1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

دہشت گرد لیپ ٹاپس میں بارودی مواد چھُپا سکتے ہیں، امریکا

امریکی انٹیلیجنس ایجنسیوں اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے خیال میں دہشت گرد تنظیموں نے لیپ ٹاپس اور دیگر الیکٹرانک آلات کے اندر بارودی مواد چھُپانے کے طریقے ڈھونڈ نکالے ہیں۔

یہ تفصیلات جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے اور فرانسیسی نیوز ایجنسی اے ایف پی نے جمعے کے روز منظرِ  عام پر آنے والی امریکی رپورٹوں کے حوالے سے بتائی ہیں۔ ڈی پی اے کے مطابق یہ نئی تفصیلات امریکا اور برطانیہ کے گزشتہ ہفتے کے اُن نئے اعلانات کی وضاحت کرتی ہیں، جن میں مشرقِ وُسطیٰ اور افریقہ کے کچھ ممالک سے آنے والی پروازوں پر مسافروں کو اپنے دستی سامان میں لیپ ٹاپس اور عام موبائل فون سے بڑے سائز کے الیکٹرانک آلات لے جانے سے منع کیا گیا تھا۔

امریکی ٹی وی چینل سی این این  اور دیگر امریکی نشریاتی اداروں نے امریکا کے وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف بی آئی اور قانون نافذ کرنے والے دیگر اداروں کے حوالے سے بتایا ہے کہ دستی سامان میں لیپ ٹاپس کی پابندی کا فیصلہ گزشتہ چند مہینوں کے دوران اکٹھی کی جانے والی انٹیلیجنس معلومات کی بناء پر کیا گیا تھا۔

بتایا گیا ہے کہ دہشت گرد تنظیموں نے ہوائی اڈوں پر جانچ پڑتال کے لیے استعمال ہونے والے آلات حاصل کر لیے تھے۔ یہ تنظیمیں اپنے اُن طریقوں کو جانچنا چاہتی تھیں، جن کا مقصد لیپ ٹاپس اور دیگر الیکٹرانک آلات میں بارودی مواد کو چھُپانا تھا۔ یہ تنظیمیں غالباً یہ جانچنا چاہتی تھیں کہ کیا ہوائی اڈوں پر نصب نظام اُن کی طرف سے الیکٹرانک آلات میں چھُپائے گئے بارودی مواد کو جانچ پاتے ہیں یا نہیں۔

China Shanghai Pudong International Airport Sicherheitscheck (picture-alliance/Imaginechina)

دہشت گرد جاننا چاہتے تھے کہ کیا ہوائی اڈوں پر نصب نظام اُن کی طرف سے الیکٹرانک آلات میں چھُپائے گئے بارودی مواد کو جانچ پاتے ہیں یا نہیں

ہوم لینڈ سکیورٹی کے محکمے نے ان نیوز رپورٹوں کی تصدیق تو نہیں کی تاہم جواب میں ڈی پی اے کو ایک ای میل روانہ کی ہے۔ اس ای میل میں کہا گیا ہے:’’اصولی طور پر ہم مخصوص انٹیلیجنس معلومات کو کھلے عام زیرِ بحث نہیں لاتے البتہ انٹلیجنس معلومات کے تجزیے سے ہمیں پتہ چلا ہے کہ دہشت گرد گروپ مسافر بردار طیاروں کو  ہدف بنانے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہیں اور اس میں الیکٹرانک آلات میں رکھ کر بارودی مواد اسمگل کرنا بھی شامل ہے۔‘‘

ہوم لینڈ سکیورٹی کے محکمے نے اکیس مارچ کو فضائی کمپنیوں کو اپنی نئی پالیسی کی تفصیلات سے آگاہ کیا تھا۔ اس پالیسی کے تحت مشرقِ وُسطیٰ کے آٹھ ممالک کے دس ہوائی اڈوں سے امریکا جانے والے مسافروں پر یہ پابندی لگائی گئی تھی کہ وہ اپنے دستی سامان میں لیپ ٹاپس اور بڑے سائز کے الیکٹرانک آلات لے کر نہیں جا سکتے۔ بعد ازاں اُسی روز برطانیہ نے بھی اس سے ملتی جلتی پالیسی کا اعلان کیا تھا۔

فضائی سفر سے متعلق بین الاقوامی انجمن IATA نے امریکا اور برطانیہ کی طرف سے عائد کی گئی ان پابندیوں کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔