1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

دیوار برلن کا انہدام: ڈوئچے ویلے کا خصوصی تبصرہ

نو نومبر کے روز دیوار برلن کے انہدام کی بیسویں سالگرہ کی مرکزی تقریب برلن میں ہوئی جس میں بہت سے عالمی رہنماؤں نے بھی حصہ لیا۔ اس بارے میں ڈوئچے ویلے کے چیف ایڈیٹر مارک کوخ کا خصوصی تبصرہ :

default

برلن میں دیوار کے خاتمے کی بیسویں سالگرہ پورے جرمنی میں ہر جگہ منائی گئی۔ بہت سے شہری، تجزیہ نگار اور ماہرین ایسے بھی ہیں جو اُس طریقہ کار پر تنقید بھی کرتے ہیں، جس کو اپناتے ہوئے دونوں جرمن ریاستوں کا اتحاد عمل میں آیا، اور جس طرح سابقہ مشرقی جرمن ریاست کا وجود اپنے انجام کو پہنچا۔ اس کے باوجود یہ سچ ہے کہ نو نومبر کا دن جدید جرمن اور یورپی تاریخ کا ایک خوش قسمتی والا دن ثابت ہوا، ایک ایسا دن جو اس فیصلے کا مستحق ہے کہ اسے قومی تعطیل قرار دیا جائے۔

نو نومبر 1989 کےدن اتاری گئی تصویریں دیکھی جائیں تو وہ ہر کسی کے دل پر اثر کرتی ہیں، اُس دن کے واقعات کا ذاتی طور پر مشاہدہ کرنے والوں کی باتیں سنی جائیں، تو ہر کسی کے رونگٹے کھڑے ہو جاتے ہیں۔ اس روز وہ غیر منصفانہ نظام اپنے انجام کو پہنچا، اور وہ دیوار ختم ہو گئی، جنہوں نے عشروں تک ایک ہی قوم کے افراد کو دو ریاستوں میں تقسیم کئے رکھا۔ یہ نو نومبر 1989 کے روز ہی ممکن ہو سکا کہ اتحاد، آزادی اور قانون کی بالا دستی کے وہ سنہرے اصول ہر جرمن باشندے کے لئے ایک ایسا سچ ثابت ہوئے، جس کا وہ خود اپنی ذات کی حد تک بھی تجربہ کر سکتا تھا، ایک ایسا تجربہ جس میں مشرقی جرمن ریاست کے آمرانہ نظام حکومت پر عوام کی کھلے پن والے معاشرے کی خواہش غالب آ گئی۔

Deutschland Jahrestag Mauer Markierung Berlin Potsdamer Platz Mauer

دیوار برلن کا ایک محفوظ کردہ حصہ

اسی لئے آج دو عشرے بعد بھی یہ بات فراموش نہیں کی جانا چاہئے کہ یہ کام اس دور کی مغربی جرمن ریاست یا اس کے سیاستدانوں نے نہیں کیا تھا کہ دیوار برلن کا خاتمہ ممکن ہو سکا۔ یہ ہمت مشرقی جرمن ریاست کے ان شہریوں نے دکھائی، جو کئی ہفتوں تک اپنے ہی ملک کے مختلف شہروں میں کامیابی سے وسیع تر احتجاجی مظاہرے کرتے رہے۔ وہ شہری جنہوں نے لوہے اور کنکریٹ سے بنی دیوار، اور خار دار تاروں کے ساتھ کھڑی کی گئی رکاوٹیں گرانے کے لئے ایک ایسے جذبے کا مظاہرہ کیا، جسے منزل کے طور پر زیادہ شخصی آزادی، جمہوری شفافیت اور اعلیٰ سماجی اقدار کی تلاش تھی۔

بیس سال پہلے نو نومبر کے تاریخی واقعات ہی جرمن اتحاد سے لے کر آہنی پردے کے خاتمے، مشرقی یورپ میں جمہوریت کے فروغ اور مجموعی طور پر آج کی قطعی طور پر مختلف دنیا کے وجود میں آنے کا سبب بنے۔ اسی لئے اب اس فیصلے میں مزید تاخیر نہیں کی جانا چاہئے کہ نو نومبر کو جرمنی میں بالآخر قومی تعطیل قرار دے دیا جائے۔

تبصرہ : مارک کوخ / مقبول ملک

ادارت : عابد حسین