1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

روس نے امریکی الیکشن میں مداخلت کی ہے، امریکی انٹیلیجنس چیف

امریکا کے نیشنل اٹیلیجنس چیف نے کہا ہے کہ انہیں یقین ہے کہ روس نے ڈیموکریٹک پارٹی کی ای میلز کو ہیک کیا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ روسی ہیکرز نے اس تناظر میں انتخابی عمل کو متاثر کیا ہے۔

 USA | Anhörung im Kongressauschuss Foreign Cyber Threats to the United States | James Clapper (REUTERS/K. Lamarque)

جیمز کلیپر امریکی سینیٹ کی خصوصی کمیٹی میں اپنی رپورٹ پیش کرتے ہوئے

امریکا کے نیشنل اٹیلیجنس چیف جیمز کلیپر نے کہا ہے کہ ان کے اِس یقین میں اضافہ ہوا ہے کہ روس نے امریکی انتخابی مہم کے دوران ڈیموکریٹک پارٹی اور اُس کے انتخابی مہم کے اسٹاف کی ای میلز کو ہیک کرتے ہوئے پراپیگنڈا اور جھوٹی خبریں پھیلانے کا ارتکاب کیا۔ انہوں نے یہ بیان دے کر منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے  ایسے بیانات کو رد کر دیا ہے، جس میں ایک طرح سے شک کا اظہار کرتے ہوئے کہا گیا تھا کہ آیا روس نے انتخابی مہم کے دوران ہیکنگ کی ہے۔

جیمز کلیپر نے اپنے بیان میں کہا کہ چند ہفتے قبل کے مقابلے میں تازہ جائزوں اور تحقیقاتی عمل سے اُن کے ہیکنگ کے بارے میں مطلوبہ نتائج زیادہ معتبر ہو گئے ہیں۔ کلیپر نے انتخابی مہم کے دوران روسی ہیکنگ کے معاملے پر سینیٹ کی آرمڈ سروسز کمیٹی کے سامنے بیان میں اپنی تازہ جائزہ رپورٹ پیش کی۔ انہوں نے اس کمیٹی کو یہ بھی بتایا کہ اِس ہیکنگ کے مقاصد کی تفصیل اگلے ہفتے کے دوران عام کر دی جائے گی۔ سینیٹ میں کلیپر کے ساتھ دو دوسری خفیہ ایجنسیوں کے چیفس بھی پیش ہوئے۔

Moskau US Botschaft Gebäude (picture-alliance/AA/S. Karacan)

گزشتہ برس کے صدارتی الیکشن میں روس کی جانب سے ہیکنگ پر امریکی سیاسی منظر پر تیزی پائی جاتی ہے

 جمعرات، پانچ جنوری کو منتخب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا تھا کہ وہ ملکی خفیہ ایجنسیوں کے بڑے قدردان ہیں۔ اس بیان میں انہوں نے انٹیلیجنس ایجنسی کی جانب سے روسی ہیکنگ پر جو موقف اپنایا ہے، اُس پر واضح طور پر اپنے شکوک و شبہات کا اظہار شامل تھا۔ ان کے مطابق یہ بات ناقابل فہم ہے کہ روس نے کیونکر حریف امیدوار ہلیری کلنٹن کی انتخابی مہم کو متاثر کیا۔ اس ہیکنگ پر رپبلکن پارٹی اور ڈیموکریٹک پارٹی کے اہم رہنماؤں نے بھی عدم اطمینان کا اظہار کیا ہے۔

اسی دوران کل جمعرات پانچ جنوری کو امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے کے سربراہ جان برینن نے شکاگو یونیورسٹی کے انسٹیٹیوٹ برائے سیاسیاست میں ایک تقریب کے دوران کہاکہ منتخب امریکی صدر نے کبھی کسی حکومتی دفتر میں کام نہیں کیا، اس لیے وہ نہیں جانتے کہ انٹیلیجنس پروفیشن کی ہیت اور کام کرنے کا طریقہ کیسا ہوتا ہے۔