1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

داعش کی جنگی تربیت سے یزیدی لڑکوں کا فرار

جب نو سالہ یزیدی لڑکے مُراد کو داعش کے قبضے سے نکل بھاگنے کا موقع ملا تو وہ اس کا فائدہ اٹھانے کی بجائے ہچکچاہٹ کا شکار تھا۔ یہ گروپ مراد کی والدہ کے ساتھ جنسی زیادتی کے علاوہ سینکڑوں یزیدیوں کے قتل کا مرتکب ہو چکا ہے۔

داعش کے قبضے میں 20 ماہ گزارنے والے مُراد کا ذہن اس حد تک تبدیل کیا جا چکا تھا کہ اُس نے اپنی والدہ کو بتایا کہ وہ اُس کیمپ میں ہی رہنا چاہتا ہے جہاں اسے جنگی تربیت دی جا رہی تھی تاکہ وہ اپنی برادری سے تعلق رکھنے والوں سمیت داعش کے مخالفین کو قتل کر سکے اور ان کے خلاف جنگ میں حصہ لے سکے۔

اس وقت مرُاد اپنی والدہ اور چھوٹے بھائی کے ساتھ عراق میں کرُدوں کے کنٹرول والے علاقے میں محفوظ ہے۔ مراد کی والدہ نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ اُسے اپنے بیٹے کو فرار ہونے پر راضی کرنے کے لیے بہت کوشش کرنا پڑی۔ یہی حال بقیہ یزیدی لڑکوں کا بھی تھا جو رواں ماہ کے آغاز میں اُس تربیتی مرکز سے فرار ہونے میں کامیاب ہوئے۔

مُراد کی والدہ نے اپنا نام ظاہر نہ کرتے ہوئے بتایا، ’’میرے بیٹے اور دیگر لڑکوں کا دماغ اس حد تک تبدیل کر دیا گیا تھا کہ وہ اپنے خاندان سے کہتے تھے کہ آپ لوگ چلے جائیں، ہم وہیں رہیں گے۔۔۔ یہاں تک کہ وہاں سے نکلنے سے چند لمحوں قبل تک میرا بیٹا کہہ رہا تھا کہ میں آپ کے ساتھ نہیں جاؤں گا۔‘‘

داعش نے ہزاروں یزیدی خواتین یا لڑکیوں کی عصمت دری کی گئی یا پھر انہیں جنسی غلام بنا لیا گیا تھا

داعش نے ہزاروں یزیدی خواتین یا لڑکیوں کی عصمت دری کی گئی یا پھر انہیں جنسی غلام بنا لیا گیا تھا

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق یزیدی لڑکوں کو اس طرح جنگی تربیت دینا دراصل دہشت گرد گروپ داعش کی طرف سے جنگجوؤں کی ایک ایسی نئی نسل تیار کرنے کی کوششوں کا حصہ ہے جو اس گروپ کے انتہائی تشدد پسندانہ خیالات اور نظریے کے وفادار ہوں۔ داعش کے قبضے میں رہنے والے نو عمر لڑکوں کو جو تربیت فراہم کی جا رہی تھی اس سے وہ خود بھی خوفزدہ رہتے تھے اور یہاں تک کہ داعش کے چنگل سے بچ نکلنے کے باوجود بھی وہ خوفزدہ نظر آتے ہیں۔

عراق اور شام کے کئی علاقوں پر قبضہ کرنے والے شدت پسند گروپ دولت اسلامیہ یا داعش نے مراد، اس کی والدہ اور چھوٹے بھائی کو عراقی شہر سِنجار کے قریب ایک گاؤں سے اگست 2014ء میں ایک حملے کے بعد اپنے قبضے میں لیا تھا۔ اس حملے میں ہزاروں یزیدی خواتین یا لڑکیوں کی عصمت دری کی گئی یا پھر انہیں جنسی غلام بنا لیا گیا تھا۔