1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

زرداری پاکستان میں، سیلاب زدہ علاقوں کے ممکنہ دورے

پاکستانی صدر آصف علی زرداری آج اپنے ایک ہفتے سے زیادہ عرصے تک جاری رہنے والے دَورہء یورپ کے بعد واپس پاکستان پہنچ گئے۔ امکان ہے کہ وہ جلد ہی ملکی تاریخ کے شدید ترین سیلاب کی لپیٹ میں آئے ہوئے علاقوں کا دورہ کریں گے۔

default

پاکستانی صدر آصف علی زرداری

اِس دورے کے دوران صدر زرداری پہلے فرانس گئے اور پھر پورے ایک ہفتےکے لئے برطانیہ میں قیام کیا۔ اُن کا یہ دَورہ شدید تنقید کی زَد میں رہا کیونکہ وہ جب ملک سے رخصت ہوئے تو پاکستان میں گزشتہ اَسی برسوں کا شدید ترین سیلاب تباہی مچا رہا تھا۔ ناقدین کا کہنا تھا کہ وہ ایک ایسے وقت میں ملک چھوڑ کر جا رہے ہیں، جب مشکلات میں گھرے پاکستانی عوام کو اُن کی سب سے زیادہ ضرورت ہے۔

کچھ اپوزیشن حلقوں کا یہ بھی کہنا تھا کہ اُنہیں برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کی جانب سے بھارت کے ایک دورے کے موقع پر دئے گئے اُس بیان پر احتجاج کے طور پر برطانیہ کا دورہ منسوخ کر دینا چاہئے، جس میں کیمرون نے پاکستان پر دہشت گردی برآمد کرنے کا الزام عائد کیا تھا۔ تاہم تمام تر تنقید نظر انداز کرتے ہوئے صدر زرداری اِس دورے پر روانہ ہو گئے۔

Asif Ali Zardari David Cameron England Pakistan Treffen

زرداری برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کے ساتھ

مون سون کی شدید بارشوں کے نتیجے میں آنے والا ملکی تاریخ کا بد ترین سیلاب پاکستان کے شمال مغربی حصوں سے لے کر جنوب تک کے ایک ہزار کلومیٹر سے زیادہ رقبے کو اپنی لپیٹ میں لے چکا ہے، سولہ سو سے زیادہ انسان موت کا شکار ہو چکے ہیں، دو ملین بے گھر ہو چکے ہیں جبکہ تیرہ ملین انسانوں کی زندگیاں درہم برہم ہو چکی ہیں۔

اتنی بڑی تباہی کے باوجود زرداری کے غیر ملکی دورے پر روانہ ہو جانے پر ملک کے اندر ایک ہنگامہ بپا ہو گیا۔ زرداری کا موقف یہ تھا کہ وہ اپنے زیادہ تر اختیارات ملکی وزیر اعظم کو سونپ چکے ہیں، جو اِس وقت ملک میں موجود ہیں اور سیلاب کے متاثرین کی دیکھ بھال کے کاموں کی نگرانی کر رہے ہیں۔ تاہم ناقدین کا کہنا یہ تھا کہ اِس مشکل گھڑی میں پاکستانی عوام کو اپنے صدر کی اپنے پاس موجودگی اور اخلاقی حمایت کی ضرورت تھی۔

ملکی معیشت اور سلامتی کے سلسلے میں زرداری کے اب تک کے اقدامات سے پاکستانی عوام کی ایک بڑی تعداد پہلے ہی خوش نہیں ہے۔ سیلاب کی تباہ کاریوں سے نمٹنے کے سلسلے میں موجودہ حکومت کے سست رفتار اقدامات سے عوام بے حد مایوس ہوئے ہیں۔ عوام کی ایک بڑی تعداد ویسے بھی سیاستدانوں کو بدعنوان اور نا اہل تصور کرتی ہے اور مشکل گھڑی میں مدد کے لئے طاقتور فوج کی طرف دیکھتی ہے، جس نے موجودہ آفت کے دوران بھی متاثرین کو بھرپور طریقے سے امداد فراہم کی ہے۔ یہ اور بات ہے کہ مبصرین کی رائے میں فوج موجودہ حالات میں اقتدار پر قبضے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتی۔

Pakistan Hochwasser Überschwemmungen Flut

ناقدین کے مطابق سیلاب میں گھرے اِن لاکھوں انسانوں کو اپنے صدر کی جانب سے اخلاقی مدد اور حمایت کی ضرورت تھی لیکن صدر ان لوگوں کو چھوڑ کر بیرونی دوروں پر چلے گئے

امریکی حکام کو سیلاب سے نمٹنے کے سلسلے میں موجودہ حکومت کے کمزور اقدامات اور پاکستان میں زرداری کی بڑھتی ہوئی مخالفت پر تشویش ہے۔ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے منگل کے روز کہا کہ یہ سیلاب ’معیشت کو بہت بڑا نقصان‘ پہنچائے گا۔ قرضہ فراہم کرنے والے اور سرمایہ لگانے والے ملکوں اور اداروں کو تشویش ہے کہ یہ آفت ملک کی پہلے ہی سے کمزور معیشت پر جانے کتنے زیادہ منفی اثرات مرتب کرے گی۔

صدر آصف علی زرداری سب سے پہلے کراچی پہنچے ہیں، جہاں سے وہ آج منگل کی سہ پہر دارالحکومت اسلام آباد پہنچ رہے ہیں۔ حکام کا کہنا ہے کہ صدر جلد ہی سیلاب سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کریں گے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس