1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

خونریز فوجی بغاوت ناکام: ترکی میں قریب تین ہزار جج بھی معطل

ترکی میں سینکڑوں ہلاکتوں کا سبب بننے والی ناکام فوجی بغاوت اور پھر ہزاروں فوجیوں کی گرفتاری کے بعد چھوٹی عدالتوں کے قریب تین ہزار جج معطل اور ریاستی عدلیہ کے اعلیٰ ترین بورڈ کے پانچ ارکان برطرف بھی کر دیے گئے ہیں۔

استنبول سے ہفتہ سولہ جولائی کے روز موصولہ نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق ترک نشریاتی ادارے این ٹی وی نے بتایا ہے کہ ایک رات پہلے کی ناکام لیکن خونریز فوجی بغاوت کے بعد حکومت نے آج ہفتے کے روز قریب پونے تین ہزار (2745) جج بھی معطل کر دیے تاکہ ملکی عدالتی نظام کو بغاوت پر اتر آنے والے فوج کے دھڑے کی سوچ کے حامی عناصر سے پاک کیا جا سکے۔

این ٹی وی نے بتایا کہ ان ججوں کو ان کے عہدوں سے برطرف نہیں بلکہ صرف معطل کیا گیا ہے اور فی الحال انہیں ان کے عدالتی فرائض کی انجام دہی سے روک دیا گیا ہے۔ مقامی یا چھوٹی عدالتوں کے ہزاروں ججوں کی برطرفی کا یہ فیصلہ ملکی ججوں اور پراسیکیوٹرز کی اعلیٰ کونسل، جسے اعلیٰ ترین جوڈیشل بورڈ (HSYK) بھی کہا جاتا ہے، کی طرف سے کیا گیا۔

سرکاری نیوز ایجنسی انادولو کے مطابق ان ہزاروں ججوں کی معطلی کے علاوہ اعلیٰ ترین جوڈیشل بورڈ کے پانچ اپنے ارکان بھی برطرف کر دیے گئے ہیں۔ جوڈیشل بورڈ کے ان ارکان کی ان کے عہدوں سے برطرفی کی تصدیق کرنے کے ساتھ ساتھ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ ان اعلیٰ عدالتی اہلکاروں کے خلاف چھان بین جاری ہے۔

Türkei Putschisten werden festgenommen

ترکی میں سِرناک کے فوجی اڈے سے گرفتار کیے جانے والے باغی فوجی

باغیوں کے حامی فوجیوں کی گرفتاریاں مکمل

ہفتے کی سہ پہر استنبول سے ملنے والی جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے کی رپورٹوں کے مطابق سرکاری نیوز ایجنسی انادولو نے لکھا ہے کہ ناکام بغاوت فوج کے ایک دھڑے کی طرف سے کی گئی تھی جبکہ ملکی مسلح افواج کے ارکان کی بہت بڑی اکثریت کی ہمدردیاں پہلے کی طرح اب بھی ترک ریاست اور حکومت کے ساتھ ہیں۔

ہفتے کی سہ پہر تک ملکی فوج نے انقرہ میں اپنے جنرل سٹاف ہیڈکوارٹرز میں باغیوں کے حمایتی فوجیوں کے خلاف اپنا آپریشن بھی مکمل کر لیا۔ اس کے علاوہ جنوب مشرقی ترکی میں ملکی فضائیہ کے دیاربکر کے علاقے میں قائم ایک بڑے فضائی اڈے سے بھی 100 کے قریب فوجی افسروں کو گرفتار کر لیا گیا۔

Türkei Putschisten werden festgenommen

بغاوت پر اتر آنے والے ترک فوجی، جنہیں گرفتار کر کے اپنی وردیاں اتارنے پر مجبور کر دیا گیا

انقرہ اور استنبول سے آمدہ رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ پندرہ جولائی جمعے کی رات شروع ہونے والی فوجی بغاوت کی کوشش میں، جسے ہفتہ سولہ جولائی کی صبح تک ناکام بنا دیا گیا، مجموعی طور پر 265 افراد مارے گئے جن میں ایک باغی جنرل بھی شامل ہے۔

اس کے علاوہ 2839 فوجی اہلکاروں کو برطرف کر کے گرفتار بھی کیا جا چکا ہے، جن میں 29 کرنل اور پانچ جنرل بھی شامل ہیں۔ ان باغیوں کے ساتھی سات دیگر فوجی افسران آج ایک جنگی ہیلی کاپٹر کے ذریعے یونان ہمسایہ ملک بھی پہنچ گئے، جہاں انہوں نے اپنے لیے سیاسی پناہ کی درخواست کی ہے۔

DW.COM