1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

روسی ارب پتی خودور کوفسکی دوسرے مقدمے میں بھی ’مجرم‘

ماسکو میں تیل کی صنعت کی ارب پتی شخصیت خودورکوفسکی کو دوسرے مقدمے میں بھی عدالت کی طرف سے مجرم قرار دے دیا گیا ہے۔ یُوکوس نامی تیل کمپنی کے اس مالک پر دو سو اٹھائیس ملین ٹن تیل غیر قانونی طور پر بیچنے کا الزام ہے۔

default

خودور کوفسکی کو پہلے مقدمے میں آٹھ برس قید ہوئی

تاہم اس بارے میں کچھ نہیں بتایا گیا کہ ان کو اس نئے مقدمے میں سزا کب تک سنائی جائے گی۔ فیصلے سے کچھ دیر پہلے تک خودورکوفسکی کے ساتھیوں اور وزیر اعظم ولادیمیر پوٹن کے درمیان میڈیا پر لفظوں کی جنگ جاری تھی۔ ایک ہفتہ قبل جب وزیر اعظم پوٹن سے خودورکوفسکی کے مستقبل کے بارے میں پوچھا گیا، توان کا کہنا تھا:’’ایک چور کو جیل میں ہونا چاہئے۔ عدالتی حکم کے مطابق خودورکوفسکی چوری کا مرتکب ہوا ہے اور یہ ایک بہت بڑی چوری ہے۔‘‘

تاہم سینتالیس سالہ خودورکوفسکی کے وکیل کا کہنا ہے کہ وہ اس فیصلے کے خلاف اپیل دائر کریں گے۔ وزیر اعظم ولادیمیر پوٹن خودورکوفسکی کے سخت دشمن ہیں اور یہ عدالتی فیصلہ ایک سیاسی فیصلہ ہے۔ دوسری جانب عدالت کے باہر کئی سو مظاہرین بھی اکٹھے ہوئے۔ ان کا مطالبہ تھا کہ خودورکوفسکی کو رہا کیا جائے۔ پولیس نے 20 مظاہرین کو حراست میں بھی لے لیا، جن میں عورتیں اور عمر رسیدہ افراد بھی شامل ہیں۔ ان مظاہرین نے پلےکارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے، جن میں سے ایک پر لکھا تھا کہ ہم میں سے ہر کوئی خودورکوفسکی بن سکتا ہے۔

Yokos-Konzern-Chef Michail Chodorkowski hinter Gitter mit Thumbnail

یُوکوس نامی تیل کمپنی کے اس مالک پر دو سو اٹھائیس ملین ٹن تیل غیر قانونی طور پر بیچنے کا الزام ہے

روسی اپوزیشن رہنما بورِس نیمزوف نے اس فیصلے کی مذمت کرتے ہوئے کہا: ’’آج کا دن روس کے لئے ایک افسوسناک دن ہے۔‘‘کافی عرصے سے جیل میں قید اور پوٹن کے مخالف سمجھے جانے والے روسی صنعت کار میخائیل خودورکوفسکی کے خلاف دوسرے مقدمے کی آج ہونے والی سماعت کو عالمی برداری کی طرف سے بھی بڑے غور سے دیکھا گیا۔ جرمن حکام کے مطابق اس مقدمے میں آئندہ تفصیلی فیصلے سے معلوم ہو سکے گا کہ موجودہ روسی حکومت اگلے صدارتی انتخابات سے قبل اصلاحات کے اپنے مجوزہ منصوبے پر عملدرآمد کے حوالے سے کس حد تک سنجیدہ ہے۔

انسانی حقوق کے تحفظ کی ایک تنظیم نے وزیر اعظم پوٹن پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ 2012ء کے صدارتی انتخابات سے پہلے بہت اثر و رسوخ رکھنے والے خودورکوفسکی کو اپنے راستے سے ہٹانا چاہتے ہیں۔ ماسکو میں تعینات جرمن سفیر کا کہنا تھا کہ اس مقدمے کا فیصلہ روس میں قانون کی بالادستی کے لئے ایک امتحان ہے۔ خودورکوفسکی، جو روس کے امیر ترین شہری ہیں، پہلے ہی بدعنوانی کے جرم میں آٹھ سال کی سزائے قید کاٹ رہے ہیں اور اس نئے مقدمے میں اب انہیں مزید پندرہ برس تک کی قید سنائی جا سکتی ہے۔

رپورٹ: امتیاز احمد

ادارت: مقبول ملک

DW.COM