1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

داعش کے پنجے سے نکل آنے والوں کی مددگار پیش مرگہ فورسز

کرد پیش مرگہ فورسز داعش کے زیرقبضہ علاقوں سے فرار ہونے میں کامیاب ہو جانے والے افراد کی مدد میں مصروف ہیں۔ بعشیقہ کے علاقے میں کرد فورسز کس طرح ان بے گھر افراد کی مدد کر رہی ہیں؟

بعشیقہ کے پہاڑی سلسلے سے گزشتہ ایک ہفتے کے دوران تقریباﹰ چار سو افراد کرد فورسز کے زیرقبضہ علاقوں میں داخل ہوئے۔ پیش مرگہ جنرل بہرام عارف یاسین کے مطابق ان افراد کا تعلق موصل کر نواحی دیہات سے ہے، جب کہ کچھ موصل شہر سے بھی ہجرت پر مجبور ہوئے ہیں۔

جنرل یاسین کا کہنا ہے کہ شدت پسند تنظیم داعش روایتی جنگ نہیں لڑتی بلکہ وہ مقامی آبادی کو خودکش حملوں یا کار حملوں کے لیے استعمال کرتی ہے۔ ’’داعش کے حوصلے اب پست ہو چکے ہیں۔ اب وہ مضبوط نہیں رہی۔‘‘

جنرل یاسین نے بتایا کہ تربیت یافتہ جہادیوں کی کمی کی وجہ سے اس شدت پسند تنظیم کو دیہات سے اپنے عسکریت پسند موصل شہر کے دفاع کے لیے اگلے مورچوں پر بھیجنا پڑ رہے ہیں۔

موصل شہر کے ایک قریبی دیہہ تِلارا سے ہجرت کر کے کرد پیش مرگہ فورسز کے زیرقبضہ علاقوں کا رخ کرنے والے قُصائی صباح کا کہنا ہے کہ اب دیہات میں داعش کے عسکریت پسند موجود نہیں ہیں۔ صباح اب یہ علاقہ چھوڑ کر اپنی بیوی اور چار بچوں کے ساتھ بردراش کی مہاجر بستی میں آن پہنچا ہے۔

Weibliche Peschmerga - Einheiten in der kurdisch-irakischen Armee

پیش مرگہ فورسز اسلامک اسٹیٹ کے خلاف برسرپیکار ہیں

صباح کا بھائی گزشتہ پندرہ ماہ سے اسی کیمپ میں آباد تھا اور اسی نے یہاں موجود پیش مرگہ فورسز سے رابطہ کیا۔ اس طرح جس رات صباح نے اپنے گاؤں سے رخت سفر باندھا، اسی شب پیش مرگہ فوج کو بھی بتا دیا گیا اور یوں صباح بخیر و عافیت اس خیمہ بستی میں داخل ہو پائے۔

صباح نے فرار کے اس خوف ناک سفر کی بابت ڈی ڈبلیو سے بات چیت میں کہا، ’’ہم گھر سے ایک زیرتعمیر عمارت میں پہنچے۔ یہاں پانچ خان دانوں نے جمع ہو کر، پیش مرگہ کی جانب سے فون کا انتظار کیا۔ ہم تمام افراد بعشیقہ کی پہاڑیوں کے قریب ایک گاؤں میں کئی گھنٹے تک ٹھہرے رہے۔ جب اندھیرا ہو گیا، تو ہمیں فون کیا گیا اور بتایا گیا ہے کہ اب راستہ محفوظ ہے، اس لیے فوراﹰ نکل پڑو۔‘‘

یہ تمام افراد کئی گھنٹوں تک پیدل چلتے رہے، ’’ان دیہات میں ہمیں معلوم تھا کہ بارودی سرنگیں موجود نہیں ہیں۔ مگر ہمیں فتیحہ کے گاؤں اور پہاڑوں کے درمیان کے علاقے سے متعلق معلوم نہیں تھا۔ پیش مرگہ فورسز نے پہاڑوں سے ہماری جانب ٹارچ کی روشنی کے ذریعے اچھال اچھال کر، ہمیں محفوظ راستہ سے باخبر کیا۔ ہم خوف زدہ تھے، مگر ہمیں پیش مرگہ پر بھروسہ تھا۔ ہم نے ان کے بتائے ہوئے راستہ پر سفر کیا۔ انہیں معلوم تھا کہ کون کون راستہ راستہ محفوظ ہے۔ ہاں مگر اگر داعش کے جنگجو اس دوران ہمیں دیکھ لیتے، تو وہ ہم سب کو قتل کر دیتے۔‘‘