1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جنگی جرائم کے الزامات: بیجنگ کی حمایت کے لیے کولمبو کی کوششیں

سری لنکا کے صدر مہندا راجہ پکسے منگل کو چین پہنچے، جہاں وہ تامل ٹائیگرز کے خلاف لڑائی کے دوران جنگی جرائم کے الزامات کی تحقیقات کے لیے مغربی دباؤ پر چینی حمایت حاصل کرنے کے ساتھ اقتصادی تعلقات کو بھی فروغ دینا چاہتے ہیں۔

default

صدر راجہ پکسے چینی شہر شینزن میں منعقدہ کھیلوں کے مقابلے یونیورسیاڈ میں شرکت کریں گے اور بیجنگ میں اپنے چینی ہم منصب ہو جنتاؤ اور وزیر اعظیم وین جیاباؤ سے ملاقاتیں کریں گے۔

چین سری لنکا کو امداد فراہم کرنے والا سب سے بڑا ملک ہے اور اس نے جون میں سری لنکا میں جنگ کے بعد بحالی کے منصوبوں کے لیے 1.5 ارب ڈالر دینے کا وعدہ کیا تھا۔ اس کے علاوہ وہ ایک بجلی گھر کی تعمیر اور راجہ پکسے کے جنوبی ہمبنتوتا حلقے میں بندرگاہ کی تعمیر میں مالی امداد فراہم کر رہا ہے۔

سینٹر فار سوشل ڈیموکریسی کی ایک سیاسی تجزیہ کار کوسل پریرا کا کہنا ہے: ’’حقیقت یہ ہے کہ وہ جنگی جرائم کے معاملے پر مغربی دباؤ سے کافی پریشان ہیں۔‘‘

Srilankische Armee mit Nationalflagge am Strand

اقوام متحدہ نے تامل باغیوں کے خلاف لڑائی کے دوران سری لنکا کی فوج پر عام شہریوں کی ہلاکتوں کا الزام لگایا ہے

سری لنکا میں تامل علیحدگی پسندوں کا خاتمہ ہونے کے بعد امن کا یہ تیسرا سال ہے، تاہم نسلی اور سیاسی مصالحت ہنوز دور ہے اور ملک پر مئی 2009 میں ختم ہونے والے ربع صدی پرانے تنازعے کے دوران شہری ہلاکتوں کی تحقیقات کرنے کے لیے دباؤ بڑھ رہا ہے۔

واشنگٹن نے کولمبو پر واضح کر دیا ہے کہ وہ اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے اجلاس میں سری لنکا کی اندرونی تحقیقاتی رپورٹ کو دیکھنے کا خواہش مند ہے۔ سری لنکا کی حکومت کو یہ رپورٹ پندرہ نومبر کو ملے گی۔

انسانی حقوق کونسل کے مارچ کے اجلاس میں سری لنکا سے بیرونی تحقیقات کا مطالبہ کیا جا سکتا ہے جس سے وہ ابھی تک انکار کرتا آیا ہے۔

اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ میں اس بات کی مصدقہ شہادت ملی تھی کہ سری لنکا کی فورسز اور تامل ٹائیگرز کے ہاتھوں ممکنہ طور پر ہزاروں شہریوں کی ہلاکت سمیت جنگی جرائم کا ارتکاب کیا گیا۔

سری لنکا نے لڑائی میں بعض شہری ہلاکتوں کا اعتراف کیا ہے مگر اس کا کہنا ہے کہ اقوام متحدہ کی رپورٹ میں الزامات سب سے پہلے تامل ٹائیگر کے پراپیگنڈے کے بعد سامنے آئے۔

امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ چین اس مسئلے پر سری لنکا کی حمایت کرے گا۔ چین اور روس دونوں ہی داخلی تنازعات میں غیر ملکی مداخلت کے مخالف ہیں۔

Sri Lanka Präsident Mahinda Rajapaksa

مہندا راجہ پکسے کے دورہ چین کا مقصد اقتصادی تعلقات کو فروغ دینے کے علاوہ جنگی جرائم کے حوالے سے مغربی دباؤ کا مقابلہ کرنے کے لیے بیجنگ کی حمایت حاصل کرنا بھی ہے

اس کے علاوہ چین کے مغربی علاقوں میں نسلی بدامنی پائی جاتی ہے جہاں کے تبتی اور ایغور عوام چین کے کنٹرول کے خلاف مزاحمت کرتے رہے ہیں۔ یہی حساب روس کا ہے جو چیچن علیحدگی پسندوں سے لڑ رہا ہے۔

بھارت راجہ پکسے کی انتظامیہ پر چینی اثر و رسوخ کے بارے میں محتاط ہے کیونکہ وہ سری لنکا کو اپنے حلقہ اثر میں خیال کرتا ہے۔ بھارت کو اس بات پر بھی تشویش ہے کہ ہمبنتوتا بندرگاہ میں بیجنگ کی سرمایہ کاری کا مقصد اسے گھیرنے کی چینی حکمت عملی کا حصہ ہے۔ اس کے علاوہ بھارت کی مرکزی حکومت کو تامل ناڈو کی ریاستی حکومت کا بھی خیال رکھنا ہے جہاں کے چھ کروڑ تامل باشندوں کو سری لنکا کے تاملوں کے ساتھ ہمدردی ہے۔ ان حالات میں سری لنکا کی موجودہ حکومت کے پاس چین سے بہتر جائے امان کوئی نہیں۔

رپورٹ: حماد کیانی

ادارت: ندیم گِل