1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

خود کش دھماکا کرنا چاہتا تھا، صالح عبدالسلام

پیرس حملوں میں ملوث مبینہ ملزم صالح عبدالسلام نے دوران تفتیش استغاثہ کو بتایا ہے کہ وہ گزشتہ برس تیرہ نومبر کی رات پیرس حملوں کے دوران خود کو دھماکے سے اڑانے کا ارادہ رکھتا تھا تاہم عین وقت پر اس نے اپنا ارادہ بدل لیا۔

Salah Abdeslam Fahndungsfoto

صالح استغاثہ کے ساتھ مکمل تعاون کر رہا ہے

بیلجیم کے شہر بریگے کی ایک ہائی سکیورٹی جیل میں قید صالح عبدالسلام سے پوچھ گچھ کا سلسلہ شروع کر دیا گیا ہے۔ برسلز میں جمعے کے دن ایک چھاپے کے دوران وہ زخمی حالت میں گرفتار کیا گیا تھا۔ اس دوران اس کی ٹانگ پر گولی لگی تھی اور وہ معمولی زخمی ہو گیا تھا۔

DW.COM

ایک ہسپتال میں اسے طبی امداد دینے کے بعد شمالی مشرقی شہر بریگے منتقل کر دیا گیا۔ پیرس حملوں میں ملوث ہونے پر ’دہشت گردی‘ کے الزامات کے تحت اس پر فرد جرم عائد کر دی گئی ہے۔ بیلجیم کے حکام نے بتایا ہے کہ آج اتوار کے دن سے صالح سے باقاعدہ پوچھ گچھ کا سلسلہ شروع کر دیا گیا ہے۔

بیلجیم کے حکام نے بتایا ہے کہ صالح استغاثہ کے ساتھ مکمل تعاون کر رہا ہے لیکن اس نے فرانس حوالگی کے حوالے سے قانونی چارہ جوئی کا فیصلہ کیا ہے۔ فرانس کی سرزمین پر خونریز ترین دہشت گردانہ حملوں میں مبینہ طور پر ملوث صالح نے استغاثہ سے گفتگو میں کہا ہے کہ وہ حملوں کے دوران پیرس کے اسٹیڈیم کے نزدیک ہی خودکش حملہ کرنا چاہتا تھا لیکن عین وقت پر اس نے اپنا ارادہ بدل لیا تھا۔

صالح کے وکیل سوَن ماری نے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ ان کا مؤکل چاہتا ہے کہ اسے فرانس کے حوالے نہ کیا جائے بلکہ اس کا مقدمہ بیلجیم میں ہی چلایا جائے۔ جمعے کے دن چھبیس سالہ صالح کے ساتھ اس کے ساتھی منیر احمد کو بھی گرفتار کیا تھا۔ بتایا گیا ہے کہ احمد پر بھی دہشت گردی کے الزامات عائد کیے گئے ہیں۔

پیرس کے پراسیکیوٹر فرانسوا مولن کے مطابق تیرہ نومبر کے حملوں میں صالح عبدالسلام نے مرکزی کردار کیا تھا۔ اس پر الزام ہے کہ وہ ان حملوں کا ماسٹر مائنڈ ہونے کے ساتھ ساتھ براہ راست ملوث بھی تھا۔ بتایا گیا ہے کہ صالح سے پوچھ گچھ کے نتیجے میں یورپ میں فعال مزید جنگجوؤں کی نشاندہی بھی ممکن ہو سکتی ہے۔

یہ امر اہم ہے کہ فرانسیسی صدر فرانسوا اولانڈ برسلز حکومت سے مطالبہ کر چکے ہیں کہ صالح کو فرانس کے حوالے کر دیا جائے۔ اولانڈ کے مطابق اس انتہائی مطلوب ترین دہشت گرد کی گرفتاری ایک فتح ہے لیکن اس سے دہشت گردی کے خلاف جاری لڑائی ختم نہیں ہو گی۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار بھی کیا ہے کہ ان کی حکومت دیگر یورپی ممالک کے ساتھ مل کر انتہا پسندی کا خاتمہ ممکن بنانے کی کوشش کریں گے۔

Brüssel Sven Mary Anwalt von Salah Abdeslam

صالح کے وکیل سوَن ماری کے مطابق وہ بھرپور کوشش کریں گے کہ ان کے مؤکل کو فرانس کے حوالے نہ کیا جائے

صالح کے وکیل سوَن ماری کے مطابق وہ بھرپور کوشش کریں گے کہ ان کے مؤکل کو فرانس کے حوالے نہ کیا جائے تاہم ماہرین کے مطابق جرائم کی نوعیت کو دیکھتے ہوئے ایسا امکانات کم ہی ہیں کہ صالح کو فرانس کے حوالے کرنے کا عمل رک سکے۔

فرانسیسی وزیر برائے انصاف نے امید ظاہر کی ہے کہ تین ماہ کے دوران صالح کو قانونی کارروائی کا عمل مکمل کرنے کے بعد پیرس حکومت کی تحویل میں دے دیا جائے گا۔