1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

رشوت کا خاتمے کے لیے سرگرم پشاور کا ٹریفک وارڈن سکواڈ

ترقی یافتہ ممالک میں ایسا سوچنا بھی ناممکن ہے کہ کوئی وزیر یا اعلیٰ عہدیدار ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرے اور اس کو عہدے کی بنیاد پر معاف کر دیا جائے لیکن اب پشاور میں بھی ایسی ہی مثالیں قائم کی جا رہی ہیں۔

خیبر پختون خوا حکومت نے ٹریفک کے نظام کو بہتر اور کارآمد بنانے کے عرض سے جون دو ہزار پندرہ کو صوبائی دارالحکومت پشاور میں ٹریفک وارڈن سکواڈ متعارف کرایا، جس کا کام تقریباﹰ پچاسی لاکھ آبادی کے شہر پشاور میں موجود تقریباﹰ سات لاکھ گاڑیوں کے بہاؤ کو کنٹرول کرنے کے علاوہ شہریوں کو ٹریفک قوانین سے آگاہ کرنا ہے۔

ٹریفک وارڈنز نے نو ماہ کے مختصر سے عرصے میں، جہاں شہر میں گاڑیوں کے آمدورفت کے نظام کو کافی حد تک بہتر بنایا وہی اس سکواڈ کو عوام کی طرف سے بھی کافی تعاون ملا، جس کی وجہ اس ٹیم کی قابلیت اور مناسب رویہ بتایا جاتا ہے۔

Pakistan Traffic Police Squad - Verkehrspolizisten

رشید خان سارے واقعات خفیہ کیمرے میں ریکارڈ بھی کرتے ہیں اور وقتاً فوقتاً اس کوسوشل میڈیا پر اپ لوڈ بھی کرتے ہیں

شہر کے سڑکوں پر پیشہ وارانہ مثالیں قائم کرتے ہوئے انہوں نے قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے ممبران سمیت متعد دوسرے اہم شحصیات کو بھی نہ بحشا اور غلطی کرنے پر ان کی گاڑیوں کے چالان بھی کیے۔ جہاں اب اس سکواڈ نے عام شہریوں کے علاوہ تقریباﹰ سات ہزار بااثرشحصیات کا چالان کیا ہے وہی ٹریفک وارڈن کی ذیلی شاخ، رپیڈ رسپانس سکواڈ یا RRS کے انچارج اسسٹنٹ سب انسپکٹر رشید خان نے تین ہزار سے زائد وی آئی پیز کو ڈرائیونگ کے دوران غلطی کرنے پر جرمانہ کیا ہے۔ رشید خان کو اپنی بہتر کارکردگی کی بنا پر اعلیٰ افسران کی جانب سے نقد انعامات کے ساتھ ساتھ اسناد سے بھی نوازا گیا ہے۔

ٹریفک سکواڈ کے ایک آفیسرآصف رضا کے بقول رشید خان نے ہمیشہ اپنے فرائض کو ترجیح دی ہے، انہوں نے کبھی بھی عام شہری اور کسی اعلیٰ عہدے دار میں فرق نہیں کیا، ’’رشید کے لئے سب برابر ہیں، غلطی کرنے پر آپ کو جرمانہ ادا کرنا ہی ہوگا، یہی وجہ ہے کہ آئی جی پولیس خیبر پختونخوا ناصرخان دورانی نے رشید خان کو باقی اہلکاروں کے لئے رول ماڈل قرار دیا ہے۔‘‘

Pakistan Traffic Police Squad - Verkehrspolizisten

سب انسپکٹر رشید خان نے تین ہزار سے زائد وی آئی پیز کو ڈرائیونگ کے دوران غلطی کرنے پر جرمانہ کیا ہے

اے ایس آئی رشید کی یہ خواہش ہے کہ خیبرپختوانخوا کی ٹریفک پولیس کے ساتھ ساتھ تمام دوسرے اداروں سے بدعنوانی اور رشوت خوری کا مکمل طور پر خاتمہ ہوجائے۔ اس مہم کو تکمیل تک پہنچانے کے لئے وہ کسی بھی حد تک جانے کے لئے تیار ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ رشید خان اور ان کے ٹیم نے گزشتہ ماہ جنوری میں ٹریفک قوانین کے خلاف ورزی کرنے والے افراد کی کثیر تعداد کو جرمانہ کیا جس سے قومی خزانے میں دو کروڑ نو لاکھ جمع ہوئے۔ رشید خان کہتے ہیں کہ انہوں نے ممبران قومی اسمبلی، سنیٹرز، ممبران صوبائی اسمبلی، سابقہ صوبائی وزراء، سیکریٹریز، ڈاکٹرز، پروفیسرز، وکلاء، ریٹائرڈ ججز اور دیگر اعلیٰ حکام کی طرف سے قوانین کو پامال کرنے پر چالان کیا ہے۔ وہ مزید کہتے ہیں، ’’چالان کرتے وقت اکثر اوقات رشوت میں بڑی رقوم کا لالچ دے دیا جاتا ہے یا پھر بااثر لوگوں کی جانب سے ڈرایا دھمکایا جاتا ہے لیکن میں نے اپنے فرائض ہمیشہ خوش اسلوبی، خندہ پیشانی اور خوش اخلاقی سے سرانجام دیے ہیں۔‘‘

رشید خان سارے واقعات خفیہ کیمرے میں ریکارڈ بھی کرتے ہیں اور وقتاً فوقتاً اس کوسوشل میڈیا پر اپ لوڈ بھی کرتے ہیں۔ اس بارے میں پشاور ٹریفک پولیس کے سینئر سپریڈنٹ صادق بلوچ کہتے ہیں کہ رشید کو پن یا عینک کیمرے کی اجازت اس لئے دی گئی ہے تاکہ بنائی گئی ویڈیوز سے عام شہریوں کی حوصلہ افزائی ہو اور وہ پولیس اہلکاروں کے ساتھ تعاون کے علاوہ قوانین کا احترام کریں۔

شہری بھی ٹریفک سکواڈ بالخصوص رشید خان کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کر تے ہیں۔ پشاور کے رہائشی فضل اکبر کے بقول، ’’ یہ لوگ بلا امتیاز غلطی کرنے پر تمام لوگوں کا چالان کرتے ہیں، انہوں نے کبھی بھی رشوت کا مطالبہ نہیں کیا، یہ لوگ انتہائی نرم اور خوش اخلاقی سے بات کرتے ہیں، جوکہ ٹریفک پولیس میں ایک مثبت تبدیلی ہے۔‘‘

رشید خان کے مطابق، ڈرائیونگ کے دوران چھوٹی سی غلطی بھی بعض اوقات بڑے حادثے کا باعث بن سکتی ہے، لہٰذا احتیاط سے کام لینا چاہیے، ’’چھوٹے بڑے جرمانے کی وجہ سے یہ لوگ آئندہ محتاط رہتے ہیں اور ڈرائیونگ کے دوران ان غلطیوں کو نہیں دوہراتے۔‘‘

یاد رہے کہ گزشتہ دنوں ایس ایس پی ٹریفک صادق بلوچ نے خود وارڈنز کو چیک کرنے کے لئے سادہ کپڑوں میں ٹریفک قانون کی خلاف ورزی کی تھی، جس پر RRS کے ایک اہلکار نے ان کا چالان کیا۔ ٹریفک وارڈن کی فرض شناسی اور خوش اخلاقی کے بناء پر ایس ایس پی نے ان کو شاباش اور دو ہزار روپے انعام بھی دیا تھا۔