1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

ربر کے آلے سے ’پرندوں کے گیتوں‘ کی نقل

امریکی سائنسدانوں نے پرندوں کے آوازوں کی نقل کرنے والا ایک ربر کا آلہ ایجاد کیا ہے۔ اس آلے کی مدد سے پرندوں کے مشکل گیتوں سے مشابہہ آواز بآسانی پیدا کی جا سکتی ہے۔

default

محققین کے مطابق ربر کے اس سادہ آلے کو پرندوں میں آواز پیدا کرنے والے نظام کی طرح بنایا گیا ہے۔ اس آلے سے ہوا گزاری جاتی ہے، تو یہ بالکل ویسی ہی آواز پیدا کرتا ہے، جیسی آواز کسی پرندے کی چونچ سے نکلتی ہے۔

سائنسدانوں کے مطابق اس ایجاد سے یہ بات واضح ہو گئی ہے کہ پرندوں کی آوازوں کا محرک ان کا پیچیدہ اعصابی نظام نہیں بالکل ان کے گلے میں موجود ایک نہایت سادہ صوتی نظام ہوتا ہے اور اسی نظام کے تحت مختلف پرندے مختلف آوازیں پیدا کرتے ہیں۔

اس تحقیق میں مصروف حیاتیات دانوں کی ٹیم کا کہنا ہے کہ اب وہ جلد ہی یہ پتہ چلا لیں گے کہ پرندے اتنے مشکل اور پیچیدہ ’گیت‘ کیسے گا لیتے ہیں۔

ہاورڈ یونیورسٹی سے منسلک اس تحقیقی ٹیم سے وابستہ اریش مکھرجی کے مطابق اس سے پہلے یہ سوچا بھی نہیں جا سکتا تھا کہ پرندوں کے گیت جیسا ایک مکمل نغمہ ایک سادہ سے آلے کی مدد سے پیش کیا جا سکتا ہے۔

’ہم اس آلے سے کھیلنے میں مصروف تھے۔ میں نے اس آلے کو مختلف اطراف سے دیکھا اور ہوا کے اس آلے سے گزرنے پر یہ آلہ خود بخود ویسی ہی آواز پیدا کرنے لگا، جیسی پرندوں سے سنی جاتی ہے۔ میرے لئے یہ واقعی بہت دلچسپ ہے۔‘

Zugvögel Spanien

پرندوں کے گیت جیسا ایک مکمل نغمہ ایک سادہ سے آلے کی مدد سے پیش کیا جا سکتا ہے

مکھرجی نے مزید بتایا کہ یہ آلہ نہایت سادہ ہے اور اس کو بنانے میں ایک چھوٹی سی موٹر اور ربر کے صرف دو ٹکڑے استعمال کئے گئے ہیں۔ ان ٹکڑوں کو ایک دوسرے کے ساتھ اس طرح جوڑا گیا ہے کہ ان دونوں کے درمیان بہت مختصر سا خلا بھی موجود رہے۔ اسی خلا کے سائز سے مختلف طرح کی آوازیں پیدا ہوتی ہیں۔

’جب ہوا ربر کے ان ٹکڑوں کے درمیان سے گزرتی ہے، تو موٹر بالکل وہی کام سرانجام دیتی ہے، جیسا کسی زندہ جسم میں مسلز کرتے ہیں۔ حیاتیاتی زبان میں آواز کا محرک بننے والا نظام ٹریکٹ کہلاتا ہے۔ اسی کی وجہ خلوی دیواروں کے درمیان لچکدار تصادم ہوتا ہے۔ اگر ان خلوی دیواروں کو تناؤ میں مبتلا کر دیا جائے اور پھر خاص انداز سے حرکت دی جائے، تو ارتعاش پیدا ہوتی ہے اور یہ ارتعاش آواز کا باعث بنتی ہے۔ ‘

رپورٹ عاطف توقیر / خبررساں ادارے

ادارت ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس