1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

دہشت گردی ایکٹ میں ترمیم، فوری اثر صوبہ سرحد پر

انسداد دہشت گردی آرڈیننس میں کی گئی ترامیم کا فوری اطلاق صوبہ سرحد کے زیر انتظام قبائلی علاقوں اور مالاکنڈ ڈویژن پر ہوگا۔

default

اس قانون کے تحت دہشت گردوں کی حمایت اور تشہیر کرنے والے کسی بھی شخص یا تنظیم بشمول ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کےخلاف خصوصی عدالتوں میں مقدمے چلائے جا سکیں گے۔ اس کے علاوہ گرفتار شدہ دہشت گردوں سے تفتیش کےلئے جسمانی ریمانڈ کی مدت 90 دن تک بڑھا دی گئی ہے اور یہ کہ ملزموں کا ضلعی پولیس افسر کے سامنے اقبالی بیان قانونی ثبوت کے طور پر مانا جائے گا۔

قائم قام اٹارنی جنرل شاہ خاور نے انسداد دہشت گردی آرڈیننس 2009ء میں ترامیم کو سوات آپریشن میں گرفتار کئے گئے افراد پر مقدموں کے آغاز کےلئے ناگزیر قرار دیتے ہوئے کہا: ’’وفاق کے جتنے قوانین ہیں ان کا اطلاق FATA اور PATA پر نہیں ہوتا، اس لئے حکومت پاکستان نے انسداد دہشت گردی آرڈیننس کو صوبائی سطح پر قبائلی علاقوں پر لاگو کر دیا ہے اس کا بنیادی مقصد سوات سے گرفتار دہشت گردوں اور آئندہ گرفتار ہونے والے عسکریت پسندوں کی اس قانون کے تحت تفتیش کرنا ہے۔‘‘

Verhaftete Lashkar-e-Toiba Mitglieder in Pakistan

اس قانون کے تحت سوات آپریشن میں گرفتار عسکریت پسندوں پر مقدمات قائم کئے جا سکیں گے

خیال رہے کہ خاص طور پر عسکری ادارے سوات آپریشن کے دوران گرفتار کئے گئے تقریباً اڑھائی ہزار عسکریت پسندوں اور دہشت گردوں کے خلاف قانونی کارروائی سے گریزاں تھے کیونکہ انہیں خدشہ تھا کہ گرفتار شدہ شدت پسندوں کی اکثریت موجودہ قوانین کے سقم سے فائدہ اٹھاتے ہوئے حکومت کےلئے قانونی مشکلات کھڑی کر سکتی ہے۔

دوسری طرف بعض حلقے اس تشویش کا اظہار کر رہے ہیں کہ حکومت نئی ترامیم کو ذرائع ابلاغ کی آزادی سلب کرنے کےلئے بھی استعمال کر سکتی ہے۔ تاہم اٹارنی جنرل شاہ خاور نے اس تاثر کو مسترد کرتے ہوئے کہا: ’’بہت سی شکایات اور ایسی چیزیں سامنے آتی ہیں ذرائع ابلاغ کے بعض نمائندے حد سے تجاوز کر جاتے ہیں اس کےلئے ایک قانونی حد ضرور ہوگی لیکن اس کا مطلب یہ ہرگز نہیں کہ اس قانون کی آڑ میں ذرائع ابلاغ کے ساتھ کوئی زیادتی ہوگی۔‘‘

مبصرین کے خیال میں پاکستان کو درپیش غیر معمولی مشکلات کے پیش نظر ان عناصر سے نمٹنے کےلئے قانونی ڈھانچے میں تبدیلیاں ضروری ہو گئی تھیں، جو ببانگ دہل خودکش حملوں، سرکاری اور فوجی ٹھکانوں کو نشانہ بنانے کا دعویٰ کرتے ہیں مگر موجودہ قوانین کے تحت ان کے ان دعووں کی بنیاد پر انہیں مجرم ٹھہرانا بہت مشکل ہے۔

رپورٹ : امتیازگل، اسلام آباد

ادارت : عاطف توقیر