1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

دہشت گردی کے خلاف جنگ، پاکستان میں پولیس کی تنخواہوں میں اضافہ

اکتوبر2001 میں دہشت گردی کے خلاف متنازعہ جنگ کے آغاز نے پاکستان کو رفتہ رفتہ جن حالات سے دوچار کیا وہ اب ملک کی سلامتی اور اقتصادی بقاء کے لئے ایک بہت بڑا چیلنج بن چکے ہیں۔

default

پولیس ٹریننگ سینٹر مناواں پر عسکریت پسندوں کے حملے میں ہلاک ہونے والے پولیس اہلکاروں کو سلامی پیش کی جارہی ہے

ان برسوں کے دوران نہ تو جنرل پرویز مشرف اور نہ ہی نئی حکومت ان چیلنجوں سے نمٹنے کے لئے کوئی مربوط پالیسی اختیار کرسکی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اس وقت پاکستان میں نہ تو قومی دفاعی پالیسی اور نہ ہی کوئی قومی سلامتی پالیسی کا وجود ہے ۔مشیر داخلہ رحمان ملک کا البتہ دعویٰ ہے کہ جلد ہی اہم اداروں کے تعاون سے ایسی قومی سلامتی پالیسی تشکیل دی جائے گی جس کی مدد سے ملک میں بتدریج پھیلتی انتہاء پسندی اور قبائلی علاقوں میں موجود 10,000 ملکی اور غیر ملکی دہشت گردوں سے نمٹنے میں مدد ملے گی۔

Anschlag in Pakistan

تربیت یافتہ اور منظم دہشت گردوں کے حملوں کی وجہ سے پولیس کی تربیتی سہولتوں میں بھی اضافہ کیا جا رہا ہے

یہ دعویٰ ایک ایسے وقت میں کیا جا رہا ہے جبکہ سیکیورٹی خطرات میں کئی گنا اضافے کے باوجود ملک بھر میں پولیس کی تعداد میں ایک گنا اضافہ بھی نہیں ہوا اور آج بھی سترہ کروڑ سے زائد کی آبادی کے ملک میں پولیس فورس کی تعداد چار لاکھ سے بھی کم ہے۔ موجودہ صورتحال میں واحد خوش کن امر صوبہ سندھ کے بعد صوبہ سرحد میں اور پنجاب میں پولیس کی تنخواہوں میں 100 فیصد اضافے کا تازہ ترین اعلان ہے علاوہ ازیں امریکی امداد سے نیم فوجی فرنٹیئرکور جوکہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پیش پیش ہے، کے تقریباً 57 ونگز کی تنخواہوں میں بھی اضافے کے ساتھ ساتھ ان کی تربیتی سہولتوں کو بھی بہتر بنانے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔

خیال رہے کہ نیم فوجی اور پولیس فورس کی تنخواہوں اور ان کی شرائط کار کو بہتر بنانے کے حوالے سے امریکہ، برطانیہ اور بعض دوسرے مغربی ممالک نے کلیدی کردار ادا کیا ہے تاہم اب دیکھنا یہ ہے کہ بہتر حالات کار کے بعد سیکورٹی فورسز کو مربوط اور مؤثر انداز میں استعمال کرنے کے لئے قومی سلامتی پالیسی کے ساتھ ساتھ قومی دفاعی پالیسی کب تک تشکیل پاتی ہے۔