1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

جنگلات کے تحفظ کے لئے ایکواڈور کی انوکھی پیشکش

18 تا 29 اکتوبر جاپانی شہر ناگویا میں منعقدہ بین الاقوامی ماحولیاتی کانفرنس میں جنگلات کے تحفظ کے لئے مؤثر اقدامات پر بھی غور کیا گیا۔ جنوبی امریکی ملک ایکواڈور نے جنگلات کے تحفظ کے لئے ایک انوکھی پیشکش کی ہے۔

default

ایکواڈور: یاسونی نیشنل یارک

جنگلات زمین کے پھیپھڑے بھی کہلاتے ہیں۔ تحفظ ماحول کی علمبردار تنظیم ڈبلیو ڈبلیو ایف کے مطابق ہر سال تقریباً تیرہ ملین ہیکٹر یعنی یورپی ملک یونان کے برابر رقبے پر پھیلے جنگلات کاٹ دئے جاتے ہیں۔ اُستوائی خطوں کے جنگلات سب سے زیادہ متاثر ہو رہے ہیں، جہاں کاٹے جانے والے جنگلات کی شرح دُنیا بھر کی مجموعی شرح کا 90 فیصد سے بھی زیادہ بنتی ہے۔

جنگلات کاٹنے کی سب سے بڑی وجہ زراعت کے لئے زمین حاصل کرنا ہے۔ ڈبلیو ڈبلیو ایف کے مطابق قدیم جنگلات کا ایک بڑا درخت اتنی کاربن ڈائی آکسائیڈ جذب کر سکتا ہے، جو کہ ایک کار پچاس ہزار کلومیٹر کے سفر کے دوران خارج کرتی ہے۔

Yasuni Projekt Ecuador Pipelines

یاسُونی نیشنل پارک میں معدنی تیل نکالنے کے لئے پائپ لائنوں کا ایک جال بچھا ہوا ہے

جنوبی امریکی ملک ایکواڈور کے اُستوائی جنگلات پر مشتمل علاقہ یاسُونی نیشنل پارک حیاتیاتی اعتبار سے دُنیا بھر میں سب سے زیادہ انواع کا حامل ہے اور وہاں کئی قدیم قبائل بھی آباد ہیں۔ اِس پارک کے نیچے زمین میں تقریباً نو سو ملین بیرل خام تیل موجود ہے۔

ایکواڈور کی معیشت کا دار و مدار خام مادوں کی برآمد پر ہے۔ مثلاً یہ ملک ستّر کے عشرے سے خام تیل برآمد کر رہا ہے، یہ اور بات ہے کہ اِس کی معیشت کو اِس سے زیادہ فائدہ نہیں ہوا۔ یہی وجہ ہے کہ تحفظ ماحول اور انسانی حقوق کی علمبردار تنظیمیں آج کل ٹیکساکو نامی ادارے کے خلاف حیاتیاتی حوالے سے تاریخ کا سب سے بڑا مقدمہ لڑ رہی ہیں۔ اِن تنظیموں کا کہنا ہے کہ اِس ادارے نے جنگلات تباہ کئے ہیں اور اِسے زرِ تلافی کے طور پر ایکواڈور کو 27 ارب ڈالر ادا کرنے چاہئیں۔

Yasuni Projekt Ecuador Verlassenes Dorf

یاسونی نیشنل پارک میں بسنے والے قدیم مقامی قبائل اپنا گھر بار چھوڑ کر کہیں اور جا چکے ہیں کیونکہ تیل کی پائپ لائنوں کی وجہ سے شکار ممکن نہیں رہا

اب کوئیٹو حکومت نے ایک انوکھی پیشکش کی ہے کہ وہ یاسُونی نیشنل پارک کے نیچے موجود معدنی تیل کو ہمیشہ ہمیشہ کے لئے زمین کے اندر ہی رہنے دے گی بشرطیکہ بین الاقوامی برادری یا نجی شعبہ اِس تیل سے متوقع آمدنی کا نصف یعنی تقریباً 350 ملین ڈالر سالانہ ایکواڈور کو ادا کرے۔

دیکھا جائے تو یہ پیشکش اقوام متحدہ کے اُس پروگرام کے عین مطابق ہے،جس کا مقصد ترقی پذیر ملکوں میں جنگلات کی تباہی کو کم کرنا ہے اور جو مختصراً REDD یعنی رَیڈ کہلاتا ہے۔ تاہم ابھی تک بین الاقوامی برادری نے اِس پیشکش پر زیادہ گرم جوشی کا اظہار نہیں کیا ہے۔ البتہ اِسی پروگرام کے تحت ناروے نے انڈونیشیا کے ساتھ ایک ارب ڈالر کا ایک ماحولیاتی معاہدہ طے کیا ہے، جس کے تحت جکارتہ حکومت قدرتی جنگلات کو صاف کرنے کے اجازت ناموں پر دو سال تک کی پابندی عائد کرنے پر راضی ہو گئی ہے۔

رپورٹ : امجدعلی

ادارت : افسراعوان

DW.COM

ویب لنکس