1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جنوبی کوریا میں امریکی میزائل ڈیفنس نظام کی منتقلی شروع

جزیرہ نما کوریا میں مسلسل بڑھتے تناؤ کے بعد امریکا نے جنوبی کوریا میں متنازعہ میزائل شکن دفاعی نظام کی تنصیب کے لیے وہاں آلات منتقل کرنا شروع کر دیے ہیں۔ چین نے واشنگٹن حکومت کے اس فیصلے پر شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

شمالی کوریا کے ایٹمی پروگرام پر اُس کے ساتھ بڑھتے ہوئے تناؤ کے پیشِ نظر امریکا نے جنوبی کوریا میں ’تھاڈ‘ نامی ایک متنازعہ میزائل شکن دفاعی نظام نصب کرنے کے لیے اس کے آلات جنوبی کوریا منتقل کرنا شروع کر دیے ہیں۔

سیول میں جنوبی کوریائی وزارتِ دفاع نے بتایا کہ میزائل شکن دفاعی نظام کے مختلف حصے لے کر آنے والے پہلے کنٹینر کو صوبے گائیونگ سانگ میں تنصیب کے مقام تک پہنچا دیا گیا ہے۔ سیول حکام کے مطابق یہ نظام اس سال کے آخر تک مکمل طور پر کام کرنے لگے گا۔

جنوبی کوریا کے میڈیا پر نشر کی گئی فوٹیج میں دکھایا گیا ہے کہ بظاہر میزائل شکن آلات سے لدی گاڑیاں ملک کے جنوب میں سیئنگ یُو نامی شہر کے ایک گولف کورس کی جانب روانہ ہیں۔ اس موقع پر کئی مقامی افراد مظاہرہ بھی کرتے دکھائی دیے۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ اس نظام کی تنصیب سے ماحول پر منفی اثرات مرتب ہوں گے۔

امریکا اور جنوبی کوریا کا کہنا ہے کہ اس دفاعی نظام کی تنصیب شمالی کوریا کی جانب سے کسی ممکنہ میزائل حملے کے خلاف دفاع ہے۔ امریکا نے شمالی کوریا کے اہم اتحادی چین سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ جزیرہ نما کوریا میں جاری کشیدگی کم کرنے کے لیے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے۔

تاہم چین اور روس اس دفاعی نظام کو اپنے سکیورٹی مفادات کے لیے خطرہ سمجھتے ہیں۔ چین کے مطابق اس نظام پر نصب طاقتور ریڈار کی رینج صرف جزیرہ نما کوریا تک ہی محدود نہیں ہے جس کی وجہ سے چین کو سکیورٹی مسائل درپیش ہو سکتے ہیں۔ انہی وجوہات کی بنا پر بیجنگ نے جزیرہ نما کوریا میں تھاڈ نظام کی تنصیب پر شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

ویڈیو دیکھیے 00:40

شمالی کوریا میں فوجی پریڈ کے مناظر

Audios and videos on the topic