1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

داعش کے خلاف عالمی اتحاد میں جرمنی بھی شریک ہو سکتا ہے

انتہا پسند تنظیم داعش کے خلاف جاری عالمی کارروائیوں میں حصے دار بنتے ہوئے جرمنی بھی اپنے بارہ سو فوجی مشرق وسطیٰ میں تعینات کر سکتا ہے۔ تاہم یہ دستے بنیادی طور پر جاسوسی اور مشاورت کا کام کریں گے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے جرمن فوج کے انسپکٹر جنرل فولکر ویکر کے حوالے سے بتایا ہے کہ برلن حکومت رواں برس کے اواخر میں شام میں فوجی تعینات کرنے کے حوالے سے پارلیمنٹ سے اجازت طلب کرنے کی کوشش کرے گی۔ بتایا گیا ہے کہ ان فوجیوں کی تعداد بارہ سو تک ہو سکتی ہے۔ یہ امر اہم ہے کہ موجودہ وقت میں جرمن فوجیوں کی اتنی بڑی تعداد کسی غیر ملک میں تعینات نہیں ہے۔

فولکر ویکر نے جرمن روزنامے ’بلڈ‘ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا، ’’فوجی نکتہ نظر سے طیاروں اور بحری جہازوں کو آپریٹ کرنے کے لیے بارہ سو فوجیوں کی ضرورت ہے۔‘‘

جرمن فوج کے اعلیٰ ترین عہدے دار فولکر کے مطابق جرمن پارلیمنٹ سے اس مشن کی اجازت ملنے کے بعد فوری طور پر فوجیوں کی تعیناتی کا عمل شروع کر دیا جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ رواں برس کے اواخر تک اس حوالے سے حتمی فیصلہ کر لیا جائے گا۔

فولکر ویکر نے البتہ یہ بھی کہا کہ داعش کے خلاف جاری امریکی عسکری اتحاد کی فضائی کارروائیوں میں فی الحال جرمن فوجی شمولیت ضروری نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ جہادیوں کے خلاف عالمی اتحاد میں جرمنی کی جاسوسی اور خفیہ معلومات جمع کرنے کی صلاحیت اہم ثابت ہو سکتی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس مشن کی حتمی تفصیلات ابھی طے کی جانا باقی ہیں۔

پیرس حملوں کے بعد فرانسیسی صدر فرانسوا اولانڈ نے عالمی سطح پر اپیل کی تھی کہ داعش کے خلاف کارروائیوں میں اس ان کی مدد کی جائے۔ دیگر ممالک کے ساتھ ساتھ جرمنی نے بھی پیرس کو ہر ممکن مدد فراہم کرنے کا عندیہ دیا تھا۔ جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے حال ہی میں فرانسیسی صدر سے اپنی ملاقات میں یہ یقین بھی دلایا تھا کہ داعش کے خلاف عسکری مدد بھی فراہم کی جا سکتی ہے۔

Generalinspekteurs der Bundeswehr General Volker Wieker

فولکر ویکر کے بقول داعش کے خلاف جاری امریکی عسکری اتحاد کی فضائی کارروائیوں میں فی الحال جرمن فوجی شمولیت ضروری نہیں

گزشتہ ہفتے ہی جرمن حکومت نے مالی میں سرگرم جہادیوں کے خلاف جاری عالمی کارروائی میں شرکت کا اعلان کرتے ہوئے اپنے ساڑھے چھ سو فوجی اس افریقی ملک میں تعینات کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

جرمن وزیر دفاع ارسلا فان ڈیئر لاین کے بقول مالی میں جرمن فوجیوں کی تعیناتی کا فیصلہ دراصل وہاں پہلے سے موجود فرانسیسی فوجیوں کو تعاون فراہم کرنے کی غرض سے کیا گیا۔ جرمن فوج وہاں فرانس کی سرپرستی میں فعال بین الاقوامی امن فوجی مشن کو تعاون فراہم کرے گی۔