1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

خوست پولیس کے صدردفتر پر حملہ: چھ پولیس اہلکار ہلاک

اتوار کی صبح افغانستان کے مشرقی صوبے خوست کے پولیس ہیڈ کوراٹرز پر خود کُش حملہ آوروں کے ایک حملے میں 6 افغان پولیس اہلکاروں کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔

default

خوست کے میئر کی پریس کانفرنس

فبل ازیں خوست کی صوبائی پولیس کے چیف عبدل حکیم اسحاق زئی نے اس واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا کہ اس حملے کے نتیجے میں تین پولیس اہلکار ہلاک جبکہ دو افراد زخمی ہوئے ہیں۔ زخمی ہونے والوں میں ایک شہری اور ایک پولیس اہلکار شامل ہیں۔ مقامی ذرائع کے مطابق تین حملہ آور خود کُش جیکٹس پہنے ہوئے تھے اور مشین گنوں سے لیس تھے۔ انہوں نے خوست میں قائم ٹریفک پولیس کے ہیڈ کوراٹرز کو ہدف بنایا۔ وقوعہ پر موجود اے ایف پی کے ایک رپورٹر کے مطابق اس حملے کے بعد فائرنگ کا تبادلہ تھوڑی دیر تک جاری رہا اور گولیوں کی آواز سنائی دیتی رہی۔ اس رپورٹر نے مزید بتایا کہ پولیس ہیڈ کوراٹرز کی عمارت سے دھواں اٹھتا دکھائی دیا۔

US-Angriff auf Khost in Afghanistan Protest

2010 ء میں خوست میں نیٹو کے فضائی حملے میں چھ افغان شہریوں کی ہلاکت کے بعد امریکہ کے خلاف مظاہرے ہوئے تھے

ٹریفک پولیس کے صدر دفترکی اس عمارت کے نزدیک پولیس کی ’کوئک ری یکشن یونٹ‘ قائم ہے اور اس کے ارد گرد سکیورٹی فورسز کا سخت پہرہ ہے۔ یہ امر اب تک واضح نہیں ہے کہ حملے کا شکار ہونے والی عمارت کے اندر کتنے باغی حملہ آور موجود ہیں۔ اتوار کو ہونے والے اس حملے کے بعد سے اب تک کوئی دھماکہ سننے میں نہیں آیا ہے تاہم صوبے خوست کی پولیس کے سربراہ عبدل حکیم اسحاق زئی اور صوبائی گورنر کے ترجمان موبارز زادران نے کہا ہے کہ یہ دہشت گردانہ کارروائی مسلح خود کُش حملہ آوروں نے کی ہے۔

خوست پولیس کے ایک سینئر اہلکار نے نام نہ بتانے کی شرط پر پہلے ہی ایک بیان دیتے ہوئے کہا کہ اتوار کو ہونے والے اس واقعے میں دو شہریوں سمیت 6 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ اس پولیس اہلکار کے مطابق پانچ خود کُش حملہ آوروں نے خوست کے پولیس ہیڈکوراٹرز پر حملہ کیا، جن میں سے چار پولیس کی جوابی کارروائی میں ہلاک ہو گئے ہیں، جبکہ ایک حملہ آور اب بھی مدافعت کر رہا ہے۔ تاہم ان بیانات کی تصدیق اب تک آزاد ذرائع سے نہیں ہو سکی ہے۔

Zu sehen sind afghanische Frauen bei einer Veranstaltung Gewalt gegen Frauen in Khost, Afghanistan. Die Bilder hat uns heute (02.12.2010) unser Korrespondent Faridullah Zahir aus Khost, Afghanistan gesendet. Bild 1: Gewalt gegen Frauen Veranstaltung

خوست میں خواتین کے خلاف تشدد کے موضوع پر منعقد ہونے والی ایک تقریب

اتوار کے اس حملے سے ایک دن قبل ہفتے کے روز افغان دارالحکومت میں قائم ایک ملٹری ہسپتال میں ہونے والے ایک خود کُش بم حملے کے نتیجے میں چھ میڈیکل طلبا ہلاک اور 23 افراد زخمی ہوئے تھے۔ گزشتہ چند ہفتوں کے دوران طالبان کی طرف سے افغانستان کے محفوظ سرکاری مقامات پر حملوں میں غیر معمولی تیزی آئی ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: عابد حُسین

DW.COM

ویب لنکس