1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

وجود زن

دس سال کی بچیاں جبری شادی پر مجبور: سیو دی چلڈرن

بچوں کی بہبود کے لیے کام کرنے والی غیر سرکاری تنظیم ’سیو دی چلڈرن‘ کی تازہ رپورٹ کے مطابق دس سال کی عمر کی بچیوں کو جبری شادی پر مجبور کیا جاتا ہے۔

Bangladesch Kinderheirat (Getty Images/A. Joyce)

کم عمری کی شادیاں بچیوں کو سب سے بنیادی حقوق یعنی تعلیم حاصل کرنے، ترقی کرنے اور بچپن گزارنے سے محروم کرتی ہیں

رپورٹ کے مطابق ایک اندازے کے مطابق دنیا بھر میں سات سو ملین لڑکیوں کی اٹھارہ سال سے کم عمر میں شادی کر دی گئی۔

اس جائزے میں اقوامِ متحدہ کے اعداد و شمار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ سن دو ہزار پچاس تک خدشہ ہے کہ قریب ایک اعشاریہ دو بلین نا بالغ لڑکیوں کو جبری شادی پر مجبور کیا جائے گا۔ 

سیو دی چلڈرن کی سربراہ سوزانا کروگر نے اپنے ایک بیان میں کہا،’’ کم عمری کی شادیاں بچیوں کو سب سے بنیادی حقوق یعنی تعلیم حاصل کرنے، ترقی کرنے اور بچپن گزارنے سے محروم کرتی ہیں اور اس طرح اِن بچیوں کو ہونے والے نقصان کی تلافی کبھی ممکن نہیں ہوتی۔‘‘

 'ایوری لاسٹ گرل‘ کے عنوان سے شائع ہونے والی اس رپورٹ میں یہ بھی تحریر ہے،’’ اس طرح لڑکیوں کے ساتھ غلط برتاؤ اور جنسی طور پر منتقل ہونے والی بیماریوں کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔‘‘ بچوں کی بہبود  کے لیے کام کرنے والی تنظیم ’سیو دی چلڈرن‘ نے ایک سو چوالیس ممالک کو اُس فہرست میں شامل کیا ہے جہاں کم عمری کی شادی، تعلیم، نو عمری کے حمل اور زچگی کے دوران اموات کے حوالے سے شرح زیادہ ہے۔

Bangladesch Kinderheirat (Getty Images/A. Joyce)

رپورٹ کے مطابق ایک اندازے کے مطابق دنیا بھر میں سات سو ملین لڑکیوں کی اٹھارہ سال سے کم عمر میں شادی کر دی گئی

 رپورٹ کے مطابق سب صحاراافریقہ کا ریکارڈ کمسن لڑکیوں کے ساتھ سلوک کے تناظرمیں بد ترین ہے۔ اس کے ساتھ ہی کم سن دلہنوں کے حوالے سے افغانستان، یمن، بھارت،صومالیہ اور افغانستان کے نام آتے ہیں۔ 

 سیو دی چلڈرن کی رپورٹ میں مغربی ممالک کا ذکر بھی کیا گیا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ امریکا اور برطانیہ میں کم عمری کی زچگی کی شرح غیر متناسب طور پر زیادہ ہے۔ علاوہ ازیں جرمنی میں بچپن کی شادیوں کو نسبتاﹰ عام قرار دیا گیاہے۔