1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

زمبابوے: افریقی ممالک کا اجلاس، سوڈانی صدر کی شرکت

اتوار کے روز افریقی ممالک کا ایک علاقائی اجلاس شروع ہو رہا ہے۔ اس اجلاس میں اقتصادی امور زیرِ غور آئیں گے تاہم سوڈانی صدر عمر البشیر کی اس اجلاس میں شرکت تمام موضوعات پر حاوی ہو سکتی ہے۔

default

لازم ہے کہ زمبابوے میں ہو رہے افریقی ممالک کے اجلاس میں ان کی شرکت زرائع ابلاغ سے لے کر بین الاقوامی برادری کے لیے موضوعِ بحث ہوگی

Kombo Simbabwe Morgan Tsvangirai und Robert Mugabe

متحدہ حکومت کے قیام کے بعد زمبابوے کا سیاسی بحران قدرے تھم گیا ہے


بین الاقوامی فوجداری عدالت نے دارفور میں جنگی جرائم کا مرتکب ہونے کے الزام میں سوڈانی صدر عمر البشیر کی گرفتاری کے وارنٹ جاری کیے ہوئے ہیں لہٰذا یہ لازم ہے کہ زمبابوے میں ہو رہے افریقی ممالک کے اجلاس میں ان کی شرکت زرائع ابلاغ سے لے کر بین الاقوامی برادری کے لیے موضوعِ بحث ہوگی۔

اس دو روزہ کانفرنس میں جنوبی اور شمالی افریقی ممالک کے درمیان اقتصادی تعاون کو بہتر بنانے پر بھی غور ہوگا۔ زمبابوے خود بد ترین اقتصادی بحران کا شکار ہے اور اس کو امید ہے کہ اس اجلاس کی میزبانی اس کے لیے بحران سے باہر نکلنے کے لیے مدد گار ثابت ہو سکتی ہے۔

Sudanesicher Präsident Omar al-Bashir in Darfur

سوڈانی صدر عمر البشیر پر دارفور میں جنگی جرائم کا مرتکب ہونے کا لزام ہے


زمبابوے میں قومی حکومت کے قیام اور صدر رابرٹ موگابے اور وزیرِ اعظم چوانگرائی کے ایک پلیٹ فارم پر اکھٹا ہونے کے بعد یہ پہلا موقع ہوگا کہ اس سطح کا اجلاس زمبابوے کی میزبانی میں منعقد ہوگا۔ زمبابوے کی حکومت نے ملک کو بحران سے نکلنے کے لیے آٹھ اعشاریہ تین بلین ڈالرز کا ریکوری پلان پیش کیا ہے تاہم وہ اب تک اس ضمن میں صرف ایک بلین ڈالرز کی رقم اکھٹی کر پائی ہے۔

زمبابوے جو کبھی پورے افریقہ میں اپنے اقتصادی ماڈل کی وجہ سے شہرت رکھتا تھا اب بد ترین معاشی بحران کا شکار ہے۔ حالیہ عرصے میں زمبابوے کے سیاسی بحران نے ملک کے اقتصادی بحران کو سنگین تر کردیا ہے۔

نہ صرف زمبابوے بلکہ افریقہ کے بیشتر ممالک اقتصادی اور سیاسی بحرانوں کی زد میں ہیں۔ مذکورہ اقتصادی اجلاس انہی مسائل سے نمٹنے اور ان کا حل تلاش کرنے کی ایک کوشش ہے تاہم مبصرین کا کہنا ہے کہ سوڈانی صدر عمر البشیر کی اس اجلاس میں شرکت سے عالمی برادری کی توّجہ افریقی ممالک کے زیادہ اہم اقتصادی مسائل سے ہٹ کر دوسری جانب مبذول ہو جانے کا امکان ہے۔