1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

روس میں جنگلاتی آگ، کم ازکم چالیس افراد ہلاک

روس ميں ان دنوں بہت شديدگرمی پڑ رہی ہے ۔بہت سے جنگلات ميں آگ لگ گئی ہے۔ اگرچہ فائر بريگيڈ سينکڑوں جگہوں پر لگی آگ بجھانے کے لئے دن رات سرگرداں ہے ليکن حالات ابھی تک سنگين ہيں۔

default

روس ميں گذشتہ کئی عشروں کی سخت ترين گرمی پڑ رہی ہے اور حکام کا کہنا ہے کہ اس ميں کمی کے کوئی آثار نظر نہيں آتے۔ فائر بريگيڈ کا عملہ جنگلات ميں سينکڑوں مقامات پر لگی آگ بجھانے ميں مصروف ہے۔

اب تک يہ آگ کم ازکم 40 افراد کو لقمہء اجل بنا چکی ہے۔ ہزاروں ہيکٹر اراضی شعلوں کی لپيٹ ميں آ چکی ہے اور سينکڑوں افراد بے گھر بھی ہو گئے ہيں۔ حکام کا کہنا ہے کہ فائر بريگيڈ کے کارکن روزانہ سينکڑوں مقامات پر آگ بجھا رہے ہیں ليکن ہر 24 گھنٹوں کے اندر 300 سے لے کر 400 تک جگہوں پر نئی آگ لگ رہی ہے اور ہنگامی امدادی کارکنوں کے لئے يہ صورت حال ايک زبردست مشکل بنی ہوئی ہے۔ روسی صدر ميدويديف نے اس وجہ سے ملک کے سات علاقوں ميں ہنگامی حالت بھی نافذ کر دی ہے۔

Feuer Großbrand Flächenbrand Russland Flash-Galerie

آگ بجھانے کی کارروائيوں ميں حصہ لينے والے روسی فوجی آرام کررہے ہيں

ہنگامی حالات کی وزارت کے بحران سے نمٹنے کے مرکز کے سربراہ ولادیمير اسٹيپانوف نے صحافیوں کو بتايا: ’’بہت شديد گرمی جاری ہے۔ اس وقت يہ ہمارے کام ميں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔ ہم دن رات کام کر رہے ہيں۔ يہ آگ سے ايک حقيقی جنگ ہے۔‘‘ انہوں نے يہ بھی کہا کہ ہوا کے مسلسل رخ بدلنے کی وجہ سے بھی مشکلات ميں مزيد اضافہ ہو رہا ہے۔

Waldbrände in Russland Flash-Galerie

ماسکو سے تقريباً 500 کلو منٹر کے فاصلے پر آگ کے شعلے

روس میں ہنگامی حالات کی وزارت آگ کے بلند شعلوں کو بجھانے کے لئے پانی چھڑکنے والے درجنوں جيٹ طيارے استعمال کر رہی ہے، جو روزانہ ہزاروں ٹن پانی چھڑک رہے ہيں۔ روس ميں اس وقت ايک لاکھ 70 ہزار ہيکٹر رقبے پر 500 مقامات پر آگ لگی ہوئی ہے۔ ہنگامی حالات کی وزارت کا کہنا ہے کہ ايک لاکھ 50 ہزار سے زائد ہنگامی امدادی کارکن کام مسلسل جدوجہد کر رہے ہيں اور 56 طيارے بھی امدادی کارروائيوں ميں حصہ لے رہے ہيں۔

روس اپنے انتہائی سرد موسم کے لئے مشہور ہے ليکن اس سال وہ گرمی کی نہايت شدید لہر کی زد ميں ہے، جس نے کئی دہائيوں کے ريکارڈ توڑ دئے ہيں۔ موسمیاتی پيشین گوئيوں کے مطابق اگلے دنوں ميں گرمی ميں اضافہ جاری رہے گا اور بارش کی بھی کوئی اميد نہيں ہے۔

اس ہفتے ماسکو ميں درجہء حرارت 38 ڈگری سينٹی گريڈ تک پہنچ جانے کی توقع ہے۔ ماسکو کے مضافاتی علاقے سب سے زيادہ متاثر ہوئے ہيں۔ دارالحکومت کے مشرق ميں واقع نوووگورد کے علاقے ميں اب تک 20 افراد ہلاک ہو چکے ہيں۔

Waldbrände in Russland Flash-Galerie

روس ميں آگ سے جل جانے والا ايک جنگل

کريملن کی سرکاری ويب سائٹ پر شائع کی گئی تفصيلات کے مطابق روسی صدر ميدويديف نے سات علاقوں ميں جس ہنگامی حالت کے نفاذ کا اعلان کیا ہے، اس کے تحت حکام کو ان تمام علاقوں ميں عوام کو داخل ہونے سے منع کرنے کا اختيار حاصل ہے، جہاں عام لوگوں کی موجودگی سے آگ لگنے کا خطرہ بڑھ سکتا ہے۔

اس کے علاوہ حکام آگ بجھانے اور آتشزدگی کے خطرے کی روک تھام کے لئے فوج بھی طلب کر سکتے ہيں۔ روس ميں اس سلسلے میں عوامی سطح پر بہت شديد اور غير معمولی تنقيد دیکھنے میں آئی ہے کہ حکام نے آگ پر قابو پانے کے حوالے سے سستی کا مظاہرہ کيا۔ اس لئے سرکاری اہلکار يہ دکھانے کی پوری کوشش کر رہے ہيں کہ حالات ان کے قابو ميں ہيں۔ روس کی ايٹمی ايجنسی ’روس ايٹم‘ کے سربراہ سیرگئی کرينینکو نے نوووگورد کے علاقے ميں واقع شہر ساروو کا دورہ کيا، جہاں روس کا ایٹمی تحقیقی مرکز قائم ہے۔ وہ اس سينٹر کے تحفظ سے متعلق صورت حال کا جائزہ لينے وہاں گئے تھے۔

پچھلے ہفتے روسی وزير اعظم ولادیمير پوٹن نے نوووگورد کا دورہ کيا تھا، جہاں انہيں انتہائی مشتعل متاثرین کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ بعد ميں پوٹن نے مقامی اہلکاروں کی ان کے سست رفتار اقدامات پر سرزنش بھی کی تھی۔

رپورٹ: شہاب احمد صدیقی

ادارت: مقبول ملک

DW.COM

ویب لنکس