1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

حزب اللہ نے لبنان حکومت چھوڑ دی

حزب اللہ نے لبنان کی مخلوط حکومت سے علیحدگی اختیار کر لی ہے جس کے سبب لبنانی حکومت گر گئی ہے۔ یہ فیصلہ ایسے وقت میں کیا گیا جب ملکی وزیراعظم سعد حریری واشنگٹن کے دورے پر تھے۔

default

فائل فوٹو: حزب اللہ کے رہنما حسن نصراللہ اور سعد حریری ایک ساتھ

سابق وزیر اعظم رفیق حریری کے قتل کی تحقیقات کرنے والے اقوام متحدہ کے ٹریبیونل کی طرف سے ممکنہ طور پر اس قتل کی فرد جرم حزب اللہ پر عائد کئے جانے کا امکان ہے۔ حزب اللہ نے اسی خدشے کے پیش نظر حکومت سے علیحدگی کا اعلان کیا ہے۔ رفیق حریری کو 2005ء میں قتل کیا گیا تھا۔ قبل ازیں بدھ کو حزب اللہ اور اس کی اتحادی جماعت کے 11 وزراء نے اپنے استعفے پیش کئے تھے۔

اس سے پہلے لبنان کے وزیر صحت محمد جواد خلیفہ نے کہا تھا کہ استعفے لکھے جا چکے ہیں اور ان کا بدھ کی سہ پہر اعلان کر دیا جائے گا۔ وزراء کی طرف سے استعفے پیش کئے جانے سے قبل سعودی عرب اور شام نے مصالحتی کوششیں کی جو ناکام رہیں۔ لبنان میں سیاسی بحران ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب ملک کے وزیراعظم سعد حریری نے واشنگٹن میں امریکی صدر باراک اوباما سے لبنان کی سیاسی صورتحال پر بات چیت کی ہے۔

Rafiq al-Hariri libanesischer Politiker

رفیق حریری کو 2005ء میں قتل کیا گیا تھا

وائٹ ہاؤس کی طرف سے جاری کئے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ دونوں رہنماؤں نے فرانس، سعودی عرب اور دوسری طاقتوں کی طرف سے کی جانے والی مصالحتی کوششوں کے بارے میں بات چیت کی ہے، جن کا مقصد اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ اقوام متحدہ کا ٹریبیونل بغیر کسی رکاوٹ کے اپنا کام جاری رکھ سکے۔ امریکی صدر باراک اوباما نے ٹریبیونل کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ لبنان میں پر تشدد سیاست کا دور ختم ہونا چاہیے۔

اس ملاقات کے بعد سعد حریری فرانس کے صدر نکولا سارکوزی سے ملاقات کے لئے پیرس روانہ ہوگئے ہیں۔

شیعہ جماعت حزب اللہ ہمیشہ ہی سے اس الزام کو مسترد کرتی آئی ہے کہ وہ رفیق حریری کے قتل میں ملوث ہے۔ بدھ کو لبنان کے ایک اپوزیشن رکن جبران باصل نے کہا تھا کہ اقوام متحدہ کی طرف سے قائم کیا جانے والا تحقیقاتی ٹریبیونل ایک اسرائیلی منصوبہ ہے۔ امریکی وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن نے حزب اللہ کے استعفوں پر اپنے رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ لبنان کی کچھ اندرونی اور بیرونی قوتیں انصاف کی راہ میں حائل ہیں۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ موجودہ صورتحال سے کسی مسلح تصادم کا خدشہ موجود نہیں ہے۔ کہا جاتا ہے کہ لبنان میں حزب اللہ کو ایران اور شام کی جبکہ مقتول سُنی لیڈر رفیق حریری کے بیٹے سعد حریری کو سعودی عرب اور امریکہ کی حمایت حاصل ہے۔

رپورٹ : امتیاز احمد

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM