1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

روس اور یوکرائن کے باہمی تعلقات کا نیا دَور

روس اور یوکرائن نے باہمی تجارت اور سرمایہ کاری کے فروغ کے لئے متعدد معاہدوں پر دستخط کئے ہیں۔ اس مقصد کے لئے روسی صدر دمتری میدویدیف نے یوکرائن کا دورہ کیا ہے۔

default

یوکرائن میں روسی صدر کا روایتی استقبال

روس کے صدر دمتری میدودیف کا یوکرائن کا یہ پہلا سرکاری دورہ تھا۔ اس موقع پر انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے باہمی تعلقات کی بحالی کاروباری طبقے کے لئے ایک اشارہ ہیں کہ وہ ان تعلقات کو فروغ دیں اور مشترکہ کمپنیوں کی بنیاد رکھیں۔

Ukraine verlängert Präsenz der russischen Marine auf der Krim um 25 Jahre

دیمیتری میدویدیف اور یانوکووچ تین ماہ کے عرصے میں سات ملاقاتیں کر چکے ہیں

میدویدیف نے کہا کہ ماسکو حکومت باہمی سرمایہ کاری کا خیر مقدم کرتی ہے اور دونوں ممالک کے تعلقات میں تلخی اب ماضی کا حصہ بن چکی ہے۔

ان کا اشارہ یوکرائن کے سابق مغرب نواز صدر وکٹور یوشچینکو کے دور حکومت کی جانب تھا، جس سے ماسکو حکام خوش نہیں رہے۔ ان کا موقف رہا ہے کہ اس دوران یوکرائن میں روس کے کاروباری مفادات کو نظرانداز کیا گیا۔

تاہم پیر کو یوکرائن کے صدر وکٹور یانوکووچ کے ساتھ مشترکہ نیوزکانفرنس سے خطاب میں میدویدیف نے کہا کہ اب سے باہمی سرمایہ کاری کا تحفظ کیا جائے گا۔

یانوکووچ نے رواں برس فروری میں صدر کا عہدہ سنبھالا۔ اس وقت کے بعد سے میدویدیف سے یہ ان کی ساتویں ملاقات ہے۔ دونوں رہنماؤں نے گزشتہ ماہ یوکرائن میں روسی بلیک سی فلیٹ کے قیام کی مدت میں توسیع کے معاہدے پر دستخط کر کے مبصرین کو چونکا دیا تھا۔

دونوں رہنماؤں کی موجودگی میں پیر کو بھی کیعیف اور ماسکو حکومتوں کے درمیان متعدد سمجھوتوں پر دستخط کئے گئے، جن میں سرحدی حدود کا تعین اور سیٹیلائٹ نیوی گیشن کا معاہدہ بھی شامل تھا۔ حکام کا کہنا ہے کہ جوہری اور توانائی کی صنعت کے معاہدے بھی ترتیب دئے جا رہے ہیں۔

یانوکووچ نے مشترکہ نیوزکانفرنس سے خطاب میں کہا کہ دونوں ملکوں کی نئی دوستی کو دیگر ریاستوں کے خلاف استعمال نہیں کیا جائے گا بلکہ تمام فیصلے باہمی مفادات کے تحفظ کے لئے کئے جائیں گے۔

Ukraine Inauguration Janukowitsch

یوکرائن کے صدر وکٹور یانوکووچ اپنے پیشرو وکٹور یوشچینکو کے ساتھ

دمتری میدویدیف گزشتہ ماہ دونوں ریاستوں کی جوہری صنعتوں اور گیس کمپنیوں کے انضمام کی بات بھی کر چکے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ بالآخر یوکرائن ایک اہم پارٹنر بن چکا ہے۔ تاہم یانوکووچ کا کہنا ہے کہ یوکرائن کی نافٹوگیس کا کہیں بڑی روسی کمپنی گیس پروم کے ساتھ انضمام کیعیف حکومت کے لئے مشکل ہو سکتا ہے۔ اس کی وجہ انہوں نے یہ بتائی ہے کہ ماسکو حکام اس انضمام کو برابری کی بنیاد پر تسلیم نہیں کریں گے۔

اس کے برعکس دمتری میدویدیف نے کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان کسی بھی طرح کا تعاون برابری کی بنیاد پر ہی ہونا چاہئے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: امجد علی

DW.COM