1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جنگ زدہ ’حلب‘ کے لیے جرمنی کی طبّی امداد میں اضافہ

جنگ سے تباہ حال شامی شہر حلب کے تباہ حال طبّی مراکز میں آج کل تقریباً ایک ہزار طبّی ماہرین سرگرمِ عمل ہیں۔ جرمنی نے ان مراکز کے لیے اپنی امداد میں اضافے کا فیصلہ کیا ہے۔

حلب کے طبّی مراکز کے لیے امداد بڑھانے کا اعلان ترقیاتی امور کے وفاقی جرمن وزیر گیرڈ مُلر نے جرمنی کے کثیر الاشاعت روزنامے ’بِلڈ‘ سے باتیں کرتے ہوئے کیا۔ مُلر نے کہا:’’اب تک بین الاقوامی برادری بے بسی کے ساتھ حلب میں ہونے والی قتل و غارت گری اور بمباری کو دیکھتی رہی ہے، اب اس شہر کے لوگوں کے لیے لازمی طور پر ایک بڑا انسانی آپریشن شروع کیا جانا چاہیے۔ اگر ہم نے بہت دیر کر دی تو پھر شامی تنازعے میں ایک نیا انسانی المیہ جنم لے سکتا ہے۔‘‘

جرمنی کی طرف سے اعلان کردہ مالی امداد کی مالیت پندرہ ملین یورو (چَودہ ملین ڈالر) ہے۔ اس کی مدد سے اس امر کو یقینی بنایا جائے گا کہ حلب میں سرگرم ایک ہزار کے قریب ڈاکٹر، نرسیں اور صدماتی کیفیت کا علاج کرنے والے ماہرینِ نفسیات اگلے تیس مہینے تک اپنا کام جاری رکھ سکیں۔ اس کے علاوہ جرمنی حلب کے صدماتی کیفیت کے شکار شہریوں کے علاج کے لیے دو سو ماہرین تیار کرنے کے ایک پروگرام میں بھی تعاون کرے گا۔

حلب میں برسوں سے جاری تنازعے اور حال ہی میں اس شہر کے مشرقی حصے پر شامی حکومتی افواج کے قبضے کے نتیجے میں اس شہر کے طبّی مراکز کی حالت انتہائی ناگفتہ بہ ہو چکی ہے۔ روسی اور شامی فضائیہ کے طیارے باقاعدگی کے ساتھ ہسپتالوں اور کلینکس کو نشانہ بناتے رہے اور ایسی کارروائیوں کے دوران درجنوں ڈاکٹروں اور نرسوں کی ہلاکتیں ہوئیں۔ طبی شعبے سے وابستہ بہت سے شامی ماہرین ملک سے فرار ہو گئے، جس سے اس ملک کی شدید تر ہوتے ہوئے انسانی بحران سے نمٹنے کی صلاحیت مزید کمزور ہوتی چلی گئی ہے۔

Ärzte ohne Grenzen OP-Saal für syrische Flüchtlinge in Aleppo (Anna Surinyach/Ärzte ohne Grenzen)

شام کے جنگ زدہ شہروں میں سینکڑوں ڈاکٹر اور نرسیں انتہائی مشکل حالات میں اپنا کام جاری رکھے ہوئے ہیں

پندرہ ملین یورو کی یہ امداد جرمنی کے ’کَیش فار ورک‘ پروگرام کے تحت دی جا رہی ہے، جو شام اور اُس کے اُن ہمسایہ ممالک کے لیے مختص ہے، جہاں تقریباً چار اعشاریہ آٹھ ملین مہاجرین نے پناہ لے رکھی ہے۔ مزید چھ اعشاریہ پانچ ملین شامی شہری وہ ہیں، جو ملک کے اندر ہی در بدر ہیں۔ جنگ سے پہلے شام کی مجموعی آبادی تئیس ملین کے قریب تھی۔

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ آج کل تیرہ اعشاریہ پانچ ملین شامی شہریوں کو انسانی امداد درکار ہے، جبکہ ان میں سے نوّے فیصد کو طبّی امداد بھی چاہیے۔

ترقیاتی امور کی جرمن وزارت کے اعداد و شمار کے مطابق 2012ء میں شامی تنازعہ شروع ہونے کے بعد سے اب تک جرمنی شامیوں کو انسانی امداد کے طور پر تقریباً ایک اعشاریہ پانچ ارب یورو فراہم کر چکا ہے۔ 2018ء تک یہ امداد بڑھ کر دو اعشاریہ تین ارب یورو تک جا پہنچے گی اور یوں جرمنی اس تنازعے کے متاثرین کو امداد فراہم کرنے والا تیسرا بڑا ملک بن جائے گا۔