1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

دنیا بھر کے آرتھوڈوکس کلیساؤں کا ہزار سال بعد پہلا اجلاس

دنیا بھر کے آرتھوڈوکس مسیحی کلیساؤں کے اعلیٰ ترین رہنماؤں کا ایک ہزار سال بعد ہونے والا پہلا اجلاس یونانی جزیرے کرِیٹ کے شہر ہیراکلیئن میں شروع ہو گیا ہے۔ ایسا آخری کلیسائی اجلاس پچھلی مرتبہ 1054ء میں ہوا تھا۔

Panorthodoxes Konzil auf Kreta

جونانی جزیرے کرِیٹ کے شہر ہیراکلیئن میں شروع ہونے والی ’پین آرتھوڈوکس کونسل‘ کے شرکاء کی ایک تصویر

یونانی دارالحکومت ایتھنز سے اتوار انیس جون کو ملنے والی نیوز ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹوں کے مطابق مسیحیت کی دو ہزار سال سے زائد پرانی تاریخ میں ایک حوالے سے یہ اجلاس دراصل اپنی نوعیت کا صرف دوسرا اجتماع ہے۔

اس سے قبل اسی طرح کا ایک اجتماع 962 برس قبل سن 1054ء میں ہوا تھا اور اس میں مسیحی عقیدہ باقاعدہ طور پر دو حصوں میں تقسیم ہو گیا تھا، جن میں سے ایک مسلک کیتھولک کہلایا اور دوسرا آرتھوڈوکس۔ مسیحیت کی تاریخ میں قریب ایک ہزار سال پہلے کے اس واقعے کو ’عظیم تقسیم‘ کی اصطلاح کے ساتھ یاد کیا جاتا ہے۔

Heraklion میں ہونے والے اس عالمی آرتھوڈوکس کلیسائی اجلاس کی ایک خاص بات یہ ہے کہ اس میں آرتھوڈوکس عقیدے کی کئی اہم شاخوں کے اعلیٰ ترین نمائندے حصہ نہیں لے رہے، جس کی وجہ سے اس ’آرتھوڈوکس کونسل‘ کہلانے والے اجلاس کی کامیابی کے بارے میں شروع سے ہی شکوک و شبہات ظاہر کیے جانے لگے ہیں۔

قابل ذکر بات یہ بھی ہے کہ اس اجلاس کے لیے آرتھوڈوکس کلیسا کی زیادہ سے زیادہ شاخوں کو مدعو کرنے اور ’کونسل‘ کی تفصیلات طے کرنے میں بھی نصف صدی سے زائد کا عرصہ لگا۔

اے ایف پی نے لکھا ہے کہ اس اجلاس کے آغاز پر شرکاء نے اتوار کے روز آرتھوڈوکس پینٹی کوسٹ (Orthodox Pentecost) منایا، جو دراصل ایک ضیافت لیکن اس مسیحی عقیدے کی اعلیٰ ترین مذہبی تقریب ہوتی ہے۔ یہ اجتماع 27 جون تک جاری رہے گا۔

Panorthodoxes Konzil auf Kreta

قریب ہزار سال بعد منعقد ہونے والی اس ’کونسل‘ کے شرکاء چند روز قبل ہی یونان پہنچنا شروع ہو گئے تھے

ایتھنز سے ملنے والی رپورٹوں میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ خود آرتھوڈوکس کلیسا کی طرف سے اس اجتماع کو ’مقدس اور عظیم کونسل‘ کا نام دیا جاتا ہے، جس دوران شرکاء اس عقیدے کے تحت شادی کرنے اور روزے رکھنے جیسے مذہبی اور سماجی امور کے سلسلے میں پائے جانے والے آپس کے اختلافات کو دور کرنے کی کوشش کریں گے۔

اس کے علاوہ یہ مشورہ بھی کیا جائے گا کہ امریکا اور آسٹریلیا جیسے جن ملکوں میں آرتھوڈوکس کیلساؤں کے پیروکاروں کی تعداد بہت کم ہے، وہاں مختلف کلیسائی انتظامی علاقوں میں آرتھوڈوکس چرچ کی متحدہ نمائندگی اور موجودگی کو کیسے یقینی بنایا جا سکتا ہے۔

اس کونسل کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ اس موقع پر ہونے والی عبادت میں یونانی صدر پاوَلوپولوس نے بھی خاص طور پر شرکت کی اور یہ ’سروس‘ یونان کے سرکاری ٹیلی وژن سے براہ راست نشر بھی کی گئی۔

ہیراکلیئن میں اس کونسل میں دیگر رہنماؤں کے علاوہ روسی آرتھوڈوکس کلیسا کے سربراہ Kyrill بھی شریک نہیں ہیں، جو قریب 130 ملین آرتھوڈوکس مسیحیوں کے مذہبی پیشوا ہیں۔ یہ تعداد دنیا بھر میں آرتھوڈوکس مسیحی آبادی کی تعداد کا نصف بنتی ہے۔

Kuba Russisch-orthodoxe Patriarch Kirill

روسی آرتھوڈوکس کلیسا کے سربراہ پیٹریآرک کِیرِل جو اس اجلاس میں شریک نہیں ہوئے

جو دیگر کلیسائی رہنما اس کونسل میں شامل نہیں ہوئے، وہ بلغاریہ اور جارجیا کے ان آرتھوڈوکس کلیساؤں کے سربراہان ہیں، جو دونوں ہی روسی آرتھوڈوکس چرچ کے بہت قریب سمجھے جاتے ہیں۔

مسیحیت کے کئی ذیلی شاخوں میں تقسیم آرتھوڈوکس عقیدے کے پیروکاروں کی دنیا بھر میں تعداد قریب 250 ملین یا 25 کروڑ بنتی ہے۔ اس عقیدے کے روسی اور یونانی آرتھوڈوکس کلیساؤں جیسے کُل 14 ذیلی گروپ ہیں، جن میں سے مذہبی حوالے سے ہر ایک اپنی جگہ خود مختار ہے۔

عالمی سطح پر آرتھوڈوکس مسیحیت کو گزشتہ کئی عشروں کے دوران سابق سوویت یونین میں آنے والی بڑی تبدیلیوں، پھر سوویت یونین کی تقسیم سے پیدا ہونے والی صورت حال اور پچھلے کئی برسوں کے دوران مشرق وسطیٰ میں پیش آنے والے حالات و واقعات نے ہلا کر رکھ دیا ہے۔ اس کے علاوہ اس کلیسا کو مختلف ملکوں میں قومی اور سیاسی سطح پر بار بار کئی طرح کے مسائل کا سامنا بھی رہتا ہے۔

DW.COM