1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’داعش‘ کی 16 سالہ جرمن دلہن کو عراق میں سزائے موت کا سامنا

عراقی وزیر اعظم نے کہا ہےکے یہ عدالت فیصلہ کرے گی کے نو عمر جرمن لڑکی لِنڈا ڈبلیو کو داعش سے تعلق رکھنے اور شمولیت کے جرم کی پاداش میں سزائے موت دی جا سکتی ہے یا نہیں۔

عراقی وزیر اعظم حیدر العبادی نے خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کو ایک انٹرویو کے دوران بتایا کہ گزشتہ برس موسم گرما میں جرمنی کی مشرقی ریاست سیکسنی سے تعلق رکھنے والی 16 سالہ لِنڈا ڈبلیو نے انٹرنیٹ کے ذریعے اسلامک اسٹیٹ یا داعش سے وابستگی اختیار کر لی تھی۔ العبادی کے مطابق، ’’وہ لڑکی اس وقت بغداد کی ایک جیل میں قید ہے اور  اس کی قسمت کا فیصلہ عدالت کے ہاتھ میں ہے اور عراقی عدلیہ اس بات کا تعین کرے گی کہ آیا اس کو سزائے موت کا سامنا کرنا پڑے گا یا نہیں۔‘‘

انہوں نے مزیدکہا، ’’آپ جانتے ہی ہیں کہ بعض قوانین کے تحت کم عمر نوجوان  اپنے اعمال کے خود ذمہ دار ہوتے  ہیں اور خاص طور پر جس میں کئی معصوم لوگوں کے قتل جیسی مجرمانہ سرگرمی شامل ہو۔‘‘

عراقی فورسز کی جانب سے رواں برس جولائی کے مہینے میں موصل کے ایک گھر پر چھاپے کے دوران  تہہ خانے سے یہ نوعمر لڑکی  ملی تھی۔ عراقی پولیس کے خفیہ اداروں نے نیوز ایجنسی اے پی کو بتایا کے یہ لڑکی اسلامک اسٹیٹ کے ایک گروپ کے ساتھ کام کرتی رہی ہے۔

عراقی وزیر اعظم حیدر العبادی نے بتایا کے عراقی فورسز نے موصل آپریشن کے دوران ایک ہزار تین سو تینتیس عورتوں اور بچوں کو حراست میں لیا۔ انہوں نے بتایا کہ ان کی حکومت کی اولین کوشش ہے کہ دیگر ممالک سے تعلق رکھنے والی خواتین اور بچوں ان کے ممالک کے حوالے کیا جائے: ’’یہ ہماری ترجیح نہیں کہ ان خواتین اور بچوں کو  اپنے ملک میں رکھیں جنہیں ان کے ممالک لینے کو تیار ہیں۔‘‘

عراقی حکام نی اے پی کو بتایا کے لِنڈا سینکڑوں دیگر غیر ملکی خواتین کے ساتھ بغداد میں موجود ہے اور اس پر شبہ ہے کہ اس نے دہشت گرد تنظیم داعش میں شمولیت اختیار کی تھی۔ ان خواتین میں فرانس، بیلجیئم، شام اور ایران سے تعلق رکھنے والی خواتین بھی شامل ہیں۔

جولائی میں ایک جرمن صحافی کو دیے گئے انٹرویو میں لِنڈا نے بتایا کے اسے عراق جانے پر افسوس ہے۔ اس نے کہا کی وہ جب جرمنی سے اپنا گھر چھوڑ کر نکلی تھی تو اس وقت اس کی عمر 15 برس تھی۔ اس کا مزید کہنا تھا، ’’میں اپنے گھر اور اپنے خاندان کے پاس واپس جانا چاہتی ہوں۔ میں جنگ، اسلحے اور اس شور سے دورجانا چاہتی ہوں۔‘‘

Irak | Frau mit Kind in einem Lager in der Nähe von Mossul (picture-alliance/AP Photo/B. Szlanko)

عراقی حکام کے مطابق لِنڈا سینکڑوں دیگر غیر ملکی خواتین کے ساتھ بغداد میں زیر حراست ہے

جرمن  وزارت خارجہ نے اس ضمن میں کہا ہے کہ عراق میں مقید  لِنڈا اور تین مزید خواتیں کو  واپس لانے پر کام جاری ہے، تاہم ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ ان کو جرمنی لایا جائے گا یا نہیں۔ واضح رہے کہ اس وقت جرمنی اور عراق کے مابین جرائم پیشہ افراد کے تبادلے کا کوئی معاہدہ موجود نہیں ہے۔