی کا 26 فیصد بنتا ہے۔‘‘ کوویرے کے مطابق موسمیاتی تبدیلیوں کے باعث پیدا ہونے والی خُشک سالی کے باعث صدر رابرٹ موگابے نے بُری طرح متاثرہ علاقوں کو ’آفت زدہ‘ قرار دے دیا ہے۔

اقوام متحدہ کے فُوڈ پروگرام (WFP) کے ترجمان ڈیوڈ آر کے مطابق، ’’زمبابوے میں اپریل 2015ء میں ہونے والی فصل پیدوار کے لحاظ سے گزشتہ برس کے مقابلے میں 50 فیصد سے بھی کم تھی۔‘‘ ان کا مزید کہنا تھا کہ خشک سالی کے باعث لگتا یہی ہے کہ رواں برس کی فصل بھی بہتر نہیں ہو گی، ’’خوراک کی دستیابی کے حوالے سے غیر یقینی صورتحال کے شکار لوگوں کی تعداد میں ممکنہ طور پر اضافہ ہو گا اور یہ تعداد بڑھتی رہے گی۔‘‘

خُشک سالی کے باعث صدر رابرٹ موگابے نے بُری طرح متاثرہ علاقوں کو ’آفت زدہ‘ قرار دے دیا ہے

خُشک سالی کے باعث صدر رابرٹ موگابے نے بُری طرح متاثرہ علاقوں کو ’آفت زدہ‘ قرار دے دیا ہے

ورلڈ فُوڈ پروگرام کی طرف سے گزشتہ ماہ بتایا گیا تھا کہ افریقہ کے جنوبی حصے میں 14 ملین افراد طویل خشک سالی کے باعث بھوک کے خطرات کا شکار ہیں جبکہ ملاوی میں اناج کی قیمت اوسط سے 73 فیصد تک بڑھ گئی ہے۔

زمبابوے کے عوامی فلاح کے وزیر سیویئر کاسوکوویرے کے مطابق کم از کم ساڑھے سولہ ہزار مویشی ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ خشک سالی سے بُری طرح متاثرہ علاقوں میں 75 فیصد تک فصل تباہ ہو چکی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ زمبابوے حکومت لوگوں اور مویشیوں کو خشک سالی کے نقصانات سے بچانے کے لیے ہر ممکن کوشش کرے گی۔ تاہم انہوں نے ان کوششوں کے بارے میں کوئی تفصیل نہیں بتائی۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق گزشتہ کئی برسوں سے عالمی برادری سے کٹے ہونے اور ملک کی مخدوش معاشی صورتحال کے باعث زمبابوے کے پاس اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے بہت ہی کم وسائل موجود ہیں۔ جنوبی افریقہ آج کل ایک صدی سے زائد عرصے کی بدترین خشک سالی کا شکار ہے۔