1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جیش سربراہ مسعود اظہر کہاں ہیں؟

پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے مطابق کالعدم عسکری تنظیم کے سربراہ مولانا مسعود اظہر زیر حراست نہیں بلکہ فرار ہیں۔

default

بھارتی سیکورٹی فورسز نے کالعدم عسکری تنظیم جیش محمد کے سربراہ مولانا مسعود اظہر کو انیس سو چورانوے میں بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں گرفتار کر لیا تھا لیکن انیس سو نناوے کے اواخر میں یرغمالیوں کے تبادلے میں ا ن کی رہائی ممکن ہوئی

شاہ محمود قریشی نے آج جمعرات کے روز برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ یہ خبر بالکل درست نہیں ہیں کہ مسعود اظہر پاکستان میں زیر حراست ہیں بلکہ اُن کے بقول مزکورہ عسکری رہنما فرار ہیں۔ ’’ یہ صحیح نہیں ہے۔ دوسرے افراد کو حراست میں لے لیا گیا ہے لیکن مسعود اظہر فرار ہیں۔ وہ کہاں ہیں، اس بارے میں ہمیں کوئی علم نہیں ہے۔‘‘

ممبئی حملوں کے بعد بھارتی حکام نے جن چالیس مشتبہ شدت پسندوں کی فہرست پاکستان کو سونپی تھی اُس میں مولانا مسعود اظہر کا نام بھی شامل تھا۔ عسکری تنظیم جیش محمد کے کمانڈر مسعود اظہر بھارت کو کئی حملوں کے سلسلے میں مطلوب ہیں۔

اس سے قبل پاکستان کے خفیہ ادارے کے ایک عہدے دار نے کہا تھا کہ دیگر شدت پسندوں کے ساتھ ساتھ مسعود اظہر کو بھی گرفتار کرلیا گیا ہے۔

Zaki ur Rehman Lakhwi

ممبئی حملوں کے بعد پاکستانی حفاظتی فورسز نےعسکری کمانڈر ذکی الرحمٰن لکھوی کو ان کے دیگر چندساتھیوں سمیت پاکستان کے زیر انتظام کشمیر سے گرفتار کرلیا

مسعود اظہر کے بارے میں پاکستانی وزیر خارجہ کا بیان بھارت کو راس نہیں آیا ہے۔ بھارتی حکام کے مطابق شدت پسندوں کے بارے میں پاکستان کی طرف سے اسی طرح کے بیانات کی وجہ سے ہی دونوں ملکوں کے درمیان اعتماد کی فضاء قائم نہیں ہوسکی ہے۔

گُزشتہ ماہ چھبیس نومبر کو ممبئی میں ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کے بعد بھارتی حکام نے کہا تھا کہ ان حملوں کی منصوبہ بندی پاکستان میں مبینہ طور پر موجود شدت پسندوں نے کی تھی تاہم پاکستان کا اصرار ہے کہ اگر اس سلسلے میں ثبوت فراہم کئے جاتے ہیں تو مناسب کارروائی کی جائے گی۔ پاکستان نے ممبئی حملوں کی تحقیقات کے تعلق سے بھارت کو مشترکہ تفتیشی نظام کی پیش کش بھی کی تھی تاہم بھارت نے اس تجویز کو مسترد کردیا کردیا۔

ممبئی حملوں کے بعد سے بھارت اور پاکستان کے درمیان باہمی تعلقات میں کشیدگی پیدا ہوگئی ہے جس کے باعث دونوں ملکوں کے مایبن جاری امن عمل بھی متاثر ہوگیا ہے۔ اس کے علاوہ اب بھارتی حکام نے قومی کرکٹ ٹیم کا دورہء پاکستان بھی منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔