1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

حماس رہنما کا قتل: آسڑیلیا میں اسرائیلی سفیر کی طلبی

فلسطینی تنظیم حماس کے رہنما محمود المبوح کے مبینہ قاتلوں کی طرف سے مختلف ممالک کے شہریوں کے پاسپورٹ استعمال کرنے کے حوالےسے اسرائیل پرسفارتی دباؤ بڑھتا جارہا ہے۔

default

المبوح کے قتل میں ملوث چند مطلوب ملزمان، فوٹو دبئی پولیس

برطانیہ، فرانس، جرمنی اورآئر لینڈ کے بعد جعمرات کو آسٹریلیا نے بھی مبینہ موساد ایجنٹوں کی طرف سے تین آسڑیلوی شہریوں کے پاسپورٹ استعمال کئے جانے پر اسرائیلی سفیر کو طلب کر لیا۔

آسڑیلیا میں یہ اطلاعات ہیں کہ متحدہ عرب امارات کی طرف سے جاری کئے گئے 15 نئے مشکوک افراد کے ناموں میں تین آسٹریلوی، چھ برطانوی، تین فرانسیسی اور تین آئرش باشندوں کے نام بھی شامل ہیں۔ ان میں سے کچھ نے قاتلوں کی معاونت کی اور کچھ نے مبینہ طور پر قتل کے اس منصوبے میں براہ راست مرکزی کردار اداکیا۔

Benjamin Netanjahu Porträtfoto

دبئی پولیس کو تفتیش کے لئے 26 افراد کی تلاش ہے، جنہوں نے مغربی ملکوں کے پاسپورٹ استعمال کئے۔ اس کے علاوہ تین فلسطینیوں سے بھی اسی قتل کے سلسلے میں پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔

ان اطلاعات پرآسڑیلوی حکومت سیخ پا نظرآتی ہے۔ وزیرِاعظم کیوِن رَڈ نے ایک نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ حماس رہنما کے قتل میں آسٹریلوی پاسپورٹوں کے استعمال کا مسئلہ ایک طرف، اگر آسٹریلیا کے سرکاری پاسپورٹ کسی اور ریاست نے صرف استعمال بھی کئے ہیں، تو یہ بھی ایک بہت سنگین مسئلہ ہے۔

وزیرِ خارجہ اسٹیفن اسمتھ نے آسڑیلیا میں اسرائیلی سفیر یووال رَوتم کو متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر یہ ثابت ہو گیا کہ محمود المبوح کے قتل میں آسڑیلوی پاسپورٹ استعمال ہوئےہیں، تو دونوں ممالک کے تعلقات کشیدہ ہو سکتے ہیں۔

اسمتھ نے کہا کہ حکومت اس معاملے کی تفتیش کر رہی ہے اور اسرائیل کو بھی بھرپور تعاون کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ابتدائی تفتیش کے مطابق آسٹریلوی پاسپورٹس کی یا تو جعلی کاپیاں تیار کی گئیں یا پھر ان میں غیر قانونی ردوبدل کیا گیا۔

Hamas feiert Jahrestag und kündigt Überraschung an

سیاسی تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ اس آسڑیلوی ردِعمل کے بعد اسرائیل پر اس معاملے کی چھان بین کے حوالے سے دباؤ مزید بڑھ گیا ہے۔ چار یورپی ممالک موساد کے مبینہ اہلکاروں کی طرف سے اپنے شہریوں کے پاسپورٹ استعمال کئے جانے پر پہلے ہی اسرائیلی سفارت کاروں کو وضاحت کے لئے طلب کر چکے ہیں۔ اس کے علاوہ یورپی یونین بھی اس معاملے پر گہری تشویش کا اظہار کر چکی ہے۔

دبئی پولیس کے مطابق محمود المبوح کے قتل میں اسرائیلی خفیہ سروس موساد ملوث ہے اور اُس نے موساد کے سربراہ کی گرفتاری کا مطالبہ بھی کیا ہے۔ اسرائیل ان الزامات کی سختی سے تردید کرتا ہے اور تل ابیب نے موساد کے سربراہ کی گرفتاری کا مطالبہ بھی مسترد کر دیا ہے۔

دوسری طرف برطانیہ کے ایک روزنامے نے انکشاف کیا ہے کہ اسرائیلی وزیرِ اعظم بنیامین نتن یاہو نے اس قتل کی منظوری دی تھی اور یہ کہ وہ موساد کے ایجنٹوں سے اُن کی دبئی روانگی سے پہلے ملے بھی تھے۔

رپورٹ: عبدالستار

ادارت: مقبول ملک