1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

NRS-Import

دہشت گردی کے خلاف جنگ: توجّہ کا مرکز پاکستان

بین الاقوامی سیاسی تجزیہ نگار اس بات پر خاصی حد تک متفق نظر آتے ہیں کہ آنے والے دنوں میں امریکہ عراق کے بجائے اپنی توجّہ افغانستان پر مرکوز کرے گا اور اس تناظر میں پاکستان کی اہمیت میں اضافہ متوقع ہے۔

default

پاکستان دہشت گردی کا شکار ہے: پاکستانی صدر آصف علی زرداری

یہ اہمیت پاکستان کے مفاد میں ہے یا اس کے لیے باعثِ تشویش، یہ آنے والا وقت ہی بتا سکتا ہے، مگر بعض حلقوں کی رائے میں کچھ حد تک افغانستان سے متعلق امریکی پالیسی میں تبدیلی کے پاکستان پر منفی اثرات سامنے آنا شروع ہوچکے ہیں۔ حال ہی میں اسلام آباد کے فائو اسٹار ہوٹل میریٹ میں خوفناک خود کش حملہ ان حلقوں کی رائے میں اسی جانب اشارہ کرتا ہے۔

Pakistan nach dem Anschlag in Islamabad Hotel

درالحکومت اسلام آباد کے عین قلب میں ہوٹل میریٹ پر خودکش حملے نے پورے ملک کو ہلا کر رکھ دیا ہے


بعض امریکی تھنک ٹینکس، دفاعی امور کے ماہرین، سیاستدان اور یہاں تک کے ریٹائرڈ اور حاضر جرنیل یہ بات تواتر کے ساتھ کہہ رہے ہیں کہ پاکستان کے شِمال مغربی صوبہِ سرحد کے قبائلی علاقوں میں عسکریت پسندی کا خاتمہ کیے بغیر افغانستان میں امن قائم نہیں کیا جا سکتا۔ جہاں پاکستان کی نو منتخب جمہوری حکومت نے ان علاقوں میں طالبان عسکریت کا خاتمہ کرنے کے عزم کا اعادہ کیا ہے وہاں امریکی حکومت خود بھی اس مسئلے پر پاکستانی حکومت کی مدد کرنے کی خواہاں دکھائی دیتی ہے۔ مگر دوسری جانب افغانستان سے ملحق پاکستانی سرحد کے اندر مبینہ امریکی فضائی اور زمینی حملے کیا پاکستان کی نئی حکومت کی مدد کررہے ہیں یا پھر اس کی داخلی مشکلات میں اضافہ ہوتا دکھائی دے رہا ہے؟

USA mit neuer Fahndunsoffensive in Afghanistan

امریکی حکومت موسمِ بہار تک افغانستان میں مزید فوجی روانہ کرنے کا فیصلہ کرچکی ہے


امریکی وزیرِ دفاع رابرٹ گیٹس یہاں تک کہہ چکے ہیں کہ امریکہ عسکریت پسندوں کا تعاقب کرنے کا مجاز ہے اور اقوامِ متحدہ ’ہاٹ پرسوٹ‘ کی اجازت دیتی ہے۔ دوسری جانب پاکستان کی فوج اور سولین حکومت کے اعلیٰ عہدیدار کئی بار یہ کہہ چکے ہیں کہ پاکستان کی سرحدوں کی خلاف ورزی کرنے کی وہ امریکہ کو بھی اجازت نہیں دے سکتے۔ غیر مصدقّہ اطلاعات کے مطابق گزشتہ روز افغان سرحد کے قریب پاکستانی فوجیوں نے مبینہ طور پر پاکستانی سرحد میں داخل ہونے والے امریکی ہیلی کاپٹروں پر فائرنگ بھی کی۔ اس پوری صورتِ حال میں پاکستان اور امریکہ کے درمیان تعلقات تناؤ کا شکار دکھائی دیتے ہیں۔

Sicherheitskonferenz in München - Robert Gates

امریکہ دہشت گردوں کا تعاقب کرنے کا مجاز ہے: امریکی وزیرِ دفاع رابرٹ گیٹس


دوسری جانب داخلی طور پر بھی پاکستان کو جہاں عسکریت پسندوں سے خطرہ ہے وہاں عام افراد بھی امریکہ کی پاکستان کے اندر مبینہ کارروائیوں سے نالاں دکھائی دیتے ہیں۔ قبائلی علاقوں کے باشندے تو اس صورتِ حال سے سخت بد دل بھی ہیں اور مسائل کا شکار بھی۔ لاکھوں کی تعداد میں ان علاقوں سے افراد نقل مکانی کرنے پر مجبور ہو چکے ہیں اور پشاور کے مضافات میں یہ افراد انتہائی مشکل سے گزر بسر کررہے ہیں۔ بعض پاکستانی اور بین الاقوامی غیر سرکاری اداروں کا موقف ہے کہ اگر ان افراد کی حالتِ زار پر توجّہ نہ دی گئی تو یہ نہ صرف یہ کہ جرائم کی طرف راغب ہوسکتے ہیں بلکہ بعض تو عسکریت پسندوں کا ساتھ دینے پر بھی راضی ہو سکتے ہیں۔ یہ ایسا ہی ہے جیسا کہ اسّی کی دہائی میں سوویت یونین کے خلاف افغان جہاد اور نوّے کی دہائی میں سوویت یونین کے انہدام کے بعد ہوا تھا۔

Pakistan Selbstmordanschlag Wahl

قبائلی علاقوں میں جنگ میں بڑی تعداد میں عام افراد کے ہلاک ہونے کی بھی اطلاعات ہیں


پاکستان کی سیاست پر گہری نظر رکھنے والے افراد سمجھتے ہیں کہ پاکستان پیپلز پارٹی کی حکومت کو خارجہ پالیسی پر بالعموم اور دہشت گردی کے خلاف جنگ پر بالخصوص قومی سطح پر مشاورت کرنی چاہیے اور ملک کی تمام سیاسی جماعتوں کو اکھٹّا کرکے کسی ایک پالیسی کو اپنانا چاہیے۔ مختلف سطحوں پر مختلف پالیسیوں کا پاکستان متحمّل نہیں ہوسکتا ورنہ بعض بین الاقولامی اور پاکستانی مبصّر تو پاکستان کو اگلا عراق تک قرار دے چکے ہیں۔