1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

حملہ آور فلسطینی اسرائیلی خفیہ ادارے کا کارکن تھا !

اسرائیلی شہر تل ابیب میں واقع ترک سفارت خانے میں گھس کر لوگوں کو یرغمال بنانے کی ناکام کوشش کرنے والے فلسطینی شہری کے وکیل کا کہنا ہے کہ اُس کا مؤکل اسرائیلی داخلی خفیہ ادارے شن بیت کے لئے کام کیا کرتا تھا۔

default

ترک سفارتخانے کے باہر اسرائیلی اہلکار

آج بدھ کو اسرائیلی ریڈیو سے باتیں کرتے ہوئے وکیل اویتال ہوریف نے کہا کہ اُس کے مؤکل ندیم انجاز نے ’1990ء کے عشرے کے دوران اور رواں عشرے کے اوائل میں فلسطینی حملوں کو ناکام بنایا اور ایسا کرتے ہوئے بہت سے اسرائیلی فوجیوں اور شہریوں کی جانیں بچائیں‘۔ اویتال ہوریف نے کہا کہ فلسطینی علاقوں میں اُس کے مؤکل کو خطرہ ہے کیونکہ وہاں اُسے موت کی سزا سنائی جا چکی ہے۔

Israel Tel Aviv Türkische Botschaft Geiselnahme

ندیم انجاز نامی فلسطینی کی طرف سے ترک سفارتخانے میں داخل ہونے کی کوشش کے فوراً بعد سکیورٹی اہلکاروں نے اِس حملہ آور پر قابو پا لیا

ہوریف نے مزید بتایا کہ جب اُس کے مؤکل نے اِس سیکرٹ سروس سے مدد کی درخواست کی تو شن بیت نے اُس کی ذمہ داری قبول کرنے سے انکار کر دیا۔ تاہم

ملک کی داخلی سیکرٹ سروس نے اِس بات کی تردید کی ہے کہ ندیم انجاز نے کبھی بھی اُس کے لئے کام کیا تھا۔ شن بیت کے ایک ترجمان نے فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی سے باتیں کرتے ہوئے کہا:’’ندیم انجاز نے کبھی بھی ہمارے لئے کام نہیں کیا اور پولیس اُس کے کیس کا جائزہ لے رہی ہے۔‘‘

Israel Tel Aviv Türkische Botschaft Geiselnahme

اسرائیلی سکیورٹی اہلکار تل ابیب میں ترک سفارت خانے کے سامنے حفاظتی اقدامات کرتے ہوئے

اِس فلسطینی نے منگل کو تل ابیب میں ترکی کے سفارت خانے میں گھس کر وہاں ایک شخص کو یرغمال بنانے کی کوشش کی۔ اُس کا مطالبہ تھا کہ اُسے ترکی میں سیاسی پناہ دی جائے۔ اِس فلسطینی کے پاس ایک چاقو کے ساتھ ساتھ ایک کھلونا پستول بھی تھا۔ سکیورٹی اہلکاروں نے اِس حملہ آور پر فوری طور پر قابو پا لیا۔ اِسی دوران اِن اہلکاروں کی فائرنگ سے اِس فلسطینی کی ٹانگ پر معمولی زخم بھی آئے، جن کے لئے اُسے گرفتاری کے فوراً بعد ایک ہسپتال لے جایا گیا تھا۔

ندیم انجاز نامی یہ فلسطینی مغربی اُردن کے شہر راملہ میں پیدا ہوا تھا۔ اُس کے وکیل کا کہنا ہے کہ اُس کے مؤکل کو ابھی تین ہفتے پہلے ایک اسرائیلی جیل سے رہا کیا گیا تھا۔ بتایا گیا ہے کہ وہاں وہ چوری کے ایک مقدمے اور اسرائیل میں غیر قانونی قیام کے الزامات میں سزا پانے کی وجہ سے قید بھگت رہا تھا۔ ندیم انجاز نے 2006ء میں اِسی انداز میں برطانوی سفارت خانے میں بھی گھسنے کی کوشش کی تھی۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: کشور مصطفیٰ

DW.COM

ویب لنکس