1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

رضاکارانہ طور واپس جانے والے مہاجرین کے لیے اضافی مالی مدد

جرمن حکومت ایسے مہاجرین کی زیادہ مالی مدد کرے گی جو خود سے واپس جانے پر رضامند ہوں گے۔ اس خصوصی حکومتی پروگرام کا آغاز آج بدھ، پہلی فروری سے ہو رہا ہے۔

جرمن وزارتِ داخلہ کے اعلان کے مطابق برلن حکومت ایسے مہاجرین کو معقول رقم دے گی، جو رضاکارانہ بنیاد پر واپس اپنے وطن جانے کے لیے تیار ہو جائیں گے۔ اس مقصد کے لیے اضافی رقم بھی مختص کر دی گئی ہے۔ جرمن وزارتِ داخلہ کے مطابق اِس پروگرام کا نام ’لانچ ایڈ پلس‘ رکھا گیا ہے واپس جانے والے مہاجرین کے لیے جرمن حکومت کا خصوصی امداد کا یہ پروگرام آج پہلی فروری سے شروع ہو رہا ہے۔

اِس خصوصی پروگرام کے لیے میرکل حکومت نے اضافی چالیس ملین یورو (43.2 ملین ڈالر) مختص کیے ہیں۔ وزارت داخلہ نے اس پروگرام کو شروع کرنے کی وجہ بتاتے ہوئے کہا کہ اس سے مہاجرین کو ترغیب حاصل ہو سکے گی کہ وہ اپنی مرضی سے اپنے وطن جانے پر تیار ہو جائیں۔ اس امدادی رقم کے حصول میں وہ بھی شامل ہو سکتے ہیں جن کی سیاسی پناہ کی درخواستیں متعلقہ حکام مسترد کر چکے ہیں۔

Deutschland Bayern Flüchtlingscamp (Ali)

یاویریا میں قائم ایک مہاجر کیمپ

خصوصی پروگرام کے تحت بارہ برس سے زائد عمر کے کسی بھی مہاجر نے سیاسی پناہ کی درخواست دے رکھی ہے اور وہ واپس جانا چاہتا ہے تو برلن حکومت اُسے بارہ سو یورو دے گی اور اگر کسی کی سیاسی پناہ کی درخواست مسترد ہو چکی ہے اور وہ اپیل کرنے کے بجائے واپس اپنے وطن جانے کا خواہشمند ہے تو اُسے آٹھ سو یورو  دیے جائیں گے۔

اس تناظر میں جرمنی کے وزیر داخلہ تھوماس ڈے میزیئر کا کہنا ہے کہ جو کوئی مہاجر یہ خیال کرتا ہے کہ جرمنی میں اُس کے لیے کوئی مستقبل نہیں، اُس کے لیے ملک بدری سے رضاکارانہ طور پر اپنے وطن کو واپسی ایک بہتر آپشن ہے۔ اس سکیم سے ناجائز فائدہ اٹھانے کی حوصلہ شکنی کے تناظر میں بعض ملکوں کے مہاجرین اِس اسکیم سے فائدہ نہیں اٹھا سکیں گے۔ وزارت داخلہ کے مطابق اِس میں خاص طور پر مغربی بلقان خطے کے ممالک شامل ہیں۔

یہ امر اہم ہے کہ جرمن حکومت کو ایسے مہاجرین کی ملک بدری پر سخت تنقید کا بھی سامنا ہے، جہاں مسلح تنازعات کا سلسلہ ابھی جاری ہے، اس کی مثال افغانستان دی جاتی ہے۔ دوسری جانب حکومت پر یہ دباؤ بھی ہے کہ وہ سیاسی پناہ کے متلاشی ایسے مہاجرین کی تعداد میں واضع کمی لائے۔