1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’جینیوا امن مذاکرات آمدن، نشستن خوردن اور برخواستن کے سوا کچھ نہیں‘

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے کہا ہے کہ جینیوا میں بُدھ کو معطل ہونے والے شامی امن مذاکرات بے معنی تھے کیونکہ صدر بشار الاسد اور روس کی فورسز کی جانب سے حملوں کا سلسلہ جاری ہے۔

اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب برائے شام اسٹیفن ڈے مستورا نے اپنی مصالحتی کوششیں بھی روک دیں ہیں کیونکہ روسی فضائی حملوں کی پشت پناہی میں شامی فوج نے شمالی حلب میں پیش قدمی کرتے ہوئے اس شہر کو ترکی سے پہنچنے والی اپوزیشن سپلائی لائنوں سے بالکل کاٹ کر رکھ دیا ہے۔

ترک صدارتی ویب سائٹ پر شائع ہونے والے ایک تبصرے میں ایردوآن کا کہنا تھا، ’’روس شام میں لوگوں کوہلاک کرنے کا سلسلہ جاری رکھے ہوئے ہے۔ کیا اس صورتحال میں کوئی امن مذاکرات ممکن ہیں؟ کیا امن بات چیت ایسے کی جاتی ہے؟‘‘

ترک صدر نے یہ باتیں پیرو کے دورے کے دوران دارالحکومت لیما کی یونیورسٹی میں ایک خطاب کرتے ہوئے کہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا، ’’ایک ایسے ماحول میں جہاں اب بھی بچے قتل کیے جا رہے ہیں، اس قسم کی مذاکراتی کوششوں کا حاصل ظالموں کو سہولت فراہم کرنے کے سوا کچھ نہیں۔‘‘

Türkei Peru Präsident Recep Tayyip Erdogan zu Besuch in Lima

اردوگان نے یہ بیانات پیرو کے دورے پر لیما میں دیے

ایردوآن کا کہنا تھا، ’’یہ ہمیشہ اجتماع کا انعقاد کرتے ہیں، اکھٹا ہوتے ہیں، کھاتے پیتے ہیں اور محفل برخواست ہو جاتی ہے۔ اب یہ شام کے امن مذاکرات کی ایک نئی تاریخ دے رہے ہیں۔ ابھی آپ دیکھیں گے کہ 28 فروری کے آتے ہی یہ ان مذاکرات کو دوبارہ ملتوی کر دیں گے۔‘‘

اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب برائے شام اسٹیفن ڈے مستورا نے جینوا مذاکرات میں تین ہفتوں کے وقفے کا اعلان کیا ہے۔ گزشتہ دو سالوں کے دوران شام کی جنگ کے خاتمے کے بارے میں کی جانے، والی یہ پہلی کوشش ہے۔ دریں اثناء اقوام متحدہ کے ایک اہلکار نے جینیوا مذاکرات کے ملتوی ہونے کی وجہ شام میں روسی حملوں میں شدت بتائی ہے۔

ترکی شامی اپوزیشن کی پشت پناہی کرنے والا سب سے اہم ملک ہے اور ایک عرصے سے اپنا یہ مؤقف پیش کر رہا ہے کہ اسد حکومت کے خاتمے کے بغیر شام میں امن نہیں ہو سکتا۔ ایردوآن نے اس بارے میں بھی شکوک و شبہات کا اظہار کیا ہے کہ شامی امن مذاکرات بحال ہوئے بھی تو اس کے کوئی ٹھوس نتائج نکل پائیں گے۔

Genf PK Syrien Gespräche Staffan de Mistura

ڈے مستورا نے جینوا مذاکرات میں تین ہفتوں کے وقفے کا اعلان کیا ہے

ماسکو نے قریب چار ماہ قبل شام میں فضائی حملوں کا سلسلہ شروع کیا تھا۔ شامی تنازعے پر نظر رکھنے والی سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کی ایک رپورٹ میں گزشتہ سنیچر کو کہا گیا تھا کہ ان روسی فضائی حملوں میں اب تک قریب 1,400 شہری ہلاک ہو چُکے ہیں۔

ترکی بارہا خبردار کرتا رہا ہے کہ شام میں روسی حملے یورپ کی طرف بڑھنے والے مہاجرین کے سیلاب کی صورتحال کو مزید خراب کرنے کا باعث بن رہے ہیں۔

روس کا کہنا ہے کہ اُس کے حملوں کا ہدف دہشت گرد ہیں اور ان حملوں میں کوئی توقف نہیں کیا جائے گا۔

DW.COM