1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

خیبر ایجنسی میں پاکستانی فضائی حملہ، 60 سے زائد عسکریت پسند ہلاک

پاکستان کے شمال مغربی قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں پاکستانی فوج کی فضائی بم باری میں 60 افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہو چکی ہے۔ خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق پاکستانی فوج نے اس حملے کی تصدیق کر دی ہے۔

default

پاکستانی فوج کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے عسکریت پسند تھے۔ یہ حملہ ہفتے کے روز خیبر ایجنسی کے علاقے وادی تیرہ میں ہوا۔ حملے میں لڑاکا طیاروں نے انتہا پسندوں کے ٹھکانوں کو حملہ بنایا۔

جائے وقوعہ کا دورہ کرنے والے ایک مقامی صحافی فاروق آفریدی نے ڈوئچے ویلے کے ساتھ خصوصی بات چیت میں کہا کہ فوجی طیاروں کی بمباری سے 65 سے 70 افراد کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں، تاہم فوجی ذرائع سے 60 ہلاکتوں کی تصدیق اب تک کی جا چکی ہے۔

2 Miran Shah

خیبر ایجنسی میں بھی پاکستانی فوجیوں نے کارروئیاں شروع کر دی ہیں

مقامی لوگوں کو بہت زیادہ مشکلات کا سامنا ہے، یہ اپنے گھروں سے باہرنہیں نکل سکتے جبکہ مواصلات سمیت تمام دیگر نظام درھم برھم ہو چکا ہے۔ تمام راستے مکمل طور پر بند ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں فاروق آفریدی کا کہنا تھا کہ شورش زدہ شمال مغربی قبائلی علاقے میں پاکستانی فوج کی طرف سے فضائی بمباری کا یہ دوسرا واقعہ ہے۔

ان کے مطابق تیرہ کے علاقے میں ایک طرف لشکر اسلام کے ٹھکانے ہیں تو دوسری جانب انصار الاسلام نے مراکز بنا رکھے ہیں، اس کے علاوہ یہ علاقہ طالبان کا گڑھ بھی مانا جاتا ہے۔ فاروق آفریدی کے مطابق حکام نے کہا ہے کہ وہ اس علاقے سے عسکریت پسندوں کا مکمل صفایا کر کے دم لیں گے۔ کیا اس تازہ ترین بمباری میں عام مقامی شہری بھی مارے گئے ہیں؟ اس سوال کے جواب میں فاروق آفریدی کا کہنا تھا کہ مقامی لوگ بتا رہے ہیں کہ اس علاقے کے عام شہری بھی اس حملے میں مارے گئے ہیں۔ تاہم انہوں نے اپنے الفاظ دہراتے ہوئے کہا کہ سیکیورٹی فورسز کے مطابق ہلاک ہونے والے تمام افراد عسکریت پسند تھے۔

رپورٹ کشور مصطفیٰ

ادارت عاطف توقیر

Audios and videos on the topic