1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

حماس کے ’سرِ عام‘ سزائے موت دینے کے فیصلے پر تحفظات

فلسطینی علاقے غزہ پر حکومت کرنے والی تنظیم حماس موت کی سزاؤں پر سرِ عام عملدرآمد کا سلسلہ شروع کرنے والی ہے۔ اس مقصد کے لیے تیار کیے جانے والے حکم نامے پر حماس کے پارلیمانی ارکان نے دستخط بھی کر دیے ہیں۔

حماس کے اٹارنی جنرل اسمٰعیل جبار نے جمعرات کو صحافیوں کو بتایا کہ پانچ افراد کی سزاؤں پر اگلے ہفتے کسی بھی دن عمل درآمد کر دیا جائے گا جبکہ بقیہ آٹھ کو رمضان کے بعد یعنی جولائی میں سزا دی جائے گی۔ انہوں نے مزید بتایا کہ یہ افراد معصوم شہریوں کے قتل میں ملوث ہیں، ’’سماجی انصاف کے تقاضے پورے کرنے کے لیے ان سزاؤں پر جلد از جلد عمل درآمد کیا جائے گا۔‘‘ انہوں نے واضح کیا کہ یہ سب کچھ سرِ عام نہیں بلکہ ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کی موجودگی میں کیا جائے گا۔

تاہم اٹارنی جنرل اسمعیل جبار نے یہ نہیں بتایا کہ آیا ان مجرموں کو پھانسیاں دی جائیں گی یا پھر کسی اور انداز میں موت کے گھاٹ اتارا جائے گا۔ غزہ میں عام طور پر فائرنگ کر کے سزائے موت دی جاتی ہے۔

حماس کے مطابق سرعام پھانسیاں دینے کا مقصد جرائم کی روک تھام ہے۔ اس سے قبل فلسطینی علاقوں میں سزائے موت پر عمل درآمد کے پروانوں پر صرف صدر محمود عباس کو ہی دستخط کرنے کا اختیار تھا۔ فلسطینی انتظامیہ نے اس فیصلے کو ایک غیر قانونی اقدام قرار دیا ہے۔ اس طرح حماس اور غرب اردن پر حکومت کرنے والے محمود عباس کے مابین تنازعہ مزید شدت اختیار کر سکتا ہے۔

غزہ اور غرب اردن 2007ء میں اس وقت ایک دوسرے سے الگ ہوئے تھے، جب عام انتخابات میں حماس کامیاب ہوئی تھی تاہم اقتدار اسے نہیں سونپا گیا تھا، جس کے بعد حماس نے اقتدار پر زبردستی قبضہ کر لیا تھا۔ اقوام متحدہ نے بھی حماس کی جانب سے یوں سزائے موت دینے کے فیصلے پر تحفظات کا اظہار کیا ہے۔ حماس غزہ میں واحد جماعت ہے اور یہ کسی بھی وقت کوئی بھی قانون اپنی مرضی سے تبدیل کر سکتی ہے۔