1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جہادی گروپ ’انصار الشریعہ‘ تحلیل کر دیا گیا

لیبیا میں عسکری کارروائیاں جاری رکھنے والے شدت پسند گروپ انصار الشریعہ کی قیادت نے اسے تحلیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ گروپ بین الاقوامی جہادی تنظیم القاعدہ کے ساتھ وابستگی رکھتا تھا۔

شمالی افریقہ کے خانہ جنگی کے شکار مسلمان ملک لیبیا کے ایک عسکریت پسند گروپ انصار الشریعہ کی مجلسِ شوریٰ نے اپنے گروپ کو تحلیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس شدت پسند گروپ کی جانب سے یہ اعلان ہفتہ 27 مئی کی شام میں کیا گیا۔ یہ گروپ القاعدہ کے ساتھ وابستگی رکھتا ہے۔ اس گروپ کو اقوام متحدہ کی انہی پابندیوں کا سامنا تھا جو القاعدہ پر عائد کی گئی تھیں۔

 بین الاقوامی امور پر نگاہ رکھنے والی تنظیم کاؤنٹر ٹیررازم پراجیکٹ نے بھی اس گروپ کے بیان کی تصدیق کی ہے کہ اِسے  حالیہ برسوں میں  پے در پے مالی و جانی نقصان کا سامنا کرنا پڑا تھا اور یہ تقریباً مفلوج ہو کر رہ گیا تھا۔ مختلف عسکری کارروائیوں اور ڈرون حملوں نے اِس کی لیڈرشپ کا بھی صفایا کر دیا ہے اور ان نقصانات سے کارکن شدید ذہنی پریشانی کا شکار ہو چکے ہیں۔

Islamische Ansar al-Sharia Brigaden Libyen (picture alliance/AP Photo)

لیبیا کے عسکری گروپ انصار الشریعہ کا ایک مقامی لیڈر

انصار الشریعہ کی جانب سے تحلیل کیے جانے کے اعلان میں لیبیا کے دیگر متحارب گروپوں اور عسکری تنظیموں سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ اپنے اختلافات پسِ پشت ڈالتے ہوئے اپنے اندر اتفاق پیدا کریں اور ایک متحدہ عسکری محاذ قائم کر کے لیبیا کی دشمن قوتوں کا مقابلہ کریں۔

 کاؤنٹر ٹیررازم پراجیکٹ کے مطابق  اس گروپ کے کئی ارکان نے علیحدگی اختیار کرتے ہوئے عراق و شام میں سرگرم ’اسلامک اسٹیٹ‘ کی مقامی شاخ میں شمولیت اختیار کر لی ہے۔ گروپ کا سربراہ محمد زہاوی اکتوبر سن 2015 میں ایک ہوائی حملے میں ہلاک کر دیا گیا تھا۔

یہ گروپ معمر القذافی کے زوال کے بعد معرضِ وجود میں آیا تھا۔ امریکی حکومت کو یقین ہے کہ سن 2012 میں لیبیا کے مشرقی شہر بن غازی میں امریکی سفارت خانے پر حملے میں یہی گروپ ملوث تھا۔ اس حملے میں لیبیا میں متعین امریکی سفیر کرسٹوفر اسٹیونز ہلاک ہو گئے تھے۔ انصارالشریعہ گروپ گزشتہ کچھ عرصے میں متعدد مرتبہ بن غازی میں سابق فوجی افسر خلیفہ حفتر کی ملیشیا کے ساتھ جھڑپیں کر چکا ہے۔