1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جنوبی کوریا: کم دے جُنگ کی آخری رسومات، ہزاروں افراد کی شرکت

سیول میں جنوبی کوریا کے امن کے نوبل انعام یافتہ سابق صدر آنجہانی کم دے جونگ کی آخری رسومات ادا کی گئیں۔ ان رسومات میں تقریبا 20 ہزار افراد نے شرکت کی۔

default

کم دے جنگ کی آخری رسومات میں ایک سرکاری اہلکار سلامی پیش کرتے ہوئے

دریں اثنا سیول کا دورہ کرنے والے پیونگ یانگ کے ایک وفد نے آج اتوار کو صدر لی میونگ بک سے ملاقات کی۔ بلیو ہاؤس کہلانے والے صدارتی محل میں ہونے والی یہ ملاقات 30 منٹ تک جاری رہی۔

جنوبی کوریائی صدر کے ڈیڑھ سالہ دورِ صدارت میں اپنی نوعیت کی یہ پہلی ملاقات تھی۔ بتایا گیا ہے کہ شمالی کوریائی وفد نے جنوبی کوریائی صدر لی کو اپنے علیل حکمران کِم یونگ اِل کا پیغام بھی دیا۔ سیول میں صدارتی ترجمان کا کہنا ہے کہ یہ پیغام دونوں ممالک کے باہمی تعلقات میں پیش رفت سے متعلق تھا۔ تاہم انہوں نے مذکورہ پیغام کی تفصیلات بتانے سے گریز کیا۔

جنوبی کوریا کے صدارتی ترجمان کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے وفد سے ملاقات میں صدر لی میونگ بک نے پیونگ یانگ حکومت کے لئے اپنی حکومت کی پالیسی کی وضاحت کی۔ انہوں نے بتایا کہ یہ ملاقات خوشگوار ماحول میں ہوئی۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ فریقین نیک نیتی سے مذاکرات کے ذریعے باہمی تعلقات میں حائل مسائل کا حل تلاش کریں تو کوئی وجہ نہیں کہ تعلقات بہتر نہ ہوسکیں۔

Nordkorea Südkorea Hyun Kim Delegation am Tisch

شمالی و جنوبی کوریا کے رہنماؤں کے درمیان ملاقات

قبل ازیں ہفتہ کو سیول میں دونوں ممالک کے سینئر وزراء کی ملاقات ہوئی، جو دونوں ریاستوں کے درمیان گزشتہ دو برسوں میں پہلا اعلیٰ سطحی رابطہ تھا۔ شمالی کوریا کا یہ وفد جنوبی کوریا کے سابق صدر کِم دے جُنگ کی تدفین میں شرکت کے لئے سیول کے دورے پر ہے۔ کِم دے جُنگ گزشتہ ہفتے انتقال کر گئے تھے، ان کی آخری رسومات بھی آج اتوار کو ہو رہی ہیں۔

دونوں کوریائی ریاستوں کے تعلقات میں گزشتہ ایک برس کے دوران کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔ تاہم اس تازہ پیش رفت سے دونوں ریاستوں کے رویوں میں نرمی کی توقع ظاہر کی جا رہی ہے۔

Südkorea Präsident Kim Dae Jung

صدر کِم دے جُنگ کے انتقال پر جنوبی کوریا کی ایک غمزدہ شہری

سیول اور پیونگ یانگ کے مابین تعلقات میں سرد مہری اُس وقت آئی تھی، جب جنوبی کوریا کے قدامت پسند رہنما نے شمال کے لئے امداد معطل کر دی تھی اور اس کے لئے اقتصادی امداد کی پالیسی کو پیونگ یانگ کے جوہری منصوبے کی منسوخی سے منسلک کر دیا تھا۔

شمالی کوریا کی جانب سے رواں برس کے آغاز پر جوہری اور میزائل تجربوں کے بعد جنوب کے ساتھ کشیدگی میں مزید اضافہ ہوا تھا۔ تاہم جنوبی کوریا کے سابق صدر کِم دے جُنگ کی وفات کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات میں بہتری کے آثار دکھائی دے رہے ہیں۔ جُنگ کی وفات کے فورا بعد شمالی کوریا نے جنوبی کوریا کے ساتھ ملنے والی اپنی سرحد بھی کھول دی تھی تاکہ دونوں جانب آباد خاندانوں کو ملاقات کا موقع مل سکے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: امجد علی

DW.COM