1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

خامنہ ائی کا پرتشدد مظاہروں کے خاتمے پر زور

ایرانیوں کے روحانی پیشوا آیت اللہ خامنہ ائی نے انتخابی نتائج کے خلاف مظاہروں کے فوری خاتمے پر زور دیا ہے۔ انہوں نے خبردار کیا ہے کہ مزید جانی نقصان ہوا تو اس کی ذمہ داری مظاہروں کی قیادت کرنے والوں پر عائد ہوگی۔

default

آیت اللہ خامنہ ائی

خامنہ ائی نے تہران یونیورسٹی میں نماز جمعہ کے خطبہ کے دوران کہا کہ حالیہ انتخابات ’’آزادانہ اور شفاف‘‘ تھے۔ انہوں نے عوام کو باہمی سمجھوتے اور امن برقرار رکھنے کے کی تلقین کی ہے۔

Iran Wahlen Mir Hussein Mussawi nach Stimmabgabe in Teheran

میرحسین موسوی

تاہم ان کی جانب سے سخت تنبیہہ سے پہلے ہفتہ کی شام تہران میں ایک احتجاجی ریلی کا اعلان کیا گیا تھا، جس کی منسوخی کی اطلاع نہیں ہے۔ صدارتی انتخابات میں شکست کا سامنا کرنے والے امیدوار میر حسین موسوی کے ایک اتحادی نے خبررساں ادارے روئٹرز کو بتایا ہے کہ موسوی نے اپنے حامیوں کو دوبارہ سڑکوں پر آنے کے لئے نہیں کہا۔

دوسری جانب ایرانی مجلس شوریٰ کا ایک غیرمعمولی اجلاس آج ہفتہ کو ہورہا ہے جس میں 12جون کے صدارتی انتخابات میں ہارنے والے امیدواروں کو طلب کیا گیا ہے۔ اجلاس میں ان کی جانب سے کی گئی شکایات پر غور کیا جائے گا۔ واضح رہے کہ موسوی اور دیگر امیدواروں نے انتخابی نتائج کی منسوخی کا مطالبہ کیا تھا۔

امریکی صدر باراک اوباما نے آیت اللہ خامنہ ائی کے تازہ بیانات کے ردّعمل میں ایرانی سیکیورٹی فورسز کی جانب سے مظاہرین پر تشّدد کی مذمت کی ہے۔

Iran Mousavi Anhängerin

مظاہرے میں شریک موسوی کی ایک حمایتی

وائٹ ہاؤس کے ایک ترجمان نے کہا ہے کہ ایران کے شہریوں کو احتجاج کرنے کی آزادی ہونی چاہئے۔

برطانیہ نے خامنہ ائی کی جانب سے لندن مخالف بیان پر ایرانی سفیر کو طلب کر لیا ہے جبکہ برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن نے کہا کہ ایرانی عوام ہی اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکتے ہیں۔

واضح رہے کہ سابق ایرانی وزیر اعظم اور ناکام صدارتی امیدوار میر حسین موسوی کی جانب سے صدارتی انتخابات میں دھاندلی اور بے ضابطگیوں کے الزام پر ایران میں 1979ء کے اسلامی انقلاب کے بعد سے بدترین احتجاجی مظاہرے ہوئے ہیں۔

ایران کے سرکاری میڈیا کے مطابق ان مظاہروں کے دوران سات تا آٹھ افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ دریں اثنا ان ان مظاہروں سے پیدا ہونے والی صورت حال کے نتیجے میں متعدد سیاسی کارکنوں کو گرفتار کیا گیا ہے جبکہ ملکی اور بین الاقوامی ذرائع ابلاغ پر سخت پابندیاں بھی عائد کی گئیں۔

سرکاری انتخابی نتائج کے مطابق احمدی نژاد کو 63 فیصد جبکہ موسوی کو تقریبا 33 فیصد ووٹ ملے۔ ایران میں کل 46 ملین رائے دہندگان ہیں۔

Mahmud Ahmadinedschad - Iran

ایرانی صدر احمدی نژاد

بعض سیاسی تجزیہ کاراحمدی نژاد کے دوبارہ انتخاب کو ان مغربی طاقتوں کے لئے مایوس کن قرار دے رہے ہیں، جو ایران کو اپنا جوہری پروگرام روکنے پر قائل کرنے کی کوشش میں لگے ہیں۔

52 سالہ احمدی نژاد نے چار سال قبل 1979ء کے اسلامی انقلاب کی بحالی کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے تیل برآمد کرنے والے دُنیا کے چوتھے بڑے ملک کی صدارت کا منصب سنبھالا تھا۔ نژاد نے ملک کے جوہری پروگرام کی توسیع کی، ان مغربی الزامات کو رد کیا کہ اس منصوبے کا مقصد جوہری ہتھیاروں کی تیاری ہے۔ نازی دور میں یہودیوں کے قتل عام یعنی ’ہولوکوسٹ‘ کا انکار اور اسرائیل کے خلاف سخت بیانات کے ذریعے بھی احمدی نژاد نے عالمی طاقتوں کو ناراض کیا ہے۔

DW.COM