1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

دہشت گردوں کو میڈیا اسٹار نہ بنایا جائے، ڈی ڈبلیو کا تبصرہ

جرمنی میں چند ہی روز کے اندر اندر چار مختلف طرح کے خونریز واقعات رونما ہو چکے ہیں۔ ڈی ڈبلیو کے تبصرہ نگار فیلِکس اشٹائنر کے مطابق اس خطرے کو کم کرنے کے لیے تمام شہریوں کو اپنا کردار ادا کرنا ہو گا۔

ڈوئچے ویلے کے تبصرہ نگار فیلِکس اشٹائنر لکھتے ہیں کہ وُرسبرگ سے لے کر میونخ تک اور روئٹلِنگن سے انسباخ تک میں ہونے والے حملوں کے محرکات چاہے ایک دوسرے سے کتنے ہی مختلف کیوں نہ ہوں، ان میں ایک بات مشترک ہے اور وہ یہ کہ یہ تمام واقعات نرگسیت پسندانہ ذہنیت کی عکاسی کرتے ہیں۔ یہ حملہ آور ایسے نرگسیت پسند تھے، جو خود کو اور اپنی سوچ کو دنیا کے لیے معیار تصور کرتے تھے۔ یہ لوگ سمجھتے تھے کہ انہیں دوسروں کی زندگی اور موت کا فیصلے کرنے کا حق حاصل ہے۔

اشٹائنر مزید لکھتے ہیں کہ تشدد روا رکھنے والا کوئی بھی شخص جب صرف خود کو نقصان پہنچاتا ہے تو اسے خود کشی کا نام دیا جاتا ہے لیکن جب اس کے اقدام سے کئی ایسے دیگر افراد کو بھی نقصان پہنچے، جنہیں وہ نہ جانتا ہو تو اسے ایک ’جنونی کارروائی‘ یا پھر اگر وہ کوئی اعترافی ویڈیو پیغام چھوڑ جائے تو اسے ’دہشت گردی‘ کہا جائےگا۔ دوسری طرف ظاہر ہے کہ یہ ساری باتیں اس شخص کے لیے بے معنی ہوتی ہیں، جو اپنے کسی عزیز کی قبر پر کھڑا ہو۔

Felix Steiner

لوگوں کو آخر ان کے ناموں میں کیا دلچسپی ہے؟ علی یا یوسف؟ یا پھر ڈیوڈ یا کیوِن؟ کیا ان ناموں سے کوئی فرق پڑتا ہے؟ ، اشٹائنر

ان کے بقول ذرائع ابلاغ کے لیے بھی ان میں کوئی فرق نہیں ہونا چاہیے کیونکہ ایسے تمام واقعات نرگسیت پسندی یا خود پسندی کے ساتھ ساتھ گھناؤنے بھی ہوتے ہیں۔ بیمار ذہنیت کے مالک یہ لوگ خودکو ایک رول ماڈل کے طور پر پیش کرتے ہیں، یہ لوگ خبروں کی زینت بنتے ہیں اور، اپنی سوچ کے مطابق، اپنے ظالمانہ اعمال کے ذریعے امر ہو جاتے ہیں۔

فیلِکس اشٹائنر کے بقول عوام اور نشریاتی اداروں کو چاہیے کہ وہ کوئی بھی ایسی حرکت نہ کریں، جن سے ایسے تشدد پسند عناصر کی حوصلہ افزائی ہوتی ہو۔ اس سلسلے میں میڈیا کو اپنا بھی ناقدانہ جائزہ لیتے ہوئے یہ پوچھنا چاہیے: ہم بار بار ایسا کیوں کرتے ہیں؟ ہم ان کے نام کیوں بتاتے ہیں؟ ان کی تصاویر کیوں شائع ہوتی ہیں؟ نشریاتی ادارے وجہ بتاتے ہیں کہ عوام ان کے بارے میں جاننا چاہتے ہیں۔ کیا واقعی ایسا ہی ہے؟ یا پھر یہ محض ایک بہانہ ہے؟

تبصرہ نگار اشٹائنر مزید لکھتے ہیں کہ لوگوں کو آخر ان کے ناموں میں کیا دلچسپی ہے؟ علی یا یوسف؟ یا پھر ڈیوڈ یا کیوِن؟ کیا ان ناموں سے کوئی فرق پڑتا ہے؟ پرانے زمانے میں ہلاک کیے جانے والے حملہ آوروں کو بے نام ہی دفن کر دیا جاتا تھا جبکہ دیگر جرائم پیشہ افراد کو تہہ خانوں میں بند کر کے بھلا دیا جاتا تھا۔ تاہم آج کل کے حالات میں اس طرح کے طرز عمل کو غیر انسانی قرار دیا جاتا ہے۔ لیکن موجودہ دور میں قاتلوں اور حملہ آوروں کو میڈیا اسٹار بنانا بھی کم غیر انسانی نہیں ہے۔ اشٹائنر کے بقول ان قاتلوں کی نقل کرنے والے بھی لوگوں کو قتل کر تے رہیں گے۔ اس وجہ سے اس طرح کے قاتلوں کو برا سمجھتے ہوئے انہیں سزائیں دینا بہت ضروری ہے۔

ملتے جلتے مندرجات