1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’دہشت گرد‘ نے آسٹریلیا سے مدد مانگ لی

ترکی میں قید آسٹریلوی شہریت کے حامل ایک مبینہ دہشت گرد نے کیبنرا حکومت سے اپیل کی ہے کہ اس پر مقدمہ آسٹریلیا میں چلایا جائے۔

ملبورن میں پیدا ہونے والا نیل پراکاش آسٹریلیا میں انتہائی مطلوب افراد کی فہرست میں شامل ہے اور وہ گزشتہ برس اکتوبر میں شام سے ترکی میں داخل ہوتے ہوئے حراست میں لیا گیا تھا۔ پراکاش کو شدت پسند تنظیم اسلامک اسٹیٹ کے لیے نئے جہادی بھرتی کرنے کے ساتھ ساتھ آسٹریلیا میں شہریوں پر دہشت گردنہ حملوں کی منصوبہ بندی کے الزامات کا سامنا بھی ہے۔

27 سالہ اس مبینہ دہشت گرد کو ترکی کی ایک جیل میں رکھا گیا ہے، جب کہ عدالت آسٹریلیا کی جانب سے اس کی حوالگی کے حوالے سے درخواستوں کی سماعت کر رہی ہے۔ ترکی میں فوج داری مقدمات کا سامنا کرنے والے پراکاش نے کیبنرا حکومت سے مدد طلب کی ہے کہ کسی طرح اسے آسٹریلیا واپس پہنچا دیا جائے اور وہ وہاں عدالت میں اپنے خلاف الزامات کا دفاع کرے۔

Syrien ein Kämpfer zündet eine IS Flagge an (picture-alliance/AP Photo/M. Hussein)

اسلامک اسٹیٹ کو کئی علاقوں میں شکست کا سامنا ہے

دوسری جانب آسٹریلیا کی وزیرخارجہ جولیا بشپ نے کہا ہے کہ پراکاش کو آسٹریلوی کونسلر حکام نے ’بنیادی تعاون‘ فراہم کیا ہے۔ ’’اگر اسے آسٹریلیا کے حوالے کیا گیا، تو میرے خیال میں اسے سنجیدہ نوعیت کے متعدد مقدمات کا سامنا کرنا ہو گا۔‘‘

خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق پراکاش نے تفتیش کاروں کو بتایا کہ اس نے شام میں ایک ڈچ جہادی خاتون سے شادی کی تھی، جس سے اس کے دو بچے ہیں اور وہ اب بھی شام ہی میں ہیں۔ تاہم پراکاش کو امید ہےکہ اس کے بچوں کو آسٹریلوی شہریت مل جائے گی۔

آسٹریلوی قانون کے مطابق اگر ماں یا باپ میں سے کوئی آسٹریلوی شہری ہو، تو ایسی صورت میں بچہ آسٹریلوی سرزمین سے باہر پیدا ہونے کے باوجود بھی آسٹریلوی شہریت کا اہل ہوتا ہے۔

اتوار کے روز حکام نے بتایا ہے کہ پراکاش سے دہشت گرد گروپ اسلامک اسٹیٹ سے متعلق خفیہ معلومات کے حصول کی کوشش کی جا رہی ہے۔ آسٹریلوی وزیراعظم میلکم ٹرن بل نے اپنے ایک حالیہ بیان میں کہا تھا کہ پراکاش گزشتہ تین برسوں سے آسٹریلیا کو انتہائی مطلوب افراد کی فہرست میں شامل تھا۔