1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

خواتین کے ساتھ ہونے والا تشدد، انقرہ حکومت کے لیے خطرے کی گھنٹی

حقوق نسواں کے لیے سرگرم عناصر کا کہنا ہے کہ یورپی یونین میں رُکنیت حاصل کرنے کے خواہاں ملک ترکی میں خواتین کے ساتھ ہونے والا گھریلو تشدد خطرناک سطح تک پہنچ چُکا ہے۔

default

جرمن شہر ہیمبرگ میں غیرت کے نام پر قتل کے خلاف عدالت کے باہر احتجاج کرنے والی خواتین

اس سلسلے میں ترکی کے انصاف کے اداروں اور اسلام پسند حکمران پارٹی AKP کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ انسانی حقوق کی پامالی پر توجہ مرکوز کرنے والی ایک نیوز سائٹ BIAnet کے مطابق سال رواں فروری اور مارچ کے مہینے میں 52 خواتین اپنے شوہروں کی زیادتیوں کا نشانہ بن کر جاں بحق ہوئیں، جبکہ گزشتہ برس ایسی خواتین کی تعداد 217 بتائی جاتی ہے۔ ان میں سے 27 فیصد خواتین ایسی تھیں جنہیں اُن کے شوہروں نے اس لیے ہلاک کر دیا کہ وہ طلاق لینا چاہتی تھیں۔

2002 ء سے 2009 ء کے درمیان قتل کے ایسے کیسز جن میں خواتین جنہیں سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ہلاک کیا گیا کی تعداد میں 14 گنا اضافہ ہوا۔ یہ اعداد و شمار وزارت انصاف کی طرف سے سامنے آئے ہیں تاہم ان کیسز کے رونما ہونے والے حالات اور ان جرائم کے مرتکب انسانوں کے بارے میں تفصیلات نہیں بتائی گئیں۔

Deutschland Grabstelle der Türkin Hatun Sürücü

مغربی طرز زندگی اپنانے پر 2005 ء میں جرمنی میں چھوٹے بھائی کے ہاتھوں قتل ہونے والی ترک خاتون کو برلن کے ایک قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا تھا۔

حُلیہ گُلبہار حقوق نسواں کی ایک چوٹی کی سرگرم ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ترکی میں عورتوں کے ساتھ ہونے والے گھریلو تشدد کی صورتحال ’جنس کُشی‘ کی شکل اختیار کر چُکی ہے۔ گلبہار کا کہنا ہے کہ ترکی کے پدر سری معاشرے میں خواتین کو تشدد کا نشانہ بنانے کی روایت قدیم ہے۔ یہاں ایک عرصے سے غیرت کے نام پر قتل کا سلسلہ جاری ہے۔

دوسری جانب ناقدین کا کہنا ہے کہ ان مسائل میں اضافہ موجودہ قدامت پسند پارٹی AKP کی طرف سے فرسودہ اقدار کو فروغ دینے کی کوششیوں کے سبب ہو رہا ہے۔ حقوق نسواں کے لیے سرگرم حُلیہ گُلبہار کا ماننا ہے کہ ترک حکومت میں معاشرے میں پائے جانے والے عورتوں کے ساتھ تشدد کے رواج کو ختم کرنے کی خواہش ہی نہیں پائی جاتی، نہ ہی وہ ان مسائل کے خاتمے میں سنجیدہ ہے۔

Deutschland Prozess München Urteil nach Ehrenmord an Ex-Ehefrau

2007 ء میں جرمن شہر میونخ کی ایک عدالت نے سابقہ بیوی کو غیرت کے نام پر قتل کرنے والے ایک عراقی کو عمر قید کی سزا سُنائی تھی

گُلبہار نے اس اہم مسئلے کی ایک بڑی وجہ معاشرے کے چند حلقوں کا وہ پروپیگنڈا قرار دیا ہے جس میں مردوں اور عورتوں کو تخلیقی طور پر برابر نہیں سمجھا جاتا ہے۔

ترک وزیر اعظم رجب طیب اردوان نے ایک بار کہا تھا کہ حقوق نسواں کے لیے سرگرم خواتین کی حیثیت حاشیائی ہے۔ اردوان کو گزشتہ سال بہت زیادہ تنقید کا سامنا اُس وقت کرنا پڑا تھا جب انہوں نے ایک بیان میں کہا تھا ’ مرد اور عورت برابر نہیں ہو سکتے، لیکن یہ ایک دوسرے کے لیے تکمیلی حیثیت رکھتے ہیں‘۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت : افسر اعوان

DW.COM