1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

’’جنگل برطانیہ اپنے ہاں لے جائے‘‘

فرانسیسی وزیرخارجہ ژاں مارک ایغو نے ان مطالبات کو مسترد کر دیا ہے کہ فرانسیسی سرحد کو برطانیہ کے یورپی یونین سے اخراج کے بعد برطانوی سرزمین کی جانب منتقل کر دینا چاہیے۔

فرانس میں مقامی رہنما زور دے رہے ہیں کہ برطانیہ کے ساتھ سرحدی کنٹرول کا دوبارہ نفاذ کر دیا جانا چاہیے۔

ایغو نے ان مطالبات کو مسترد کرتے ہوئے کہا، ’’ہمیں اس بارے میں سنجیدہ رویے کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔‘‘

ایک اور فرانسیسی حکومتی عہدیدار نے بھی جمعے کے روز بریگزٹ ریفرنڈم میں برطانوی عوام کی یورپی یونین سے انخلا کے حق میں رائے سامنے آنے کے بعد پیدا ہو جانے والے خوف کے تناظر میں کہا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان موجود معاہدے ویسے ہی رہیں گے۔

اس سوال کے جواب میں کہ کیا بریگزٹ سے فرانس اور برطانیہ کے درمیان امیگریشن کے معاملے میں کوئی تبدیلی آئے گی، فرانسیسی حکومتی ترجمان نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان باہمی معاہدوں میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔

Frankreich Calais Räumung des Camps

کلے میں ہزاروں مہاجرین مقیم ہیں

اس سے قبل شمالی فرانسیسی شہر کلے کی میئر ناتاشا بوخارٹ نے کہا تھا کہ برطانیہ نے ریفرنڈم کے بعد فرانس برطانیہ سرحد میں اپنی جانب سرحدی کنٹرول نافذ کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر برطانیہ یورپی یونین کا حصہ نہیں رہتا، تو فرانس کو برطانیہ کے لیے سرحدوں کی حفاظت کی ذمہ داری سے بھی دست بردار ہو جانا چاہیے۔

تاہم فرانسیسی وزیرخارجہ ایغو نے کہا کہ ان کے خیال میں اس وقت سمجھداری اور سنجیدگی سے کام لینا چاہیے۔

سن 2003ء میں فرانس اور برطانیہ کے درمیان ٹوکے نامی معاہدے کے تحت برطانیہ کلے سے غیرقانونی تارکین وطن کی برطانیہ آمد روکنے کے لیے سرحد میں سفری دستاویزات کی جانچ کر سکتا ہے۔

دریں اثناء کلے شہر ہی سے تعلق رکھنے والے ایک اور فرانسیسی اہلکارکا خاویر برتراں کا کہنا ہے، ’’انگریز اپنی آزادی واپس چاہتے تھے، تو وہ اپنی سرحد بھی واپس لیں۔‘‘

اس ریفرنڈم سے قبل فرانس کی جانب سے خبردار کیا گیا تھا کہ اگر برطانیہ یورپی یونین سے اخراج کا فیصلہ کرتا ہے، تو کلے میں قائم مہاجر بستی بھی برطانیہ منتقل ہو سکتی ہے۔

واضح رہے کہ شمالی فرانسیسی شہر کلے میں ہزاروں مہاجرین برسوں سے ڈیرے ڈالے ہوئے ہیں اور ان مہاجرین کی کوشش ہوتی ہے کہ کسی طرح دونوں ممالک کے درمیان زیرآب سرنگ کے ذریعے برطانیہ میں داخل ہوا جائے، تاہم سخت حفاظتی انتظام کی وجہ سے کسی مہاجر کو کم ہی ایسا کوئی راستہ میسر آ سکتا ہے۔ ٹرکوں اور دیگر گاڑیوں یا پیدل طریقے سے یہ فاصلہ چھپ کر طے کرنے والے بہت سے افراد اب تک اس کوشش میں لقمہء اجل بھی بن چکے ہیں۔