1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ربانی کا قتل افغان تنازعے کے سیاسی حل کے لیے ایک بڑا دھچکہ

منگل 20 ستمبر کو افغانستان کے ایک سابق صدر اور موجودہ افغان حکومت کی امن کونسل کے سربراہ برہان الدین ربانی کو ایک خود کش حملے میں ہلاک کر دیا گیا۔ یہ واقعہ افغان تنازعے کے سیاسی حل کی امیدوں کے لیے ایک بڑا دھچکہ ہے۔

برہان الدین ربانی

برہان الدین ربانی

کابل پولیس کے سربراہ کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے:’’طالبان کے ایک کارندے نے، جو امن مذاکرات کے لیے ربانی کے گھر گیا تھا، اپنی پگڑی میں ایک بم چھپایا ہوا تھا۔‘‘

پولیس کے ایک ذریعے کے مطابق اِس حملے میں صدر حامد کرزئی کے ایک سینئر مشیر اور ربانی کے نائبین میں سے ایک معصوم ستانکزئی شدید زخمی ہو گئے۔ دراصل حملہ آور، جن کی تعداد دو بتائی جا رہی ہے،  ستانکزئی کے ہمراہ ہی ربانی کے گھر پہنچے تھے۔

ربانی کے قتل کے فوراً بعد افغان پولیس اور فوج کے ارکان ربانی کے گھر کی طرف جاتے ہوئے

ربانی کے قتل کے فوراً بعد افغان پولیس اور فوج کے ارکان ربانی کے گھر کی طرف جاتے ہوئے

کابل پولیس کی تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ محمد ظاہر نے بتایا کہ یہ دو افراد طالبان کی طرف سے ربانی کے ساتھ مذاکرات کی غرض  سے اُن کے گھر پہنچے تھے، جہاں اُن میں سے ایک نے اپنی پگڑی میں چھپے بم کا دھماکہ کر دیا:’’وہ ربانی کے قریب گیا اور اپنے بم کا دھماکہ کر دیا۔ ربانی شہید ہو گئے اور معصوم ستانکزئی سمیت چار دیگر افراد زخمی ہو گئے۔‘‘

طالبان نے اس واقعے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ سابق صدر برہان الدین ربانی کو قتل کرنے کے لیے پہلے اُن کا اعتماد حاصل کیا گیا اور ایک اعلیٰ سطحی ٹیم استعمال کی گئی، جس نے پہلے جا کر یہ یقین دلایا تھا کہ طالبان امن مذاکرات میں دلچسپی رکھتے ہیں لیکن اصل مقصد اُنہیں قتل کرنا تھا۔

طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے روئٹرز کو بتایا:’’جیسے ہی ربانی محمد معصوم سے گلے ملنے کے لیے تین قدم آگے آئے، اُس نے اپنی بارود سے بھری جیکٹ دھماکے سے اڑا دی، جس سے ربانی، ایک اور طالبان عسکریت پسند وحید یار اور گھر پر موجود چار سکیورٹی گارڈز ہلاک ہو گئے۔‘‘ مجاہد کے مطابق طالبان کی مرکزی قیادت نے ’بہت اچھے انداز میں گفتگو کرنے والے اور انتہائی تربیت یافتہ‘ دو جنگجوؤں کو ربانی کے ساتھ روابط اُستوار کرنے کے لیے مقرر کیا تھا۔‘‘

ربانی کے قتل کے فوراً بعد اُن کی رہائش گاہ کے آس پاس کے علاقے کی ناکہ بندی کر دی گئی

ربانی کے قتل کے فوراً بعد اُن کی رہائش گاہ کے آس پاس کے علاقے کی ناکہ بندی کر دی گئی

ایک نامعلوم مقام سے ٹیلی فون پر طالبان کے ترجمان نے بتایا کہ طالبان کے دور کے سابق وزیر یار نے کئی مرتبہ ربانی کے گھر جا کر اُن سے ملاقات کی:’’دونوں (عسکریت پسند)اکثر کابل میں اُن کے گھر جا کر اُن سے ملتے رہے اور اُن کے محافظوں کا اعتماد حاصل کر لیا۔ یہ لوگ ربانی کو بتاتے رہتے تھے کہ وہ جلد ہی طالبان کی سینئر قیادت کو مذاکرات کی میز پر لے کر آئیں گے۔‘‘

مجاہد کے مطابق مستقبل قریب میں ربانی کی طرح کے کئی اور افراد کو قتل کرنے کے لیے اسی انداز میں منصوبہ بندی کی گئی ہے۔ ربانی سے پہلے صدر حامد کرزئی کے بھائی احمد ولی کرزئی اور شمالی افعانستان کی پولیس کے سرکردہ کمانڈر جنرل داؤد داؤد کو بھی ہلاک کیا جا چکا ہے۔

رپورٹ: خبر رساں ادارے / امجد علی

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس