1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ربانی قتل کیس: افغان وفد کی اسلام آباد میں پاکستانی حکام سے ملاقاتیں

افغانستان کے سابق صدراور اعلیٰ امن کونسل کے سربراہ پروفیسر برہان الدین ربانی کی خودکش حملے میں ہلاکت کی تحقیقات کے لیے اسلام آباد کا دورہ کرنے والے افغان وفد نے پاکستانی حکام سے ملاقاتیں کی ہیں۔

default

پروفیسر برہان الدین ربانی

اس وفد کے ارکان میں افغانستان کی وزارت دفاع و داخلہ اور انٹیلیجنس کے نو افراد شامل ہیں۔ افغان وفد کی مصروفیات کے بارے میں سرکاری طور پر کچھ نہیں بتایا جا رہا۔

تاہم پاکستان کے دورے پرآئی ہوئی برطانوی وزیر داخلہ تھریسہ مے کے ساتھ مشترکہ نیوز کانفرنس سے خطاب میں افغان وفد کے دورے کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال پر وزیرداخلہ رحمان ملک نے کہا: ’’پاکستان کا دورہ کرنے والے افغان وفد کے بارے میں اتنا کہنا چاہوں گا کہ وہ کل ہی پہنچے ہیں اور ہمارے لوگوں سے ملاقاتیں کر رہے ہیں۔ میری ان سے آج شام کو ملاقات ہو گی۔‘‘

رحمان ملک نے تھریسہ مے کی افغان وفد کے ساتھ ملاقات کے بارے میں پوچھے جانے والے سوال کا نفی میں جواب دیا۔
خیال رہے کہ سابق افغان صدر برہان الدین ربانی کابل میں اپنی رہائش گاہ پر ایک خودکش حملے میں ہلاک ہو گئے تھے۔ ان کی ہلاکت کے بعد افغان حکام نے پاکستان پر الزام لگاتے ہوئے کہا تھا کہ اس قتل کی منصوبہ بندی پاکستان کے قبائلی علاقوں میں ہوئی اور حملہ آور کا تعلق بھی پاکستان سے ہی تھا۔ لیکن پاکستان اس حملے سے کسی بھی قسم کے تعلق کی تردید کرتا آیا ہے۔

افغان حکام نے یہ الزام بھی عائد کیا تھا کہ پاکستانی حکام اس قتل کی تحقیقات کے لیے ان سے تعاون نہیں کر رہے۔ تاہم پاکستانی وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے اپنے دورہ کابل کے موقع پر ربانی کے قتل کی تحقیقات کے لیے ہر طرح کے تعاون کا یقین دلایا تھا۔

Pakistan Innenminister Rehman Malik

پاکستانی وزیر داخلہ رحمان ملک

صوبہ خیبر پختونخواہ میں آئی ایس آئی کے سابق سربراہ اور تجزیہ نگار بریگیڈیئر (ر) اسد منیرکا کہنا ہے کہ افغان وفد کو پاکستان پر لگائے گئے الزامات کے ٹھوس شواہد پیش کرنے ہوں گے ورنہ ان کے اس دورے سے کچھ بھی حاصل نہیں ہوگا۔

انہوں نے کہا: ’’اگر ان کے پاس ٹیکنیکل انفارمیشن ہیں جیسے کوئی بات چیت کی ریکارڈنگ ہو وہ اگر سامنے لا سکیں کیونکہ اس میں ٹیلیفون نمبر آ جاتا ہے کہ فلاں آدمی نے فلاں جگہ سے بات کی ، ہدایات دیں اور وہ آدمی بم لے کر آیا وغیرہ ۔ تو یہ (افغان وفد) پاکستانی حکام کے ساتھ بات کریں گے اور اس بات پر تبادلہ خیال کیا جائے گا کہ اس کیس کی تفتیش کو کیسے آگے بڑھائیں۔ میرے خیال میں ان کا اس سے زیادہ کوئی کردار نہیں ہوگا۔‘‘
دریں اثناء تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ افغان وفدکی پاکستان سے واپسی پر یہ بات واضح ہوسکے گی کہ اسلام آباد حکومت نے برہان الدین ربانی کے قتل کی تحقیقات کے لئے ان کے ساتھ کتنا تعاون کیا اور کیا افغان حکومت ربانی کے قتل کے حوالے سے لگائے گئے الزامات میں کسی نتیجے پر پہنچنے میں کامیاب ہوسکے گی یا نہیں۔


رپورٹ: شکور رحیم، اسلام آباد

ادارت: ندیم گِل

DW.COM

ویب لنکس